انڈین آئین کو شعری جامہ پہنانے والا پولیس افسر

ایس کے گوتم
Image caption آئی پی ایس افسر ایس کے گوتم نے لوگوں کو مشکل سے نجات دلانے کی کوشش کی اور آئین کا آ‎سان زبان میں منظوم ترجمہ کر ڈالا

اگر آپ کو انڈيا کا آئین منظوم شکل میں مل جائے تو کیا آپ اسے پڑھیں گے؟ پڈو چیری کے سینیئر پولیس افسر ایس کے گوتم نے ایسی ہی ایک کامیاب کوشش کی ہے۔

بہت کم لوگ ہیں جو آئین کو پڑھنے یا جاننے کی کوشش کرتے ہیں۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ انڈیا کے طویل اور وسیع آئین کی زبان قدر مشکل ہے۔

آئی پی ایس افسر ایس کے گوتم نے لوگوں کو اسی مشکل سے نجات دلانے کی کوشش کی اور آئین کا آ‎سان زبان میں منظوم ترجمہ کر ڈالا۔

یہ ترجمہ اب ایک کتاب کی شکل میں دستیاب ہے جس کا نام ہے'آئین کی شاعری'۔

گوتم نے بی بی سی سے بات چیت میں کہا: 'دراصل آئین ہمارے ملک کی پالیسیوں کا رہنما ہے، اس حیثيت سے ہمارے ملک کی سب سے اہم کتاب بھی ہے۔ لیکن عام آدمی اسے سمجھ نہیں پاتا ہے کیونکہ اس کی زبان تھوڑی پیچیدہ ہے۔ اس لیے میں نے سوچا کہ آئین کو کیسے سادہ زبان میں لکھا جا سکتا ہے۔ اسی کوشش کے تحت میں نے آئین کو شعر کی شکل میں تخلیق کیا ہے۔ اس سے یہ آسان ہو گیا۔'

Image caption گوتم کے مطابق اگر لوگ آئین پڑھیں گے تو اس سے لوگوں میں اپنے حقوق کے تئیں بیداری پیدا ہوگی

گوتم کو اپنی طویل پولیس کی ملازمت کے دوران یہ محسوس ہوا کہ آئین کی روح سے بیشتر لوگ بے خبر ہیں۔ عام طور پر لوگوں کو عدالت اور پولیس کی کارروائی کے وقت ہی اس کی یاد آتی ہے۔

انھوں نے آئین کو عوام تک پہنچانے کے لیے آسان زبان میں سہل طریقے سے پیش کرنے کی کوشش کی ہے۔

انڈیا کا آئین دنیا کا طویل ترین آئین ہے جو تقریباً 25 حصوں میں منقسم ہے لیکن ایس کے گوتم نے اسے 394 اشعار میں مکمل کرنے کی کوشش کی ہے۔

وہ کہتے ہیں: 'میں نے کوشش کی ہے کہ ہر دفعہ کو دو شعر میں اس کے اصل معنی کے ساتھ پیش کردوں۔ شعر کے نیچے میں نے اس مضمون کا نمبر بھی درج کر دیا ہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption ایس کے گوتم کی اس کوشش نے انڈين آئین کو سادہ، عام فہم اور دلکش بنا دیا ہے اور پڑھتے وقت یہ قطعی بوجھل نہیں لگتا ہے

ایک بار جب منظوم متن تیار ہو گیا تو اسے کتاب کی شکل دینا کوئی بہت مشکل کام نہیں تھا۔ سادہ زبان اور اینیمٹیڈ تصاویر نے اسے ایسا دلچسپ بنا دیا ہے کہ بچوں کی بھی اس میں دلچسپی پیدا ہوگي۔

منظوم آئین پر مشتمل کتاب 77 صفحات پر مشتمل ہے جسے آ‎سانی سے یاد بھی کیا جا سکتا ہے۔ اور اگر بھول جائیں تو جیب سے نکال کر دوبارہ پڑھ لیجیے۔

ایس کے گوتم کا کہنا ہے: 'میں نے پوری کوشش کی ہے کہ آئین کو شعری شکل دینے میں اس کی اصل روح کو زک نہ پہنچنے پائے اور اس میں کوئی تبدیلی بھی نہ ہو۔ لیکن مجھے اس میں کتنی کامیابی ملی یہ تو لوگ ہی بتائیں گے۔'

ایس کے گوتم کی اس کوشش نے انڈين آئین کو سادہ، عام فہم اور دلکش بنا دیا ہے اور پڑھتے وقت یہ قطعی بوجھل نہیں لگتا ہے۔

آئین شاعری لوگوں کو بھارت کے آئین تک لے جائے وہ بس اتنا ہی چاہتے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں