BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Wednesday, 01 August, 2007, 10:14 GMT 15:14 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
اقبال کاظمی کی بیوی پر تشدد
 

 
 
سعدیہ کاظمی
سعیدہ کاظمی کی بائیں کلائی شدید زخمی تھی اور اس سے خون رس رہا تھا
کراچی میں بارہ مئی واقعے کے بارے میں پٹیشن دائر کرنے والے سماجی کارکن اقبال کاظمی کی بیوی اور بردار نسبتی کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا ہے ۔

اقبال کاظمی کی بیوی سعدیہ کاظمی نے بتایا ہے کہ وہ بدھ کی صبح اپنے بھائی عمران کے ساتھ ہائی کورٹ میں شوہر کی سماعت پر آرہی تھیں کہ ڈیفینس کے علاقے سے ایک پراڈو گاڑی میں سوار مسلح افراد نے انہیں رکشہ سے اتار کر اغوا کرلیا۔

سعدیہ کاظمی کا کہنا تھا کہ ان کی آنکھوں پر سیاہ پٹیاں باندھی گئی تھیں اور انہیں ماراپیٹا گیا اور ایک نامعلوم مقام پر منتقل کیا گیا۔

سعیدہ کاظمی کی بائیں کلائی شدید زخمی تھی اور اس سے خون رس رہا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ ان لوگوں نے ان کی کلائی کو کسی تیز دھار چیز سے کاٹا تھا۔

ایک سوال کے جواب میں کہ انہیں آخر کیوں تشدد کا نشانہ بنایا گیا، سعدیہ کاظمی کا کہنا ہے کہ ان لوگوں کا کہنا تھا کہ بارہ مئی واقعے کے بارے میں پٹیشن واپس لیں منی لانڈرنگ کے حوالے سے جو درخواست دائر ہے اس کی پیروی نہ کریں بصورت دیگر زندہ رہنے نہیں دیں گے۔

اقبال کاظمی
حکومت نے اقبال کاظمی کو فراڈ کے ایک مقدمے میں گرفتار کرلیا تھا
اپنی رہائی کے بارے میں سعدیہ کاظمی نے بتایا کہ پہلے تو ان لوگوں نے کہا کہ آج ان کا کام اتارنا ہے اور یہ کہہ کر وہ مجھے لے کر چکے گئے۔ اس دوران موبائل ٹیلی فون کی گھنٹی بجی اور خاموشی ہوگئی کافی دیر کے بعد انھوں نے آنکھوں سے پٹی ہٹائی تو سمندر کے قریب موجود تھے۔

انہوں نے بتایا کہ وہ مدد کے لئے پکارتے رہے مگر کوئی نہیں آیا پھر تھوڑا چلتے ہوئے سڑک تک پہنچے اور وہاں سے ٹیکسی میں ہائی کورٹ آگئے۔

سعدیہ کاظمی اور عمران کو سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس صبیح الدین احمد کے چیمبر میں پیش کیا گیا، انہوں نے سعدیہ کاظمی کو گارڈ فراہم کرنے کی ہدایت کی اور ایڈووکیٹ جنرل کو ہدایت کی ان کے تحفظ کو یقینی بنائی جائے۔

سعدیہ کاظمی کے بھائی عمران کا کہنا ہے کہ ان کو تشدد کا نشانہ بنانے کے واقعے میں وہ ہی ملوث ہیں جو بارہ مئی واقعے اور منٹی لانڈرنگ میں ملوث رہے ہیں۔

ہائی کورٹ میں اقبال کاظمی نے بار بار یہ کہا کہ انہیں دھمکیاں دی جارہی ہیں ان کا قصور صرف یہ ہے کہ انہوں نے بارہ مئی واقعے کے حوالے سے پٹیشن دائر کی ہے۔
عدالت نے ایڈووکیٹ جنرل کو ہدایت کی اقبال کاظمی پر ماتحت عدالتوں میں جو بھی مقدمات زیر سماعت ہیں انہیں جلد نمٹایا جائے۔

واضح رہے کہ اقبال کاظمی نے ایک عام شہری کی حیثیت سے سندھ ہائی کورٹ میں ایک پٹیشن دائر کی تھی جس میں یہ موقف اختیار کیا گیا تھا کہ بارہ مئی کے واقعات میں وزیر اعلیٰ ارباب غلام رحیم، متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین، صوبائی مشیر داخلہ، وفاقی سیکریٹری داخلہ، سیکریٹری داخلہ، آئی جی سندھ، سی سی پی او کراچی کو فریق بنایا جائے اور جوڈیشل انکوائری مقرر کی جائے، عدالت نے فریقین کو نوٹس جاری کر رکھے ہیں۔

یہ پٹیشن دائر کرنے کے بعد اقبال کاظمی کو فراڈ کے ایک مقدمے میں گرفتار کرلیا گیا تھا۔

 
 
اسی بارے میں
بارہ مئی کے پٹیشنر کو جیل
13 June, 2007 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد