BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Wednesday, 04 July, 2007, 16:54 GMT 21:54 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
مولانا عبدالعزیز برقعے میں فرار ہوتے ہوئے گرفتار
 

 
 
مولانا برقعہ پہن کرطالبات کی لائن میں کھڑے ہو گئے (تصویر ’آج‘ ٹی وی)

اسلام آباد میں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے لال مسجد کے خطیب مولانا عبدالعزیز کو اس وقت گرفتار کر لیا جب وہ برقعہ پہن کر مسجد سے فرار ہونے کی کوشش کر رہے تھے۔ پولیس نے مولانا عبدالعزیز کی اہلیہ ام حسن کو بھی گرفتار کر لیا۔

ڈپٹی کمشنر اسلام آباد چوہدری محمد علی نے اس بات کی تصدیق کرتے ہوئے بی بی سی کو بتایا کہ مولانا عبدالعزیز برقعہ پہن کر جامعہ حفصہ کی ان طالبات کی لائن میں کھڑے ہو گئے جنہوں نے حکومت کی طرف سے عام معافی کے اعلان کے بعد خود کو حکام کے حوالے کر دیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ تلاشی کے دوران لیڈی پولیس کانسٹیبل نے جب بظاہر ایک خاتون کا برقعہ اتارا تو اندر سے مولانا عبدالعزیزبرآمد ہوئے جس پر انہیں گرفتار کر لیا گیا۔


مولانا عبدالعزیز کو پہلے تھانہ آبپارہ لے جایا گیا جہاں سے انہیں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکار تفتیش کے سلسلے میں نامعلوم مقام پر لے گئے۔
باہر آنے والوں طالبعلموں کو پانچ ہزار روپے فی کس دینے کا اعلان کیا گیا ہے

اس واقعہ کے بعد شہر بھر میں حفاظتی اقدامات مزید سخت کر دیے گئے ہیں اور پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے ہتھیار ڈالنے والے طلباء اور طالبات کی جانچ پڑتال شروع کر دی۔

اسلام آباد کے ڈپٹی کمشنر کے مطابق بدھ رات تک لال مسجد سے ملحقہ مدرسوں کے بارہ سو زائد طلبا و طالبات نے خود کو سرکاری اہلکاروں کے حوالے کر دیا ہے۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ اس تعداد میں اضافہ ہوگا۔

ڈپٹی کمشنر نے بتایا کہ گرفتار شدہ بارہ سو افراد میں سے ایک سو پچاس کو اڈیالہ جیل بھجوا دیا گیا ہے، دو سو کو اپنے گھروں کو جانے کی اجازت دے دی گئی جبکہ باقی افراد سے ابھی پوچھ گچھ جاری ہے۔

اس دوران مذہبی امور کے وفاقی وزیر اعجازالحق نے ایک نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے زیر حراست مولانا عبدالعزیز سے ملاقات کی ہے اور انہیں کہا ہے کہ وہ اپنے بھائی کو بھی خود کو حکام کے حوالے کرنے کے لیے کہیں۔

وفاقی وزیر کے مطابق مولانا عبدالعزیز نے انہیں یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ اپنے بھائی کو یہ مشورہ دیں گے۔ اعجاز الحق کے مطابق مولانا عبدالعزیز کی عبدالرشید سے بات کرانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ چھ ما کے عرصے میں مولانا عبدالعزیز کے خلاف دہشت گردی کے سات مقدمات درج ہیں اور انہیں عدالت نے اشتہاری قرار دیا ہوا ہے۔

اس سے قبل بدھ کی شام لال مسجد کے باہر ایک مرتبہ پھر فائرنگ کا سلسلہ شروع ہوا تاہم مسجد کے قرب و جوار کے علاقے میں تاحال کرفیو نافذ رہا۔ مسجد میں مورچے خالی پڑے ہوئے تھے اور اکا دُکا طلبا اور طالبات لال مسجد چھوڑ کر باہر آ رہے تھے۔

مسجد کے سامنے سرکاری کواٹرز تقریباً خالی ہو گئے۔ مسجد کے سامنے کواٹرز میں رہنے والے ایک رہائشی یاسین نے ہمارے نامہ نگار کو بتایا کہ صبح سے فائر بندی تھی اور مذاکرات جاری تھے لیکن بعد میں ایک ایک کرکے طلبہ و طالبات مسجد اور مدرسے سے نکلنا شروع ہوگئے۔

اس سے قبل ڈپٹی کمشنر اسلام آباد چوہدری محمد علی نے بی بی سی بات کرتے ہوئے کہا کہ بدھ سہ پہر تک سات سو طلبہ اور طالبات جامعہ حفصہ اور لال مسجد سے باہر آئے۔ چوہدری محمد علی کا کہنا تھا کہ ان سات سو میں سے دو سو بیس طالبات جبکہ باقی طالبعلم ہیں۔

باہر آنے والے طلبا سے حکام نے کاغذوں پر انگوٹھے لگوائے گئے اور یہ اعلانات کیے جاتے رہے کہ باہر آنے والوں کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی جائے گی۔تاہم بعد دوپہر حکام نے والدین کی رجسٹریشن اور انہیں اندر بھجوانے کا سلسلہ بند کردیا اور انہیں کہا کہ وہ وہاں سے چلے جائیں۔

لال مسجد میں موجود طالبات کے والدین اپنی بچیوں کے منتطر ہیں

مدرسے سے باہر آنے والی کچھ طالبات نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنی مرضی سے باہر آئی ہیں اور اندر بہت برے حالات تھے۔ فوٹوگرافرز نے جب ان طالبات کی تصاویر بنانے کی کوشش کی تو طالبات کے لواحقین نے ایک فوٹو گرافر کو مارا پیٹا۔

لال مسجد اور رینجرز اور پولیس میں منگل کو وقفے وقفے سے فائرنگ کا سلسلہ جاری رہا جس میں بارہ افراد ہلاک جبکہ تقریباً ایک سو چودہ زخمی ہوئے۔

اس سے قبل لال مسجد کے مہتمم مولانا عبدالرشید غازی نے بی بی سی سے ٹیلی فون پر مختصر بات چیت میں اس بات سے انکار کیا کہ باہر نکلنے کے خواہشمند طلبا اور طالبات کو روکا گیا۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ علماء اس معاملے میں پڑ گئے ہیں اور اس کا حل نکل سکتا ہے۔

حکومت نے منگل اور بدھ کی درمیانی رات لال مسجد کے علاقے میں کرفیو نافذ کرتے ہوئے مسجد کے طلبہ کو پرامن طریقے سے ہتھیار ڈالنے کے لیے کہا تھا۔ ہتھیار ڈالنے کے لیے کوئی ڈیڈلائن مقرر نہیں کی گئی تاہم کرفیو کی خلاف ورزی کرنے والے ہر شخص کوگولی مارنے کا حکم دیا گیا تھا۔

آبپارہ تھانے میں لال مسجد کے خطیب مولانا عبدالعزیز، ان کے بھائی اور ترجمان مولانا عبدالرشید غازی سمیت چار سو افراد کے خلاف قتل، اقدام قتل، دہشتگردی اور دیگر دفعات کے تحت مقدمہ بھی درج کر لیا گیا ہے۔

شہر میں فوجی دستے پوزیشنیں سنبھال رہے ہیں

اس سے قبل لال مسجد کے نائب مہتمم عبدالرشید غازی نے الزام لگایا تھا کہ منگل کی صبح فائرنگ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے شروع کی اور مدرسے کے طلباء نے صرف جوابی کارروائی کی۔ انہوں نے الزام لگایا کہ انتظامیہ نے مسجد کا محاصرہ نہ کرنے کے معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق مسجد کے اطراف میں تعینات رینجرز اور مسجد کے احاطے اور اس سے ملحقہ سڑک پر مورچہ بند طلباء کے درمیان منگل کو کشیدگی شروع اس وقت شروع ہوئی تھی جب مسجدِ حفصہ کی درجنوں طالبات نے مسجد سے نکل کر سڑک پر مارچ شروع کر دیا۔ مشتعل طلباء و طالبات ’الجہاد الجہاد‘ اور ’اللہ اکبر اللہ اکبر‘ کے نعرے بلند کر رہے تھے۔

اس سے پہلے بھی لال مسجد انتظامیہ حکومتی کارروائی کی صورت میں خودکش حملوں کی دھمکی دیتی رہی ہے۔

وزارتِ ماحولیات کی عمارت اور اس کے احاطے میں کھڑی گاڑیوں کو بھی آگ لگا دی گئی

اسلام آباد کی لال مسجد سےملحقہ مدرسے حفصہ کی طالبات کی طرف سے اس سال جنوری میں قریبی لائبریری پر قبضے کے بعد سے دارالحکومت کی یہ قدیم ترین مسجد ذرائع ابلاغ کی توجہ کا مرکز رہی ہے۔اس واقعے کے بعد مسجد کے طلباء نے ایک گھر پر چھاپہ مار کر تین خواتین کو اغواء کر لیا تھا۔ گزشتہ مہینے طلباء نے ایک مساج پارلر سے چھ غیر ملکیوں سمیت نو افراد کو اغواء کر لیا تھا جنہیں بعد میں رہا کر دیا گیا۔

(ہارون رشید، مظہر زیدی، انتخاب امیر، آصف فاروقی، نیئر شہزاد، محمد اشتیاق)

 
 
اسی بارے میں
لال مسجد کے حق میں مظاہرے
03 July, 2007 | پاکستان
خودکش حملوں کی دھمکی
06 April, 2007 | پاکستان
لال مسجد: خطبہ جمعہ کا متن
06 April, 2007 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد