پاکستان کے شمالی علاقوں اور موٹرویز پر ’جنگی مشقیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شمالی علاقوں کے فضائی اڈوں پر فوج مشقوں کی وجہ سے فضائی حدود کو بند کیا گیا ہے: عسکری ذرائع

پاکستان میں حکام کا کہنا ہے کہ جنگی مشقوں کے لیے بند کی گئی شمالی علاقات جات کی فضائی حدود کو تاحال دوبارہ کھولنے کے بارے میں فیصلہ نہیں کیا گیا جبکہ ملک کی موٹر ویز کو بھی ان مشقوں کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔

بدھ کو سرکاری حکام نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بی بی سی کو بتایا کہ شمالی علاقے کی فضائی حدود کھولنے کے بارے میں کوئی اطلاعات موصول نہیں ہوئی ہیں۔

٭ چکوٹھی سیکٹر: ’لوگ پریشان، فوج چوکنا ‘

یاد رہے کہ پاکستان کی سول ایوی ایشن اتھارٹی نے شمالی علاقات جات کی فضائی حدود بدھ 21 ستمبر کے لیے بند رکھنے کی ہدایت دی تھی۔ جس کے بعد پاکستان کی قومی فضائی ایئر لائن پی آئی اے نے بدھ کو گلگت، سکردو اور چترال کے لیے پروازیں منسوخ کرنے کا اعلان کیا تھا۔

گو کہ حکام نے سرکاری طور پر فضائی حدود بند کرنے کی وجوہات بیان نہیں کی ہیں لیکن عسکری ذرائع نے بی بی سی کو بتایا کہ شمالی علاقوں کے فضائی اڈوں پر فوج کے جنگی طیاروں کی لینڈنگ اور ٹیک آف کی مشقوں کی وجہ سے فضائی حدود کو بند کیا گیا ہے۔

دوسری جانب اسلام سے پشاور جانے والی موٹروے بھی منگل رات دو بجے سے بدھ دو بجے دن تک بند رہنے کے بعد دوبارہ کھول دی گئی ہے جبکہ اسلام آباد لاہور موٹر وے کا ایک حصہ جمعرات کو ٹریفک کے لیے بند رہے گا۔

موٹر وے پولیس کے اعلامیے کے مطابق جمعرات کو صبح پانچ بجے سے شام پانچ بجے شیخوپورہ سے کالا شاہ کاکو تک موٹر وے ہر قسم کی ٹریفک کے لیے بند رہے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption انڈیا کے زیر انتظام کشمیر کے علاقے اوڑی میں فوج پر ہونے والے حملے کے بعد انڈین حکومت نے سخت بیانات دیے ہیں

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ تکنیکی و تعمیراتی وجوہات کی بنا پر موٹروے کو بند کیا گیا ہے۔

حکام کے مطابق کسی بھی طرح کے نامناسب حالات میں جنگی طیاروں کی موٹروے پر لینڈنگ کی مشقوں کی وجہ سے موٹر وے کو بند کیا گیا۔

انھوں نے بتایا کہ یہ مشقیں پہلے سے طے شدہ تھیں اور یہ معمول کی جنگی مشقوں کا حصہ ہیں۔

ماضی میں بھی موٹر ویز کو جنگی مشقوں کے لیے استعمال کیا جاتا رہا ہے لیکن انڈیا کے زیر انتظام کشمیر کے علاقے اوڑی میں فوج پر ہونے والے حملے کے بعد انڈین حکومت کے سخت بیانات اور پاکستانی فوج کے کسی بھی صورتحال کا بھرپور جواب دینے کے تناظر میں حالیہ جنگی مشقوں کو مقامی ذرائع ابلاغ میں خاصی اہمیت دی جا رہی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں