سنگساری کے بارے میں تحریر لکھنے پر ایرانی مصنفہ کو چھ برس جیل کی سزا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption سنگساری کی دنیا بھر میں مذمت کی گئی ہے

ایران میں سنگساری کے بارے میں تحریر لکھنے پر مصنفہ اور انسانی حقوق کی کارکن گل رخ ابراہیمی ایرائی کو چھ برس قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

گل رخ ابراہیمی ایرائی کو کئی سال جیل کی سلاخوں کے پیچھے گزارنا ہوں گے حالانکہ ان کی تصنیف تاحال شائع بھی نہیں ہوئی ہے۔

انھیں ’اسلامی تقدس کی تذلیل‘ کرنے اور ’نظام کے بارے میں پراپیگینڈا پھیلانے‘ کے جرم میں سزا ہوئی ہے۔

ایمنیسٹی انٹرنیشنل نے اس سزا کو ’بچگانہ‘ اور مقدمے کو ’مضحکہ خیز‘ قرار دیا ہے۔

خیال رہے کہ سنگساری کی سزا پانے والوں پر اس وقت تک پتھر برسائے جاتے ہیں جب تک ان کا دم نہ نکل جائے۔ ایران میں ایسی سزائی پانی والی وہ خواتین ہوتی ہیں جن پر زنا کا الزام ہوتا ہے۔

گل رخ ابراہیمی ایرائی کی تحریر ایک ایسی نوجوان خاتون کے جذبات کے بارے میں ہے جو سنگساری کی سزا پانے والی ایک نوجوان خاتون کی سچی کہانی پر بننے والی فلم ’دی سٹوننگ آف سرایا ایم‘ دیکھ کر شدید غصے کی حالت میں مسلمانوں کی مقدس کتاب قرآن کا ایک نسخہ نذر آتش کر دیتی ہے۔

ایرانی حکام کو گل رخ ابراہیمی کی تحریر کے بارے میں چھ ستمبر 2014 میں اس وقت معلوم پڑا تھا جب انھیں اور ان کے شوہر آرش صادقی کو چند افراد جن کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ پاسدارانِ انقلاب کے ارکان تھے نے گرفتار کر لیا تھا۔

ایمنیسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ گل رخ ابراہیمی کو تحران کی اوین جیل منتقل کر دیا گیا تھا جہاں انھیں 20 روز تک رکھا گیا اور ان کے خاندان والوں اور وکیل کو ان تک رسائی نہ فراہم کی گئی۔

گل رخ ابراہیمی کا کہنا ہے کہ ان کی آنکھوں پر پٹی باندھ کر دیوار کی جانب ان کا رخ کر کے ان سے گھنٹوں تک تفتیش کی گئی اور دوران تفتیش بار بار ان سے کہا جاتا کہ انھیں ’اسلام کی تذلیل کرنے پر پھانسی ہو سکتی ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ وہ واضح طور پر سن پا رہی تھیں کہ ان کے شور کو ساتھ والے تفتیشی کمرے میں ڈرایا دھمکایا جا رہا تھا۔

بعد میں ان کے شوہر آرش صادقی نے بتایا کہ حراست میں انھیں مارا گیا اور تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں