BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Tuesday, 29 May, 2007, 18:24 GMT 23:24 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
طاہر مرزا اپنے دوستوں کی نظر میں
 
طاہر مرزا
طاہر مرزا ایک شریف انسان اور باصلاحیت صحافی تھے
وقار احمد: لندن
مجھے کل بی بی سی کے میرے ایک ساتھی ساجد اقبال نے اسلام آباد سے فون کیا اور یہ خبر دی کہ طاہر مرزا کی حالت بہت خراب ہو گئی ہے اور پھر آج میری بہن شاہدہ کا لاہور سے فون آیا کہ طاہر کا انتقال ہو گیا ہے۔

یہ خبر غیرمتوقع نہیں تھی، وہ کینسر کے موذی مرض میں مبتلا تھے لیکن جب میں ان سے پچھلے نومبر دسمبر میں کراچی میں ملا تھا تو اس وقت امید و بیم کی جو کیفیت تھی اس میں امید کا پلڑہ قدرے بھاری نظر آ رہا تھا۔ وہ چلتے پھرتے تھے، ڈرائیو کرکے مجھ سے ملنے بھی آئے اور وہ پابندی سے اخبار ڈان میں کالم بھی لکھتے رہے لیکن بعد میں ان کی بیماری میں اور کئی پیچیدگیاں پیدا ہو گئیں اور بالآخر جس کا ڈر تھا وہی ہوا۔

یہ خبر سن کر میری جو کیفیت ہوئی اسے الفاظ میں بیان کرنا مشکل ہے۔ وہ میرے دیرینہ دوست اور ہمدم تھے۔ یوں تو ان سے میری ملاقات لاہور میں ہوئی تھی لیکن ان کا ساتھ اس وقت ہوا جب وہ بی بی سی اردو سروس میں ملازم ہوئے۔

طاہر مرزا
طاہر مرزا ایک پروقار شخصیت کے مالک تھے
بی بی سی میں طاہر مرزا غالباً انیس سو اٹھہتر میں آئے اور انیس سو تراسی تک رہے۔ اس سے پہلے انہیں نشریات کا کوئی تجربہ نہیں تھا لیکن بہت جلد انہوں نے اس کا ہنر سیکھ لیا۔ یہاں انہوں نے پروگرام میزان کو از سر نو زندہ کیا۔ اس کے علاوہ انہوں نے پاکستان میں افغان پناہ گزینوں کے کیمپوں میں جا کر پروگراموں کا ایک سلسلہ کیا۔ افغانستان کی جنگ کے بارے میں وہ بہت فکر مند تھے کہ اس کا پاکستان کی سیاست پر کتنا برا اثر پڑ سکتا ہے۔ اس کے علاوہ بریڈ فورڈ میں پاکستانیوں پر بھی انہوں نے کئی پروگرام کیے۔

بی بی سی میں طاہر مرزا کی کارکردگی سے یہاں کے افسران سے بہت خوش تھے اور انہیں یہاں مستقل ملازمت کی پیشکش بھی کی گئی لیکن ان کا دل اخباری صحافت میں لگا تھا چنانچہ انیس سو تراسی میں وہ خلیج ٹائمز میں اسسٹنٹ ایڈیٹر ہو کر دبئی چلے گئے۔ چند برسوں بعد وہ دبئی سے پاکستان چلے گئے جہاں وہ لاہور میں ڈان اخبار میں کے ریذیڈنٹ ایڈیٹر بنے پھر ڈان کے نامہ نگار ہو کر امریکہ چلے گئے۔ وہاں سے واپسی پر وہ ڈان کے ایڈیٹر ہو گئے اور یہ ان کی صحافتی زندگی کا عروج تھا۔

بش ہاؤس کے ساتھی
 بش ہاؤس میں اب بھی بہت سارے لوگ انہیں اچھے الفاظ میں یاد کرتے ہیں۔ جب وہ ڈان میں آ گئے تب بھی ان کا دوستانہ رویہ برقرار رہا۔ وہ اپنے پرانے دوستوں کی بہت خاطر مدارت کرتے تھے۔ وہ اپنے ماتحتوں سے بھی بہت شفقت سے پیش آتے اور ہمیشہ ان کا رویہ ہمدردانہ ہوتا۔
 
علی احمد خان، ایبٹ آباد

طاہر مرزا ایک نہایت دلکش شخصیت کے مالک تھے، وہ بڑے اچھے انسان تھے۔ ان کی دوست نوازی اور مہمان نوازی ناقابل فراموش تھی۔ ان کے چلے جانے سے پاکستان نہ صرف ایک اچھے صحافی سے محروم ہو گیا بلکہ ہم سب ایک نہایت اچھی شخصیت سے بھی محروم ہو گئے۔ اس وقت ہم ان کی بیگم پروین، ان کے بیٹے عامر اور ان کی بیٹی نوما سے خاص طور سے تعزیت کرتے ہیں۔ خدا انہیں صبر عطا فرمائے۔الٰہی کس دیس وہ صورتیں بستیاں ہیں، جنہیں دیکھنے کو اب آنکھیں ترستیاں ہیں۔

علی احمد خان: ایبٹ آباد

میں جب سے انہیں جانتا ہوں، میں نے انہیں ہمیشہ ان کی بذلہ سنجی کی وجہ سے دیگر دوستوں سے مختلف پایا۔ وہ مشکل حالات کو بھی بہت ہلکے پھلکے انداز میں لیتے تھے۔

وہ بی بی سی میں اگرچہ صرف تین چار سال رہے لیکن اپنے دوستانہ رویے کی وجہ سے وہ بش ہاؤس کی ایک ہردلعزیز شخصیت تھے۔وہ خاص طور پر نیوز روم میں بہت پاپولر تھے۔

بش ہاؤس میں اب بھی بہت سارے لوگ انہیں اچھے الفاظ میں یاد کرتے ہیں۔ جب وہ ڈان میں آ گئے تب بھی ان کا دوستانہ رویہ برقرار رہا۔ وہ اپنے پرانے دوستوں کی بہت خاطر مدارت کرتے تھے۔ وہ اپنے ماتحتوں سے بھی بہت شفقت سے پیش آتے اور ہمیشہ ان کا رویہ ہمدردانہ ہوتا۔

صفدر قریشی: اسلام آباد

طاہر مرزا
پاکستان نہ صرف ایک اچھے صحافی سے محروم ہو گیا بلکہ ہم سب ایک نہایت اچھی شخصیت سے بھی محروم ہو گئے
طاہر مرزا صاحب نہایت ہی نفیس آدمی تھے۔ میری ان سے پہلی ملاقات ڈھاکہ میں ہوئی جہاں وہ ایک اخبار میں رپورٹر تھے جبکہ میں اے پی پی سے منسلک تھا۔ بعد میں ملاقاتوں کا سلسلہ جاری رہا اور ہماری زیادہ تر ملاقاتیں یونین کے اجلاسوں اور یونین سے متعلقہ دیگر سرگرمیوں میں ہوتی تھیں۔ جب وہ بی بی سی سے منسلک تھے تو لندن میں بھی کئی دفعہ ان سے نشستیں ہوئیں۔ میں نے ہمیشہ انہیں نہایت شریف شخص اور بہت ہی باصلاحیت صحافی کے طور پر جانا ہے۔ وہ ہر جاننے والے کی مدد کرکے خوش ہوتے تھے۔

راشد اشرف: لندن

وہ ایک پروقار شخصیت کے مالک تھے۔ عمدہ گفتگو کرتے تھے اور ان کے چہرے پر ہمیشہ مسکراہٹ رہتی تھی۔

نوجوان طاہر مرزا، ان کی بیوی پروین مرزا اور دو خوبصورت بچوں کے آنے سے اردو سیکشن میں ایک رونق سی ہو گئی تھی۔

طاہر کے آنے کے بعد ایک چیز جس کا ہمیں پہلی بار احساس ہوا وہ یہ تھی کہ پاکستان میں اردو زبان تیزی سے بدل رہی ہے۔ طاہر مرزا چونکہ انگریزی صحافت کے پس منظر سے آئے تھے اس لیے ان کی اردو اتنی معیاری نہیں تھی۔ ہم سب نے مل کر ان کو اردو زبان کے اس معیار پر لانے کی کوشش کی اور وہ بہت تیزی سے سیکھ گئے اور بخوبی بی بی سی اردو کے حالاتِ حاضرہ کے پروگرام کرتے رہے۔

بی بی سی میں ان کا بہت اچھا وقت گزرا اور ڈیوڈ پیج سمیت ان کے افسران ان کی بہت قدر کرتے تھے۔ لیکن تحریری صحافت کے پس منظر کی وجہ سے ان کا بی بی سی میں دل نہیں لگااور وہ مستقل نوکری کی پیش کش کے باوجود سن انیس سو تراسی میں خلیج ٹائمز میں چلے گئے۔

 
 
اسی بارے میں
ڈبلیو زیڈ احمد کی یاد میں
19 April, 2007 | فن فنکار
اسد امانت علی انتقال کرگئے
08 April, 2007 | فن فنکار
موسیقار او پی نیر کا انتقال
28 January, 2007 | فن فنکار
شوکت صدیقی انتقال کر گئے
18 December, 2006 | فن فنکار
رِشی کیش مُکھرجی نہیں رہے
27 August, 2006 | فن فنکار
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد