BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت:
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
حماد قتل: تحقیقات کیلیے جج تعینات
 

 
 
جسٹس عبد الشکور پراچہ
ہائی کورٹ جج پندرہ روز کے اندر اپنی رپورٹ عدالت کو پیش کریں گے
سپریم کورٹ کے ایڈیشنل رجسٹرار کے قتل کی تحقیق کے لیے لاہور ہائی کورٹ کے جج جسٹس عبد الشکور پراچہ کو تعینات کیا گیا ہے۔

ایڈیشنل رجسٹرار حماد رضا کو چودہ مئی کی رات نامعلوم افراد نے ان کے گھر میں گھس کر قتل کر دیا تھا۔

پولیس نے قتل کو ڈکیتی کی ایک واردات ظاہر کرنے کی کوشش کی تھی لیکن حماد رضا کے خاندان نے پولیس کے موقف کی نفی کرتے ہوئے کہا تھا کہ حماد رضا کا قتل ٹارگٹ کلنگ ہے اور قاتل حماد رضا کے والد کا موبائل فون اپنے ساتھ لے گئے تھے لیکن کچھ اور چوری کرنے کی کوشش نہیں کی تھی۔

چیف جسٹس افتخار محمد چودھری کے وکیل اعتزاز احسن کا کہنا ہے کہ حماد رضا کا عہدہ تو ایڈیشنل رجسٹرار کا تھا لیکن وہ دراصل چیف جسٹس کے سٹاف افسر کے طور پر کام کر رہے تھے اور وہ جسٹس افتخار محمد چودھری کے مقدمے کے اہم گواہ تھے۔

وفاقی حکومت نے اسلام آباد کے ڈسٹرکٹ جج مرزا رفیع الزمان کی سربراہی میں جوڈیشل انکوئری کروانے کا حکم جاری کیا تھا لیکن سپریم کورٹ نے اسے نامنظور کرتے ہوئے حکم جاری کیا کہ تحقیق کے لیے لاہور ہائی کورٹ کے سینئر جج کو مقرر کیا جائے۔

قائم مقام چیف جسٹس رانا بھگوان داس نے تحقیقات کی نگرانی کے لیے سپریم کورٹ کے دو ججوں پر مشتمل ایک کمیٹی بھی قائم کی ہے۔

سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق جسٹس عبدالشکور پراچہ پندرہ روز کے اندر اپنی رپورٹ عدالت کو پیش کریں گے۔

 
 
اسی بارے میں
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد