BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Friday, 27 February, 2009, 12:54 GMT 17:54 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
’قصاب، بحری راستہ، ثابت نہیں‘
 

 
 
اجمل قصاب
اجمل قصاب سمیت اکتالیس افراد پر فرد جرم عائد کی گئی ہے
پاکستانی بحریہ کے سربراہ ایڈمرل نعمان بشیر نے کہا ہے کہ اب تک نیوی کو اس بات کے ثبوت نہیں ملے ہیں کہ پچھلے سال چھبیس نومبر کو ممبئی پر دہشتگرد حملوں کے دوران زندہ پکڑا جانے والا اجمل قصاب پاکستان سے بحری راستے ممبئی گیا تھا۔

کراچی میں پریس بریفنگ سے خطاب کے دوران ایک سوال کے جواب میں ایڈمرل نعمان بشیر نے کہا کہ ان کے پاس جو معلومات ہیں ان سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ اجمل قصاب پاکستان سے کشتی میں سوار ہوکر ممبئی گیا تھا۔ تاہم ان کا کہنا تھا کہ اگر پاکستان نیوی کو اس بارے میں شواہد فراہم کی جائیں تو وہ اس کی مزید تحقیقات کرسکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملک کی بندرگاہوں پر تو سکیورٹی کے مختلف ادارے نظر رکھتے ہیں لیکن یہ ممکن ہے کہ کوئی شخص کسی اور ساحلی علاقے سے سمندر کے اندر داخل ہوجائے۔ انہوں نے کہا کہ ممبئی حملوں کے بارے میں بہت سارے سوالات ایسے ہیں جو جواب طلب ہیں۔

’پاکستان اور بھارت کی حکومتیں اس معاملے پر رابطے میں ہیں اور اگر بھارت اس بارے میں ہمیں شہادتیں دیتا ہے تو ہم اس کی تحقیقات کریں گے اور اگر اس میں کوئی ملوث ہوا تو وہ سامنے آجائے گا، چھپانے کی تو کوئی بات نہیں ہے۔‘

بحریہ کے سربراہ کا کہنا تھا کہ اگر بالفرض اجمل قصاب اور اس کے ساتھی پاکستان سے گئے بھی تھے تو پھر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ بھارتی بحریہ اور کوسٹ گارڈ انہیں کیوں نہیں روک سکیں۔

یاد رہے کہ وزیر اعظم کے مشیر داخلہ رحمن ملک یہ کہہ چکے ہیں کہ اجمل قصاب اور ان کے ساتھی سندھ کے ساحلی علاقے سے ممبئی پہنچے تھے اور اس سے پہلے ان دہشتگردوں نے پاکستان کے ساحلی علاقے میں حملے کی تربیت بھی لی تھی۔

ایڈمرل نعمان بشیر نے بتایا کہ پاکستانی بحریہ پانچ مارچ سے بحری جنگی مشقیں شروع کر رہی ہے جو چودہ مارچ تک جاری رہیں گی اور انہیں امن 2009ء کا نام دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بحریہ نے باون ممالک کو ان مشقوں میں شامل ہونے کی دعوت دی تھی جن میں سے اڑتیس ممالک نے یقین دہانی کرائی ہے کہ ان کی بحری فورسز ان مشقوں میں حصہ لیں گی۔

 
 
ممبئی حملے فرد جرم میں ہے کیا؟
ممبئی حملوں کی فردِ جرم کی تفصیلات
 
 
فائل فوٹو ممبئی ڈوسیئر
پاکستان کو دیئے گئے شواہد کیا ہیں؟
 
 
لشکر طیبہ سوچ بدل گئی؟
لشکرِ طیبہ کی جانب سے پرامن جدوجہد کا اعلان
 
 
تجزیہ کاروں کی رائے
’پاکستانی ڈوسیئر، ذمہ دار ریاست کا ثبوت‘
 
 
شدت پسندی کا پودا
ممبئی حملے، پاکستانی ایجنسیاں کہاں تھیں؟
 
 
قانونی پیچیدگیاں
ممبئی حملے: پاکستان میں سزا کس قانون کے تحت
 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد