بلوچستان میں فائرنگ سے ہندو تاجر ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے افغانستان سے متصل سرحدی شہر چمن میں نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے ایک ہندو تاجر ہلاک ہو گئے۔

ہندو تاجر سنتوش کمار کی ہلاکت کا واقعہ شہر کے تاج روڈ پر پیش آیا۔

٭ بلوچستان میں ہندو تاجر کی ہلاکت کے خلاف ہڑتال

چمن پولیس کے ایک اہلکار نے فون پر بتایا کہ ہندو تاجر سنتوش کمار تاج روڈ پر اپنی دکان پر بیٹھے تھے کہ نامعلوم مسلح افراد آئے اور ان پر فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں ہندو تاجر موقع پر ہلاک ہو گئے۔

ہندو تاجر کو ہلاک کرنے کے بعد نامعلوم مسلح حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

انجمن تاجران کے صدر محمد صادق اچکزئی نے فون پر بتایا کہ دو افراد ان کی دکان پر آئے اور انھوں نے فائرنگ کر دی۔

تاجر رہنما کا کہنا تھا کہ اس واقعے کے خلاف شہر میں تجارتی مراکز بطور احتجاج بند ہو گئے جب کہ تاجروں اور سیاسی رہنماؤں کے علاوہ ہندو برادری نے ڈپٹی کمشنر کے دفتر کے باہر احتجاج بھی کیا۔

انجمن تاجران کے صدر نے بتایا کہ سنتوش کمہار کو ہر سال بھتہ دینے کے حوالے سے دھمکیاں بھی ملتی تھیں۔

چمن شہر میں بد امنی کے دیگر واقعات کے علاوہ اغوا برائے تاوان کے واقعات بھی پیش آ رہے ہیں۔

چند روز قبل سول ہسپتال چمن کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ کے بیٹے کو اغوا کیا گیا جب کہ گذشتہ ماہ ریلوے ہسپتال کے ایم ایس کو بھی اغوا کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں