’انڈیا کی مداخلت کے ثبوت اقوام متحدہ میں پیش کریں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سرتاج عزیز نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ اس مسئلے کے حل کے لیے بھارتی قیادت پر دباؤ ڈالے

پاکستان کے خارجہ امور کے بارے میں وزیر اعظم کے مشیر سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ انڈیا کی طرف سے پاکستانی معاملات میں مداخلت کے ثبوت اقوام متحدہ میں پیش کیے جائیں گے۔ اُنھوں نے کہا کہ ان ثبوتوں میں کلبھوشن یادو کی گرفتاری کا معاملہ بھی شامل ہے۔

پیر کے روز سینیٹ کے اجلاس میں تقریر کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں بھارتی فوج کے مظالم کی تصاویر اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون کو پیش کی گئیں، جس پر اُنھوں نے سخت افسوس کا اظہار کیا۔

٭ خون اور پانی ساتھ ساتھ نہیں بہہ سکتے: مودی

٭کشمیر انڈیا کا اٹوٹ انگ ہے: سشما سوارج

اُنھوں نے کہا کہ اسلامی ممالک کی تنظیم کے سربراہ کو بھی انڈیا کے زیر انتظام کشمیر کی صورت حال کے بارے میں خطوط لکھے ہیں، جس پر مثبت ردعمل سامنے آیا ہے۔

سرتاج عزیز کا کہنا تھا کہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں لوگوں کا ردعمل خود بھارتی پالیسیوں کا نتیجہ ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ انڈیا اپنے زیر انتظام کشمیر میں مزید فوج بھیج رہا ہے جو کہ تشویش کا باعث ہے۔

مشیر خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارتی قیادت کی طرف سے پاکستان کو دنیا میں تنہا کرنے کی کوششیں ناکام ہوئی ہیں جبکہ کشمیر کے معاملے پر جنگ کا ماحول پیدا کرنے کی جو کوششیں کی جارہی ہیں وہ دراصل مسئلہ کشمیر سے لوگوں کی توجہ ہٹانے کی کوشش ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ پاکستانی حکومت نے مسئلہ کشمیر کو دنیا بھر میں بڑے احسن طریقے سے اجاگر کیا ہے۔

سرتاج عزیز نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ اس مسئلے کے حل کے لیے بھارتی قیادت پر دباؤ ڈالے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں