کوئٹہ بم دھماکے میں بلوچستان کانسٹیبلری کا اہلکار ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption زخمیوں میں بلوچستان کانسٹیبلری کے پانچ اہلکار بھی شامل ہیں

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں ایک بم حملے میں بلوچستان کانسٹیبلری کا ایک اہلکار ہلاک اور سات افراد زخمی ہو گئے ہیں۔

یہ دھماکہ کوئٹہ شہر میں سریاب روڈ پر گیلو پمپ کے قریب ہوا۔

٭کوئٹہ فرنٹیئر کور پر حملہ

٭ کوئٹہ میں کومبنگ آپریشن کا فیصلہ

بلوچستان حکومت کے ترجمان انوارالحق کاکڑ نے بی بی سی کو بتایا کہ اس علاقے میں نامعلوم افراد نے دھماکہ خیز مواد نصب کیا تھا۔

’دھماکہ خیز مواد اس وقت پھٹ گیا جب بلوچستان کانسٹیبلری کی ایک گاڑی وہاں سے گزررہی تھی۔‘

انھوں نے بتایا کہ دھماکے کے باعث بلوچستان کانسٹیبلری کا ایک اہلکار ہلاک جبکہ سات افراد زخمی ہوئے جن میں بلوچستان کانسٹیبلری کے پانچ اہلکار بھی شامل ہیں۔

زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد کے لیے سول ہسپتال کوئٹہ منتقل کیا گیا جہاں ایک اہلکار کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔

سریاب کوئٹہ شہر کے جنوب میں واقع ہے۔ اس علاقے میں شہر کی بڑی آبادی ہونے کے ساتھ ساتھ کوئٹہ شہر کو بلوچستان کے دوسرے علاقوں سے ملانے کے علاوہ شہر کو کراچی، ایران سے متصل سرحدی علاقے تفتان اور سندھ کے علاقے جیکب آباد سے ملانے والی شاہراہیں بھی اس علاقے سے گزرتی ہیں۔

بلوچستان میں حالات کی خرابی کے بعد سے اس علاقے میں پہلے بھی بم دھماکوں اور بد امنی کے دیگر واقعات رونما ہوتے رہے ہیں۔

رواں سال اب تک کوئٹہ میں پولیس اہلکاروں پر حملوں میں پولیس کے 34 سے زائد اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں