BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Saturday, 12 January, 2008, 14:59 GMT 19:59 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
جسٹس رانا بھگوان داس ’نظر بند‘
 

 
 
جسٹس رانا بھگوان داس (فائل فوٹو)
رانا بھگواں داس کا کہنا تھا کہ وکلاء صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں
کراچی پولیس نے سابق جسٹس سپریم کورٹ رانا بھگوان داس کو سنیچر کو اُن کی رہائش گاہ پر ’نظر بند‘ کردیا۔

پولیس کا یہ اقدام اُن کی کراچی بار ایسوسی ایشن کی نو منتخب تقریبِ حلف برداری میں شرکت کے فوری بعد کیا گیا ہے۔

رانا بھگوان داس کی اہلیہ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ پولیس نے رانا بھگوان داس کو گھر کے دروازے پر روک کر کہا کہ ’آپ نظر بند ہیں اور کہیں نہیں جاسکتے ہیں‘۔

مسز بھگوان داس کا کہنا تھا کہ پولیس نے تاحال نظربندی کے کوئی تحریری احکامات نہیں دیئے ہیں جبکہ رانا بھگوان داس کی صحت ایسی ہے کہ اُنہیں اکثر ڈاکٹر کے پاس جانا ہوتا ہے اور اُن کی صحت کے لیے تازہ ہوا میں چہل قدمی بھی ضروری ہے۔

تاہم جب اس سلسلے میں ایس پی کلفٹن ٹاؤن آصف اعجاز سے رابطہ کیا گیا تو اُنہوں نے رانا بھگوان داس کی نظر بندی کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ ملک کے حالیہ حالات کی وجہ سے اُن کی سکیورٹی بڑھائی گئی ہے اور یہ اقدام اعلیٰ افسران کے احکامات کی روشنی میں اُٹھایا گیا ہے۔

ایک سوال پر کہ اور کتنی اعلیٰ شخصیات کی اس اندازسے سکیورٹی بڑھائی گئی ہے تو آصف اعجاز کا کہنا تھا کہ صرف رانا بھگوان داس کے لیے یہ ہدایت دی گئی ہے۔

قبل ازیں رانا بھگوان داس نے کراچی بار ایسوسی ایشن کی نو منتخب کابینہ سے حلف لیا۔ یہ تقریب پی سی او کے نفاذ کے بعد پہلی بڑی تقریب مانی جارہی ہے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے رانا بھگوان داس کا کہنا تھا کہ وکلاء تھوڑے عرصے کے لیے صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں اور ابھی پی سی او کے تحت حلف اُٹھانے والے ججوں کے سامنے پیش نہ ہوں۔

ان کا کہنا تھا کہ جلد ہی یہ نظام تبدیل ہوجائےگا اور عدلیہ واپس اپنے وقار کے ساتھ بحال ہوجائے گی۔ جسٹس ریٹائرڈ رانا بھگواں داس نے کہا کہ حکمرانوں کی غیر اصولی باتوں کو نہ ماننے کی وجہ سے انہوں نے عدلیہ کی بساط لپٹ دی اور آئین کو شکل بگاڑ دی۔

تقریب میں سندھ ہائی کورٹ کے 16 اور سپریم کورٹ کے 2 ریٹائر ججوں نے شرکت کی جنہوں نے پی سی او کے تحت حلف اُٹھانے سے انکار کردیا تھا تاہم تقریب میں کسی ایسے جج کو مدعو نہیں کیا گیا تھا جس نے پی سی او کو قبول کیا۔

کراچی بار ایسوسی ایشن کے صدر محمود الحسن کا کہنا تھا: ’سندھ ہائی کورٹ نے پانچ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن ججوں کو ہماری تقریب میں شرکت کرنے سے روک دیا ہے‘۔

کراچی بار ایسوسی ایشن کی تقرب حلف برداری میں پاکستان بار کونسل، سندھ ہائی کورٹ بار اور لوئر کورٹس کے دو ہزار سے زائد وکلاء نے شرکت کی۔

 
 
 رانا بھگوان داس ’آج بھی جج ہوں‘
’پیر کوعدالت جاؤں گا، پی سی آو غیر آئینی ہے‘
 
 
لاڑکانہ سے اسلام آباد
بھگوان داس عدالتی سفر کے چالیس سال
 
 
جسٹس بھگوان داس جسٹس بھگوان داس
سپریم کورٹ کے جج کے خاندان کی تشویش
 
 
اسی بارے میں
بگٹی، بھگوان اور مہاجر
27 August, 2007 | پاکستان
جج ہوں،عدالت جاؤں گا: بھگوان
04 November, 2007 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد