چارسدہ: پولیس موبائل پر بم حملہ، اہلکاروں سمیت 16 افراد زخمی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دھماکے میں کم سے کم 16 افراد زخمی ہوئے جن میں نو پولیس اہلکار بھی شامل ہیں

پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کے ضلع چارسدہ میں پولیس موبائل پر ہونے والے ایک ریموٹ کنٹرول بم حملے میں پولیس اہلکارروں سمیت کم سےکم 16 افراد زخمی ہوگئے ہیں۔زخمیوں میں سات عام شہری بھی شامل ہیں۔

پولیس کے مطابق یہ دھماکہ پیر کی صبح مقامی وقت کے مطابق ساڑھے سات بجے چارسدہ کے علاقے ماسم کورونہ میں تھانہ سرو کی حدود میں ہوا۔

تھانہ سرو کے ایک اہلکار فضل وہاب نے بی بی سی کو بتایا کہ پولیس کی موبائل وین پولیو ٹیموں کی نگرانی کے لیے جا رہی تھی کہ اس دوران سڑک کنارے نصب ریموٹ کنٹرول بم دھماکے کا نشانہ بنی۔

انھوں نے بتایا کہ دھماکے میں کم سے کم 16 افراد زخمی ہوئے جن میں نو پولیس اہلکار بھی شامل ہیں۔

اس حملے میں تھانہ سرو کے ایس ایچ او بھی زخمی ہوئے ہیں تاہم تمام پولیس اہلکاروں کی حالت خطرے سے باہر بتائی جاتی ہے۔

پولیس اہلکار کا مزید کہنا تھا کہ جس وقت دھماکہ ہوا اسی وقت وہاں سڑک پر عام شہریوں سے بھری ایک سوزوکی پک اپ بھی گزر رہی تھی جس میں سوار سات افراد بھی زخمی ہوئے۔

ان کا کہنا تھا کہ زخمیوں میں بعض شہریوں کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے جنھیں طبی امداد کے لیے پشاور منتقل کر دیا گیا ہے۔

ادھر کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان نے پولیس وین پر ہونے والے حملے کی ذمہ داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

خیال رہے کہ پیر سے صوبہ بھر میں تین روزہ پولیو مہم کا آغاز کیا گیا ہے۔ اس مہم میں 56 لاکھ سے زائد بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے جائیں گے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں