نہرو یونیورسٹی میں مودی کا پتلا جلانے کی تحقیقات کا حکم

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption جے این یو میں نریندر مودی اور امت شاہ کے پتلے جلائے گئِ

بھارت میں جواہر لال نہرو یونیورسٹی نے دسہرے کے موقع پر یونیورسٹی کیمپس میں کچھ طالب علموں کی جانب سے راون کی جگہ ملک کے وزیر اعظم نریندر مودی کا پتلا جلائے جانے کی تحقیقات کرنے کا اعلان کیا ہے۔

یونیورسٹی کے وائس چانسلر جگدیش کمار نے کہا کہ 'منگل کی رات نریندر مودی کا پُتلا جلائے جانے کے معاملے کی تحقیقات کی جا رہی ہیں۔

اس سال دسہرے کے موقع پر ملک بھر میں پاکستانی وزیراعظم نواز شریف، پاکستانی شدت پسند تنظیم سربراہ حافظ سیعد، اور دیگر کئی شدت پسندوں کے پتلے جلائے گئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ NARINDER NANU
Image caption اس سال دسہرے کے موقع پر راون کے پتلے پر پاکستانی وزیر اعظم نواز شریف کی تصاویر استعمال کی گئیں

جبکہ نیشنل سٹوڈنسٹ یونین آف انڈیا ( این ایس یو آئی) نے راون کے مجسمے پر وزیراعظم نریندر مودی اور امت شاہ کے چہروں کا استعمال کیا۔

سٹوڈنٹس یونین کا کہنا ہے کہ یہ ملک بھر میں مختلف تعلیمی اداروں کو تحفظ فراہم کرنے میں حکومت کی ناکامی کے خلاف احتجاج ہے۔

یونیورسٹی حکام کا کہنا ہے کہ اس طرح ایونٹ کے لیے کسی طرح کا اجازت طلب نہیں کی گئی تھی جبکہ سٹوڈنٹس کا کہنا ہے کہ کیمپس میں پتلے جلانے کا رواج عام ہے اور اس کے لیے انتظامیہ سے سے اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہے۔ طالب علموں نے پلے کارڈز بھی اٹھا رکھے تھے جس پر لکھا تھا 'بدی پر حق کی جیت'۔