BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Tuesday, 06 November, 2007, 02:25 GMT 07:25 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
پی سی او ہائی کورٹ میں چیلنج
 

 
 
سندھ ہائی کورٹ
درخواست میں صدر مملکت، وزیر اعظم، چیف آف دی آرمی اسٹاف اور تمام محکموں کے سیکریٹریوں کو فریق بنایا گیا ہے
پاکستان کے صدر جنرل پرویز مشرف کی جانب سے جاری کیے گئے عبوری آئینی حکم ( پی سی او ) کو سندھ ہائی کورٹ میں چیلنج کر دیا گیا ہے۔

سپریم کورٹ کے وکیل مشتاق میمن کی جانب سے سابق ایڈووکیٹ جنرل سندھ انور منصور خان نے پیر کہ روز یہ درخواست دائر کی ہے۔ جس میں صدر مملکت، وزیر اعظم، چیف آف آرمی اسٹاف اور تمام محکموں کے سیکریٹریوں کو فریق بنایا گیا ہے۔

درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عبوری آئینی حکم سپریم کورٹ کی جانب سے 3 نومبر کو جاری کردہ حکم نامے کے متصادم ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ کے سات ججوں کی جانب سے ایک حکم جاری ہوا تھا جس میں انہوں نے عبوری آئینی حکم کو کالعدم قرار دیا تھا اور تمام فوجی اور سول حکام کو ہدایت دی تھی کہ کوئی بھی پی سی او کے تحت خدمات سرانجام نہ دے اور نہ جج پی سی او کے تحت حلف اٹھائیں۔

ایمرجنسی
پاکستان میں لگائی گئی ایمرجنسی کو غیر آئینی قرار دیا گیا ہے

ہائی کورٹ میں دائر کی گئی درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ صدر کی جانب سے ایمرجنسی کا نفاذ اور اٹھائے گئے تمام اقدامات غیر آئینی اور غیر قانونی ہیں۔

درخواست گزار کا کہنا ہے کہ مدعا علیہان نے ایمرجنسی کے نام پر حقیقت میں مارشل لا نافذ کیا ہے، آئین جو پاکستان کی دھڑکن ہے اسے غیر قانونی طریقے سے معطل کیا گیا ہے اور پی سی او مسلط کیا گیا ہے۔ ان کے مطابق فرد واحد کو یہ اختیار نہیں ہے کہ عوام پر ایسے اقدامات مسلط کرے۔

درخواست گزار کا کہنا ہے کہ سپریم کورٹ کا حکم نامہ عبوری آئینی حکم
( پی سی او ) جاری ہونے سے پہلے جاری ہوا تھا مگر حکومت نے اس پر عمل درآمد روک دیا ہے۔

درخواست میں عدالت سے استدعا کی گئی ہے کہ سپریم کورٹ کی طرف سے تین نومبر کو جاری کیے گئے حکم کے متصادم تمام فیصلے روکے جائیں اور سپریم کورٹ کے حکم پر اس کی روح کے مطابق عمل درآمد کرایا جائے۔ تمام عدالتیں آئین کے آرٹیکل 198 کے تحت سپریم کورٹ کے حکم پر عمل درآمد کی پابند ہیں۔

 
 
 رانا بھگوان داس’آج بھی جج ہوں‘
’پیر کوعدالت جاؤں گا، پی سی آو غیر آئینی ہے‘
 
 
’جدوجہد کرتے رہیں‘
جسٹس چودھری کے بقول ایمرجنسی غیر آئینی
 
 
رپورٹروں سےاپنے رپورٹروں سے
ایمرجنسی کا دوسرا دن، لمحہ بہ لمحہ صورتحال
 
 
کراچی میں گرفتار ہونے والے وکیلوکلاء کا احتجاج
ملک بھر سے احتجاج اور ہڑتال کی جھلکیاں
 
 
ڈوگرحلف کا نمبر گیم
انتالیس ججوں نے حلف نہیں لیا 48 نے لے لیا
 
 
اخباراخبار کیا کہتے ہیں؟
ڈھکے چھپے الفاظ میں ایمرجنسی پر تنقید
 
 
اسی بارے میں
نظر بندی کی افواہوں کی تردید
05 November, 2007 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد