BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Friday, 09 February, 2007, 16:01 GMT 21:01 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
عدلیہ پر اعتماد میں کمی کا خدشہ
 

 
 
چیف جسٹس
گڈ گورنس کے لیے ایک متحرک اور قابل عدلیہ ناگزیر ہے
چیف جسٹس آف پاکستان افتخار محمد چودھری نے اس خدشہ کا اظہار کیا ہے کہ مقدمات کی بھر مار اور انصاف کی فراہمی میں تاخیر سے عام آدمی عدلیہ پراعتماد کھو بیٹھے گا۔

وہ اسلام آباد میں شروع ہونے والی پہلی تین روزہ قومی جوڈیشل کانفرنس کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔

سپریم کورٹ آڈیٹوریم میں منعقد ہونے والے کانفرنس کے افتتاحی اجلاس میں وفاقی شریعت کورٹ اور پشاور ہائی کورٹ، بلوچستان ہائی کورٹ اور سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس صاحبان نے شرکت کی جبکہ لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس موجود نہیں تھے۔

چیف جسٹس افتخار محمد چودھری نے کہا کہ عوامی شکایات حکومتی اہلکاروں کی بد انتظامی کی وجہ سے پیدا ہو رہی ہیں جبکہ ’گڈ گورنس‘ کے لیے ایک متحرک اور قابل عدلیہ ناگزیر ہے۔

ان کا کہنا تھا: ’ہمارا عدلیہ کا نظام اس وقت تک کمزور رہے گا جب تک ہم شفاف اور اعلیٰ معیار کے انصاف کی تیز رفتار فراہمی یقینی نہیں بناتے‘۔

چیف جسٹس نے کہا کہ تیزی سے بڑھتی ہوئی آبادی اور قانونی تنازعات میں اضافے نے ججوں کے لیے مقدمات کی بھرمار کر رکھی ہے، لیکن ان مسائل پر بہت کم توجہ دی جا رہی ہے۔

اعلیٰ اور شفاف انصاف
 ہمارا عدلیہ کا نظام اس وقت تک کمزور رہے گا جب تک ہم شفاف اور اعلیٰ معیار کے انصاف کی تیز رفتار فراہمی یقینی نہیں بناتے
 
چیف جسٹس

چیف جسٹس نے اس امید کا اظہار کیا کہ عدالتی نظام کی کارکردگی اور وقار کی بحالی کے لیے اصلاحات پر اب مخلصانہ کوششیں کی جائیں گی۔ انہوں نے کہا: ’شہریوں کو تحفظ اور انصاف فراہم کرنے سے اہم کوئی چیز نہیں‘۔

افتخار محمد چودھری نے کہا کہ گڈ گورنس کے لیے ایک مضبوط اور اعلیٰ معیار کے عدالتی نظام کے ساتھ ساتھ شہریوں کا باشعور اور حقوق سے آگاہ ہونا بھی بہت ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ لاء اینڈ جسٹس کمیشن ایک ایسے لیگل فریم ورک پر کام کر رہا ہے جس سے شہریوں کو اپنے قانونی حق کے استعمال کی مزید طاقت حاصل ہو جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ کمیشن قانونی تشریحات کے اردو میں ایسے آسان تراجم مرتب کر رہا ہے جس کا فائدہ عام شہری کو پہنچے گا۔

وفاقی کمیشن برائے قانون و انصاف اسلام آباد کی نیشنل جوڈیشل کمیٹی کے زیر اہتمام ہونے والی اس کانفرنس کے منتظمین نے بتایا کہ اب یہ قومی جوڈیشل کانفرنس باقاعدگی سے ہوا کر ے گی۔

 
 
اسی بارے میں
سپریم کورٹ کے لیے پانچ نئے جج
14 September, 2005 | پاکستان
جج بدعنوان ہیں، عدالت عظمیٰ
04 December, 2003 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد