BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Friday, 24 March, 2006, 19:26 GMT 00:26 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
مزید متاثرین اپنے علاقوں کو روانہ
 

 
 
مظفرآباد
اس خیمہ بستی کا انتظام اور انصرام ایک جاپانی غیر سرکاری تنظم ’جیڈ‘ چلاتی ہے
پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں زلزے سے متاثرہ خیمہ بستیوں میں آباد پہاڑی علاقوں کے کچھ اور خاندان جمعہ کو اپنے آبائی علاقوں میں واپس چلے گئے۔ واپسی کا آغاز مارچ کے دوسرے ہفتے میں ہوا تھا جب تیس خاندان اپنے گھروں کو واپس چلے گئے تھے۔

اگرچہ حکومت یہ کہتی آرہی تھی کہ واپسی کا عمل اکتیس مارچ سے شروع ہوگا لیکن اس عمل کا مارچ کے اوائل میں آغاز موسم میں قدرے بہتری کی وجہ سے ممکن ہوا ہے اور حکومت بھی اس کی حوصلہ افزائی کرتی ہے جس کا بظاہر مقصد دیگر افراد کو بھی واپسی کے لئے تیار کرنا ہے۔

آٹھ اکوبر کے زلزے کے باعث کشمیر کے متاثرہ پہاڑی علاقوں کے ہزاروں لوگوں نے پاکستان اور اس کے زیر انتظام کشمیر کے شہروں، قصبوں اور میدانی علاقوں کا رخ کیا جہاں ان کو خیمہ بستیوں میں آباد کیا گیا تھا۔ موسم میں بہتری اور کھیتی باڑی کا موسم شروع ہوتے ہی لوگوں نے آہستہ آہستہ اپنے علاقوں کی طرف واپس جانا شروع کیا ۔

متاثرین کی واپسی
واپس لوٹنے والے متاثرین کو امدادی ادارے کی جانب سے پھول پیش کیئے جارہے ہیں

اس ماہ کے اوائل میں وادی نیلم سے تعلق رکھنے والے تیس خاندان اپنے علاقوں کو واپس چلے گئے تھے اور گزشتہ دو روز کے دوران کوئی بیس خاندان واپس چلے گئے ہیں جن میں جمعہ کو جانے والے سو سے زائد افراد پر مشتمل سترہ خاندان شامل ہیں ۔ ان افراد کا تعلق وادی جہلم کے دو دیہاتوں سے ہے۔ ان لوگوں کا کہنا تھا کہ وہ کسی دباؤ کے بغیر اپنی مرضی سے واپس جارہے ہیں ۔

واپس جانے والے لوگ خیموں سے لے کر اپنے استعمال میں رہنے والی تمام چیزیں ساتھ لے جاسکتے ہیں۔ آج اپنےگھروں کو واپس جانے والوں کو حکومت کی طرف سے اعلان کے مطابق ایک ماہ کی خوراک کے ساتھ ساتھ بستر اور کمبل بھی فراہم کئے گئے ہیں اور وہ اپنے استعمال میں رہنے والی تمام چیزیں جن میں خیمے شامل ہیں ساتھ لے گئے۔

واپس جانے والوں میں چار بیوائیں بھی تھی جن کو ایک ایک سلائی مشین بھی دی گئی تا کہ وہ اپنی روزی کا بندوبست کرسکیں ۔ یہ خیمہ بستی مظفرآباد سے کوئی دس کلومیڑ کے فاصلے پر ٹنڈالی میں واقع ہے اور اس کا انتظام اور انصرام ایک جاپان کی غیر سرکاری تنظم ’جیڈ‘ چلاتی ہے۔

متاثرین
واپس لوٹنے والے متاثرین کو خیموں سمیت اپنے استعمال کی تمام اشیا ساتھ لے جانے کی جازت ہے

اس تنظم کے ایک مقامی عہدیدارکا کہنا ہے کہ وہ پہلے علاقوں کا سروے کرتے ہیں اور اگر وہ سمجھتے ہیں کہ علاقے محفوظ ہیں اور لوگ وہاں رہ سکیں گے تو پھر لوگوں کو گھروں کو جانے اجازت دی جاتی ہے ۔

اس خیمہ بستی میں اب بھی کوئی ڈھائی سو خاندان آباد ہیں۔ اس بستی کو چلانے والی تنظیم کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ ڈیڑھ سو کے قریب ایسے خاندان ہیں جو اس لئے واپس جانے کے لئے تیار نہیں کیوں کہ ان کے علاقوں کو جانے والے راستے بند ہیں یا زلزے میں ان کی زمینیں تباہ ہوگئی ہیں یا ان کے علاقوں میں پانی کا مسئلہ درپیش ہے۔

حکومت کا کہنا ہے خیمہ بستیوں میں دس سے بارہ ہزار افراد ایسے ہوں گے جن کی زمینیں زلزے میں ضائع ہو گئی ہیں یا ان کو اپنے علاقوں میں پانی کا مسئلہ ہے ۔

حکومت کہتی ہے کہ یہ لوگ اس وقت تک خیمہ بستیوں میں ہی رہیں گے جب تک ان کو کوئی متبادل زمینیں فراہم نہیں کی جاتیں۔ لیکن ان بستیوں میں رہنے والے بہت سارے لوگوں کو یہ شکایت ہے کہ ان کی آباد کاری کے بارے میں حکومت کی کوئی واضح پالیسی نہیں ہے اور اس لیئے ان کے پاس اپنے علاقوں کو واپس لوٹنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے ۔

پاکستان اور اس کے زیر انتظام کشمیر کے شہروں میں خیمہ بستیوں میں تقریباً سوا لاکھ زلزلہ متاثرین آباد ہیں جن میں ایک بہت بڑی تعداد پہاڑی علاقوں میں بسنے والوں کی ہے۔

پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ اپریل تک خیمہ بستیوں میں آباد پہاڑی علاقوں کے نوے فیصد لوگوں کی واپسی اور ان کی دوبارہ آباد کاری کا عمل مکمل کرلے گی۔

 
 
تعمیر نونیشنل ایکشن پلان
تین سال میں انفراسٹرکچر کی بحالی کا منصوبہ
 
 
وادی نیلمایزابیلا کی ڈائری
وادی نیلم سے واپسی، جذباتی اور تکلیف دہ
 
 
گھر بنائیں تو کہاں
پنج کوٹ کے لوگوں کی پریشانیاں
 
 
صومالیہ سے مظفرآباد
موگادیشو اور مظفر آباد میں مشترک کیا ہے
 
 
زلزلہ زدگانچادر اور چار دیواری
مظفرآباد کی خمیہ بستیوں میں بے پردگی
 
 
اسی بارے میں
پنج کوٹ کے رہائشی کہاں جائیں
24 February, 2006 | پاکستان
موگادیشو سے مظفر آباد تک
24 February, 2006 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد