BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Thursday, 12 February, 2009, 22:01 GMT 03:01 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
’رپورٹ، پاکستانی سنجیدگی کا اظہار‘
 
چھبیس نومبر کو بھارت کے تجارتی شہر ممبئی پر مختلف مقامات پر حملوں میں ایک سو ساٹھ سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے

امریکہ نے پاکستان کی جانب سے ممبئی حملوں کی تحقیقاتی رپورٹ کے اجراء کو ایک مثبت قدم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ رپورٹ اس بات کا اظہار کرتی ہے کہ پاکستان ممبئی حملوں کے ذمہ دار افراد سے نمٹنے کے تئیں سنجیدہ ہے۔

حکومتِ پاکستان نے جمعرات کو ممبئی حملوں کی سازش کے کچھ حصے کی پاکستان میں تیاری کا پہلی مرتبہ اعتراف کرتے ہوئے اس میں مبینہ طور پر ملوث آٹھ افراد کے خلاف اسلام آباد میں مقدمہ درج کیا ہے۔

واشنگٹن میں بی بی سی کے نمائندے برجیش اپادھیائے کے مطابق امریکی محکمۂ خارجہ کے ترجمان رابرٹ وڈ نے واشنگٹن میں ایک پریس بریفنگ کے دوران کہا کہ ان کے پاس اگرچہ اس سلسلے میں کی گئی گرفتاریوں کے بارے میں زیادہ معلومات نہیں ہیں تاہم وہ جانتے ہیں کہ پاکستان اپنی سرحد کے اندر موجود ان حملوں کے ذمہ دار افراد کو قانون کے شکنجے میں کسنے کے لیے پرعزم ہے اور اس رپورٹ سے پاکستان کی سنجیدگی بھی ظاہر ہوتی ہے۔

 پاکستان جانتا ہے کہ ساری دنیا کی نظریں اس پر ہیں اور دنیا انصاف چاہتی ہے اور صرف یہ چیز ہی پاکستانیوں کو (ممبئی حملوں کے ذمہ دار افراد) کے تعاقب پر مائل کرنے کے لیے کافی ہے۔
 
امریکی ترجمان

ایک سوال کے جواب میں امریکی ترجمان کا کہنا تھا کہ’پاکستانی حکومت کو بہت سے بڑے مسائل درپیش ہیں۔ پاکستان میں ایک خود مختار حکومت ہے جس نے کہا ہے کہ وہ ممبئی حملوں کے ذمہ دار افراد کے تعاقب میں جہاں ثبوت لے جائے گا جائے گی‘۔

انہوں نے کہا کہ ’پاکستان جانتا ہے کہ ساری دنیا کی نظریں اس پر ہیں اور دنیا انصاف چاہتی ہے اور صرف یہ چیز ہی پاکستانیوں کو (ممبئی حملوں کے ذمہ دار افراد) کے تعاقب پر مائل کرنے کے لیے کافی ہے‘۔

اس سے قبل بھارتی حکومت کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں بھی کہا گیا تھا کہ’پاکستانی حکام اب بھی اس حملے کی تفتیش کر رہے ہیں اور بعض گرفتاریاں اور ایف آئی آر درج کرنے سمیت کئی اقدامات کیے گئے ہیں جو ایک مثبت پیش رفت ہے‘۔

بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ پاکستان نے تحقیقات سے متعلق بعض معلومات اور دیگر تفصیلات مانگی ہیں۔ حکومت ہند پاکستان کی طرف اٹھائے گئے سوالات کا جائزہ لے گی۔’جائزے کے بعد حکومت وہ تمام معلومات پاکستان کو فراہم کرے گی جو وہ کر سکتی ہے۔‘

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ہندوستان کو یہ توقع ہے کہ پاکستان اپنی سر زمین پر دہشتگردی کے ڈھانچے کو تباہ کرنے کے عملی اقدامات کرے گا۔

 حکومت نے تحقیقات آگے بڑھانے اور ان افراد کے خلاف مقدمہ مضبوط کرنے کے لیے بھارت سے تیس سوالات کے جواب مانگے ہیں۔اس مقدمے میں ملوث افراد کو سزا دلانے کے لیے بھارت کا تعاون ضروری ہے۔
 
رحمان ملک

جمعرات کی صبح وزارت داخلہ میں ہونے والی ایک اخباری کانفرنس میں مشیر داخلہ رحمان ملک نے ممبئی حملوں کی اب تک کی تحقیقات کی تفصیل بتاتے ہوئے تسلیم کیا تھا کہ ان ملزمان میں سے چند کا تعلق کالعدم لشکر طیبہ سے ہے۔ تاہم انہوں نے یہ بتانے سے گریز کیا کہ اس سازش میں ملوث کتنے افراد کا تعلق پاکستان سے ہے۔

اسلام آباد میں بی بی سی اردو کے نمائندے ہارون رشید کے مطابق ممبئی حملوں کے ذمہ دار افراد کے خلاف ایف آئی آر اسلام آباد میں ایف آئی اے میں قائم خصوصی تحقیقاتی یونٹ کے پاس درج کی گئی ہے جس اس سازش کے مبینہ سرغنہ حماد امین سمیت ذکی الرحمان لکھوی اور ضرار شاہ کے نام شامل ہیں تاہم اس ایف آئی آر میں اجمل قصاب کا نام نہیں ہے۔

نامزد آٹھ میں سے چھ افراد حکومت کی تحویل میں ہیں۔ان افراد کے خلاف انسداد دہشت گردی، سائبر کرائمز ایکٹ اور تعزیرات پاکستان کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

رحمان ملک نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ حکومت نے تحقیقات آگے بڑھانے اور ان افراد کے خلاف مقدمہ مضبوط کرنے کے لیے بھارت سے تیس سوالات کے جواب مانگے ہیں۔ ان کا اصرار تھا کہ اس مقدمے میں ملوث افراد کو سزا دلانے کے لیے بھارت کا تعاون ضروری ہے۔

 
 
تصویر کیسے؟
لکھوی کی تصویر انڈیا کو کہاں سے ملی؟
 
 
ممبئی حملوں کا مقدمہ
دونوں ملکوں کے سابق سفارتکار کیا کہتے ہیں
 
 
 ممبئی ڈوسیئر ممبئی ڈوسیئر
’ڈوسیئر ثبوتوں کا دعوی ہے ثبوت نہیں‘
 
 
ممبئی دہشت گرد حملے کب کیا ہوا؟
ممبئی حملے: دہشت گردی، بیانات، الزامات
 
 
قانونی پیچیدگیاں
ممبئی حملے: پاکستان میں سزا کس قانون کے تحت
 
 
پاک بھارت ممبئی کے اثرات
حملوں کے بعد ٹریک ٹو ڈپلومیسی بھی معطل
 
 
ممبئی حملے کس کے خلاف۔۔۔
ممبئی حملے اور جہادیوں کے اصل مقاصد
 
 
اسی بارے میں
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد