’اس عید پر ایم کیو ایم کھالیں جمع نہیں کرے گی‘

Image caption عام طور پر چھوٹے جانور کی کھال 1500 روپے اور بڑے جانور کی کھال 4000 سے 5000 تک فروخت ہوتی ہے

متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے اعلان کیا ہے کہ عید الاضحی کے تینوں دن ایم کیوایم اور خدمت خلق فاؤنڈیشن قربانی کے جانوروں کی کھالیں جمع نہیں کریں گی۔

٭ کراچی میں کھالیں جمع کرنے کی دوڑ

کراچی میں سینچر کو ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عوام سے اپیل کی کہ وہ قربانی کے جانوروں کی کھالیں پہلے نمبر پر عبدالستار ایدھی ٹرسٹ، دوسرے نمبر پر ڈاکٹر ادیب الحسن رضوی کے ایس آئی ٹی یو، تیسرے نمبر پر انڈس ہسپتال، چوتھے نمبر پر سیلانی ٹرسٹ، پانچویں نمبر پر جعفریہ ڈیزاسٹر سیل اور چھٹے نمبر پر چھیپا ویلفیئر ٹرسٹ کو دیں۔

’ہم مذہبی انتہا پسندوں اور کالعدم تنظیموں کو کسی طور پر اجازت نہیں دیں گے اور عوام بھی انہیں ہرگز کھالیں نہ دی جائیں۔‘

ڈاکٹر فاروق ستار کا کہنا تھا کہ ’فلاحی کاموں کے لیے ان کے پاس لوگوں سے عطیات جمع کرنے اور فلاحی سرگرمیوں کے لیے دو ہی ذرائع ہیں ایک زکوٰۃ ، فطرہ جو رمضان میں جمع کرتے ہیں دوسرا چرم قربانی جو عید الاضحی کے موقع پر جمع کیا جاتا تھا‘ لیکن گذشتہ سال سے مشکلات درپیش آئیں اور اجازت کے باوجود انہیں انہیں زکوٰۃ ، فطرہ اور چرم قربانی جمع نہیں کرنے دیا گیا۔

Image caption دو کروڑ آبادی کے شہر میں لاکھوں لوک قربانی کرتے ہیں، ان جانوروں کی حاصل ہونے والی کھالوں سے ماضی میں ایم کیو ایم سب سے زیادہ مستفید ہوتی رہی ہے

انھوں نے بتایا کہ فلاحی کاموں میں ہلاک ہونے والے کارکنوں کے اہل خانہ، سیاسی اسیر ہیں، مستحقین ، بیوہ خواتین، یتیم، تعلیم، اسکالر شپ، سیلف ایمپلائمنٹ کے لیے قرضہ شامل ہے۔

ایم کیو ایم کے رہنماؤں نے پریس کانفرنس میں یہ بھی دعویٰ کیا کہ وہ ایم کیو ایم اور اس کے فلاحی ادارے کو بھی دوبارہ منظم کررہے ہیں اور اس کے ساتھ کے کے ایف کے رضاکاروں کی چھان بین کر رہے ہیں۔

’ہماری صفوں میں اس بات کی اجازت نہیں کہ ہم جرائم پیشہ لوگوں کو اپنی صف میں کہیں پر موقع دیں کہ وہ ایم کیوایم کا شیلٹر لیں جب ہم چھان بین کے عمل سے گزر رہے ہیں خود کو اسر نو منظم کررہے ہیں۔‘

ڈاکٹر فاروق ستار نے شہر کے مخیر حضرات سے اپیل کی کہ وہ نذیر حسین یونیورسٹی، نذیر حسین اسپتال، کے کے ایف میت بس سروس، سرد خانے، سن اکیڈمی کے اداروں کو گود لے لیں اور ان اداروں کو بند کرنے کے بجائے از خود چلائیں۔

یاد رہے کہ دو کروڑ آبادی کے شہر میں لاکھوں لوک قربانی کرتے ہیں، ان جانوروں کی حاصل ہونے والی کھالوں سے ماضی میں ایم کیو ایم سب سے زیادہ مستفید ہوتی رہی ہے۔ عام طور پر چھوٹے جانور کی کھال 1500 روپے اور بڑے جانور کی کھال 4000 سے 5000 تک فروخت ہوتی ہے۔

ڈاکٹر فاروق ستار نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ عید الاضحی سے قبل نو منتخب میئر وسیم اختر کو پیرول پر رہا کیا جائے اور لاپتہ 125 کارکنان کو بھی عید سے پہلے ان کے گھروں پر پہنچا دیاجائے ۔

اسی بارے میں