BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Tuesday, 26 July, 2005, 12:37 GMT 17:37 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
درگاہ سے چوری کی سزا رسوائی
 

 
 
چوری کا ملزم
قانون کے تحت پولیس کو سزا دینے کا اختیار حاصل نہیں
پاکستان میں ایک درگاہ کے چندے کی پیٹی میں سے مبینہ طور پر چوری کرنے کے الزام میں ایک نوجوان کی موچھیں، بھنویں اور سر کے بال مونڈ کر، منہ کالا کرکے شہر میں گشت کروایا گیاہے۔

یہ واقعہ صوبے سندھ کے شہر نوشہروفیروز کے قصبے دلیپوٹا میں پیش آیا ہے۔ جہاں درگاہ قاضی عبدالرحمان کے متولی اقبال سہتو نے ایک پچیس سالہ مزدور اسلام الدین شیخ پر الزام عائد کیا کہ اس نے درگاہ پر موجود چندے کی پیٹی سے پیسے چوری کیے ہیں۔ ان کی اطلاع پر پولیس نے پہنچ کر نوجوان اسلام الدین شیخ کو گرفتار کرلیا۔

پولیس کے اے ایس آئی نذیر ڈاہری نے حجام منگوا کر نوجوان کی موچھیں، بھنویں اور سر کے بال منڈوا دیے۔ نوجوان کے منہ پر کالک مل کر گلے میں جوتوں کے ہار ڈالےگئے۔ جبکہ اس کو گدھے پر بٹھا کر شہر میں گشت کروایا گیا۔

پولیس اہلکار نوجوان کو شہر کے ہر گھر پر لے گئے اور لوگوں کو بتایا کہ اس نے درگاہ سے چوری کی ہے۔ جس کی اس کو سزا دی گئی ہے۔

سنیچرکو پیش آنے والے اس واقع کے بعد نوجوان کے والد محمد عالم شیخ نے سیشن جج نوشہرو فیروز کو درخواست دی جس کے بعد پولیس نے نوجوان کو آزاد کردیا ہے۔

نوجوان اسلام الدین نے بی بی سی آن لائن کو ٹیلیفوں پر بتایا کہ اس پر اقبال سہتو کا ڈہائی سو روپے کا قرضہ تھا جس کی وہ تقاضہ کر رہا تھا۔ اسلام الدین شیخ تھال میں رکھ کر چھولے بیچتا ہے اور آج کل سکول میں چھٹیوں کی بنا پر دہندہ نہیں ہے۔

اسلام الدین شیخ نے اقبال سہتو سے سکولوں کے کھل جانے کے بعد قرضہ واپس کرنے کا وعدہ کیا۔ جس پر ان کے درمیان تلخ کلامی ہوئی اور اقبال سہتو نے درگاہ کے مرید اے ایس آئی نذیر کو بُلا کر اس پر جھوٹا الزام عائد کیا۔

اسلام الدین نے بتایا کہ پولیس نے اسے برہنہ کرکے تشدد کا نشانہ بنایا، جس کی وجہ سے اسے چلنے میں دشواری پیش آرہی ہے۔

نوشہروفیروز کے پولیس سربراہ کے کے میمن نے بی بی سی کو بتایا کہ ابتدائی تحقیقات سے اے ایس آئی کا قصور ثابت ہورہا جس وجہ سے اس کو معطل کیاگیا ہے ۔ جبکہ ڈی ایس پی کی سربراہی میں کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جس کی روشنی میں مزید کارروائی کی جائے گی۔

درگاہ قاضی عبدالرحمان کے متولی انور سہتو کا کہنا ہے کہ اسلام الدین شیخ مجرم ہے اس نے چندے کی پیٹی سے پیسے چوری کیے ہیں۔ جس کی اس کو سزا ملنا چاہیے۔

سٹیزن ایکشن کمیٹی نوشہروفیروز کے رابطہ افسر عبدالشکور عباسی کا کہنا کہ ایک انسان کی تذلیل کرنے پر معطل کرنے کی سزا کافی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ نہ ملکی آئین نہ قانون، پولیس کو صرف الزام کی بنیاد پر کسی کو یوں سزا دینے کی اجازت دیتا ہے۔

 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد