BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Monday, 13 March, 2006, 12:04 GMT 17:04 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
’پناہ گزین میران شاہ چھوڑ دیں‘
 
میران شاہ
سکیورٹی فورسز کی مشتبہ حملوں آوروں کے کارروائی جانی اور مالی نقصان ہوا ۔
پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں حکام نے افغان پناہ گزینوں سے کہا ہے کہ وہ فوری طور پر ملک سے نکل جائیں۔

پاکستان اور افغانستان کی سرحد سے ملحقہ اس علاقے میں سکیورٹی فورسز اور شدت پسندوں کے خلاف کئی مرتبہ شدید لڑائی ہوئی ہے جس میں سو سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

میران شاہ میں واقع مقامی ریڈیو سٹیشن کی نشریات میں افغان پناہ گزینوں کو کہا جا رہا ہے وہ اپنے کاروبار بند کر دیں اور علاقہ چھوڑ دیں۔ اس سے قبل بھی افغان پناہ گزینوں کو اس قسم کے نوٹس مل چکے ہیں لیکن ابھی تک ان پر کوئی عمل در آمد ہوتا نظر نہیں آیا۔

دریں اثناء میران شاہ سہ تیس کلو میٹر دور بویا گاؤں میں شدت پسندوں اور سکیورٹی فورسز کے درمیان جھڑپ ہوئی ہے لیکن کسی قسم کی جانی نقصان کی اطلاع موصول نہیں ہوئی۔

اس سے اطلاعات کے مطابق قبل میران شاہ میں پرتشدد کاروائیوں میں مبینہ طور پر ملوث مولانا صادق نور نے اعلان کیا تھا کہ وہ میران شاہ کی پچیس کلومیڑ کی حددو میں سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں پر فائرنگ نہیں کریں گے۔

حکومت کی جانب سے تحریری دھمکی کے بعد مقامی لوگوں کا ایک وفد اتوار کے روز مولانا صادق نور کے گھر گیا اور ان سے درخواست کی کہ علاقے کی حفاظت کے لیے سکیورٹی فورسز پر حملے نہ کریں۔


اطلاعات کے مطابق وفد کی ملاقات مولانا صادق نور سے ہوئی جنہوں نے وفد کو یقین دھانی کرائی کہ آئندہ میران شاہ کی پچیس کلو میٹر کی حدود میں سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں پر حملہ نہیں کیا جائے گا۔ مولانا صادق نور کی جانب سے سکیورٹی فورسز پر حملہ نہ کرنے کا اعلان لوڈ سپیکر پر بھی کیا گیا۔

پاکستان فوج کے ترجمان میجر جنرل شوکت سلطان نے میران شاہ کے پچیس کلو میڑ کے علاقے میں سکیورٹی فورسز پرحملہ نہ کرنےکے اعلان کا خیر مقدم کیا۔

بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے میجر جنرل شوکت سلطان نے کہا کہ حکومت صلح صفائی کی باتوں کا خیر مقدم کرتی ہے۔

میجر جنرل شوکت سلطان نے کہا کہ حکومت چاہتی ہے کہ ’شرپسند‘ اپنی کارروائیاں بند کر دیں اور اپنے آپ کو حکومت کے حوالے کردیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے پہلے ہی کئی لوگوں کی عام معافی کا بھی اعلان کر رکھا ہے جس میں کئی غیر ملکی بھی شامل ہیں۔

پاکستان فوج نے شمالی وزیرستان میں قبائلیوں کو وارننگ دی تھی کہ جس گاؤں سے بھی اس پر راکٹ فائر کیا جائے گا اس پورے گاؤں کے خلاف کارروائی ہو گی۔

میران شاہ کے علاقے میں آٹھ روز بعد حالات بہتری کی طرف بڑھ رہے ہیں اور شہر میں کرفیو کی پابندیاں کر دی گئی ہیں۔

اتوار کو حکام نے مقامی آبادی کو یہ تنبیہی نوٹس جاری کیا تھا کہ اگر وہ شدت پسندوں کی مدد کریں گے یا انہیں حکام کے حوالے نہیں کریں گے تو انہیں گرفتاری اور جرمانے کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے اور ان کا گھر بھی مسمار کیا جا سکتا ہے۔

مقامی آبادی کے مطابق انہیں شدت پسندوں اور حکام دونوں جانب سے دھمکیاں مل رہی ہیں۔

اتوار کو ہی میر علی کے قصبے سے ایک گولیوں سے چھلنی لاش بھی ملی ہے جس پر یہ نوٹ چسپاں تھا کہ’ یہ اسلام کا دشمن اور حکومت کا حامی تھا اور جو بھی اسلام سے دشمنی اور حکومت کی حمایت کرے گا اس کا یہی حشر ہوگا‘۔

شمالی وزیرستان سے ملحقہ ضلع بنوں میں چھاؤنی پر راکٹ فائر کیے جانے کے واقعے کے علاوہ کوئی سنیچر اور اتوار کے روز کوئی بڑی کارروائی کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔

بنوں سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق حکام کا کہنا ہے کہ بنوں چھاؤنی پر بھی ہفتے کو تین راکٹ فائر کیے گئے لیکن ان سے بھی کسی قسم کا جانی نقصان نہیں ہوا۔

پاکستانی افواج سنہ 2004 سے وزیرستان میں موجود القاعدہ سے تعلق رکھنے والے مبینہ غیر ملکی شدت پسندوں کے خلاف آپریشن جاری رکھے ہوئی ہیں۔ تاہم حالیہ جھڑپوں کا سلسلہ امریکی صدر جارج بش کے دورۂ پاکستان سے قبل شروع ہوا تھا اور اب تک حکام کے مطابق ان جھڑپوں میں دو سو کے قریب مبینہ شدت پسند اور پانچ فوجی مارے جا چکے ہیں۔

 
 
میران شاہ میں فوجیہلاکتوں کی حقیقت
میران شاہ: لاشیں کہاں گئیں، وہ کون لوگ تھے؟
 
 
  میران شاہکب امن ہوگا؟
قبائلی خطہ ہر حکمران کے لئے دردے سر
 
 
مزاحمت کا بدلتا رخ
طالبان مزاحمت کی زمین تبدیل ہو رہی ہے
 
 
وزیرستان فوج قبائلی دلدل میں !
وزیرستان طالبان کے جال میں
 
 
اسی بارے میں
بنوں چھاؤنی پر راکٹ حملہ
12 March, 2006 | پاکستان
میران شاہ میں تجارت متاثر
09 March, 2006 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد