انڈیا: ایمبیسیڈر گاڑی کا برانڈ معمولی قیمت میں فروخت

کار تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption انڈیا میں ایمبیسیڈر کار کو ایک عرصے تک شان و شوکت کی علامت کے طور پر دیکھا جاتا رہا

ایک زمانے میں انڈیا میں مرتبے، شاہانہ آن بان اور اثر و رسوخ کا مترادف کہی جانے والی ایمبیسیڈر کار کا برانڈ ایک لاکھ 20 ہزار ڈالر کی معمولی قیمت پر فروخت کر دیا گیا ہے۔

حکام کے مطابق اس برانڈ کے مالک ہندوستان موٹرز نے فرانسیسی کمپنی پیریو کے ہاتھ ایمبیسیڈر کو فروخت کر دیا ہے۔.

ایک وقت تھا جب انڈیا میں یہ سرکاری گاڑی ہوا کرتی تھی، لیکن سنہ 2014 کے بعد سے ہی اس کی مینوفیکچرنگ بند کر دی گئی تھی۔

تاہم ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ پیریو اب اپنے ایمبیسیڈر برانڈ کو دوبارہ لانچ کرے گی یا نہیں۔

برطانوی مورس اوکسفرڈ کی طرز پر بنی ایمبیسیڈر کار انڈیا میں تین دہائیوں تک بیسٹ سیلر رہی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اسے سرکاری گاڑی کے طور پر بھی مقبولیت حاصل رہی

ایک عرصے سے پیریو انڈیا میں اپنے قدم جمانے کا متمنی رہا ہے اور نوے کی دہائی میں جب ملک کی معیشت کو لبرلائز کیا گیا تو انڈیا میں آنے والی یہ چند بیرونی کمپنیوں میں سے ایک رہی ہے۔

سنہ 60 کی دہائی سے لے کر سنہ 80 کی دہائی تک یہ انڈیا میں اعلیٰ مرتبے کی علامت رہی اور یہ بڑے پیمانے پر لگژری کاریں بناتی رہی۔

اس کار کو اس کی خوبصورتی کی وجہ سے نہیں یاد کیا جاتا لیکن کشادہ اور کم شور کو بہت سراہا جاتا ہے کیونکہ یہ انڈیا کی سڑکوں کے لیے بہت مناسب ہے۔

Image caption پھر یہ ٹیکسی کے طور پر چلنے لگی

انڈیا میں یہ پہلی کار ہے جو ڈیزل پر چلائی گئی ہے اور اس ایئر کنڈیشن کے لحاظ سے بھی یہ پہلی ہے۔

لیکن انڈیا کے بازار میں بے شمار بیرونی کاروں کی آمد کے بعد سے اس کی فروخت میں مسلسل کمی آتی گئی یہاں تک کہ جب اسے بند کیا گیا تو اس کی سالانہ فروخت صرف دو ہزار رہ گئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں