BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Thursday, 21 September, 2006, 10:13 GMT 15:13 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
کراچی سے بلوچ صحافی لاپتہ
 

 
 
صحافیوں کا سندھ اسمبلی  کے باہر دھرنا
صحافیوں کا سندھ اسمبلی کے باہر دھرنا
کراچی سے ایک بلوچ صحافی کے لاپتہ ہو نے کے بعد صحافیوں نے یہ شبہ ظاہر کیا ہے کہ سعید سربازی پاکستان کے خفیہ اداروں کی تحویل میں ہیں۔

سعید سربازی بدھ کی دوپہر کو اپنے گھر سے پریس کلب آنے کے لیئے نکلے تھے کہ لاپتہ ہوگئے۔

سعید سربازی ایک انگریزی اخبار کے نیوز ایڈیٹر اور کراچی پریس کلب کے جوائنٹ سیکریٹری ہیں۔

سعید سربازی کی گمشدگی کے خلاف صحافیوں نے جمعرات کے روز سندھ اسمبلی کا بائیکاٹ اور دھرنا دیا۔

 دھرنے سے پاکستان یونین آف جرنلسٹس کے سیکریٹری جنرل مظہر عباس نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں تشویش ہے کہ کہیں سعید سربازی کو حیات اللہ نہ بنایا جائے
 

دھرنے سے پاکستان یونین آف جرنلسٹس کے سیکریٹری جنرل مظہر عباس نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’ہمیں تشویش ہے کہ کہیں سعید سربازی کو حیات اللہ نہ بنایا جائے۔‘

انہوں نے بتایا کہ حیات اللہ کی گمشدگی کے بعد بھی صرف شور شرابہ ہوتا رہا۔ ’میں نے وزیر اعلیُ ہاؤس میں اکرم درانی کو کہا تھا کہ ان کا مجرمانہ کردار رہا ہے،اگر وہ چاہتے تو حیات اللہ بازیاب ہوسکتا تھا۔‘

مظہر عباس نے بتایا کہ سعید نے ایک ہفتہ قبل خدشہ ظاہر کیا تھا کہ کوئی ان کا پیچھا کر رہا ہے، اس لیئے ہوسکتا ہے کے کسی دن یہ خبر ملے کہ ’میں نہیں مل رہا مہربانی کر کے میری بیوی بچوں کا خیال رکھیے گا۔‘

پی ایف یو جے کے رہنما نے کہا کہ ’جس طرح سے ہمارے دوستوں کی لاشیں مل رہی ہیں ہمیں خدشہ ہے کہ کہیں کسی اور دوست کی لاش نہ ملے۔‘

انہوں نے اعلان کیا کہ اس وقت تک اسمبلی کا بائیکاٹ، گورنر ہاؤس اور وزیر اعلیٰ ہاؤس کے سامنے احتجاج جاری رکھیں گے جب تک سعید سربازی کے بارے میں بتایا جاتا۔ انہوں نے کہا کہ ’اگر سعید نے کوئی جرم کیا ہے تو اس پر مقدمات چلایا جائے۔‘

دوسری جانب سندھ کے صوبائی وزیر داخلہ رؤف صدیقی اور مشیر اطلاعات صلاح الدین حیدر نے صحافیوں کے پاس پہنچ کر ان سے بات کی۔ رؤف صدیقی نے کہا کہ سعید سربازی پولیس کی حراست میں نہیں ہیں۔ انہوں نے کراچی پولیس چیف کو ہدایت کی ہے کہ وہ انہیں اس بارے میں تفیصلات سے آگاہ کریں۔

صحافیوں نے اعلان کیا کہ جب تک سعید سربازی کے بارے میں حکومت آگاہ نہیں کرتی تو ان کا احتجاج جاری رہے گا۔

 
 
اسی بارے میں
صحافی حیات اللہ کا قتل
16 June, 2006 | پاکستان
عمرکوٹ کے صحافی پر تشدد
29 August, 2006 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد