http://www.bbc.com/urdu/

Tuesday, 21 March, 2006, 09:58 GMT 14:58 PST

ریاض سہیل
بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی

کراچی، تین پولیس اہلکار گرفتار

کراچی میں پولیس کی فائرنگ میں ہلاک ہونے والی ایرانی نژاد بہن اور بھائی کے قتل کے الزام میں تین پولیس اہلکاروں کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

پیر کی شب ساڑھے دس بجے کے قریب بفر زون کے علاقے میں ایمرجنسی ڈیوٹی پر مامور پولیس مددگار کی موبائیل نے ایک کار پر فائرنگ کی تھی، جس کے نتیجے میں یہ دو افراد ہلاک جبکہ ایک بچی سمیت دو افراد زخمی ہوگئے تھے۔

واقعے کے بعد لوگوں نے ایک بس کو نذر آتش کردیا تھا۔

ہلاک ہونے والوں کی شناخت فیروز اور صبیحہ کے نام سے کی گئی ہے۔

ڈی آئی جی آپریشن مشتاق شاہ کا کہنا ہے کہ مددگار پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ کار میں مشکوک لوگ سوار ہیں جس پر پولیس نے تعاقب کیا اور گاڑی نہ روکنے پر فائرنگ کی۔

ٹاؤن پولیس افسر اقبال دارا نے بی بی سی کو بتایا کہ کچھ لوگوں نے شکایت کی تھی کہ ایک کار میں ایرانی لوگ آتے ہیں جو چھینا جھپٹی میں ملوث ہیں اور اس اطلاع پر پولیس نے کار کا پیچھا کیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ مقتولین ماڈل کالونی کے رہائشی تھے اور سوال یہ ہے کہ وہ اس علاقے میں کیا کر رہے تھے۔ ٹی پی او کے مطابق فائرنگ میں زخمی ہونے والا شخص اور گاڑی چلانے والا ڈرائیور فرار ہوگئے ہیں۔

پولیس نے اس کار کو بھی مشکوک قرار دیا ہے جس میں مقتولین سوار تھے۔ ٹی پی او کا کہنا ہے کہ گاڑی کی نمبر پلیٹ اور مالک کی تصدیق کی جارہی ہے۔
فائرنگ میں زخمی ہونے والی بارہ سالہ افسانہ عباسی ہسپتال میں زیر علاج ہے جس کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔

پولیس نے مقتول فیروز اور صبیحہ کی لاشیں ایدھی سرد خانے میں رکھوائی ہیں۔ ایدھی فاؤنڈیشن کے مطابق ابھی تک لاش وصول کرنے کے لئے ورثا نہیں آئے نہ ہی کوئی رابطہ کیا ہے۔

تیموریہ پولیس کا کہنا ہے کہ مقتولین کے ورثا نے ابھی تک رابطہ نہیں کیا نہ ہی ایف آئی آر درج کروانے کوئی آیا ہے۔