اپنے دفاع کے لیے ہر قسم کا ہتھیار بنائیں گے: حسن روحانی

حسن روحانی تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ ان کا ملک اپنے دفاع کو مضبوط بنانے کے لیے ہر طرح کا ہتھیار بنائے گا۔

ملکی پارلیمان سے خطاب کرتے ہوئے صدر روحانی کا کہنا تھا کہ ایران اسلحے کی تیاری سے، جس میں بیلسٹک میزائل بھی شامل ہیں، کسی بین الااقوامی معاہدے کی خلاف ورزی نہیں کر رہا ہے۔

انھوں نے امریکہ کو خبردار کیا کہ ایران اور چھ عالمی طاقتوں کے درمیان مشترکہ جوہری معاہدے کی خلاف ورزی اس کے مفادات کے لیے 'نقصان دہ' ہو گی۔

اسی بارے میں مزید پڑھیے

بین الاقوامی طاقتیں ایران کے ساتھ معاہدے کی حامی

'ٹرمپ کو ایران جوہری معاہدہ ختم نہیں کرنے دیں گے'

'ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ ختم کرنا تباہ کن ہوگا'

خیال رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گذشتہ ماہ اپنے ایک بیان میں ایران کی حکومت کو ’جنونی‘ قرار دیتے ہوئے اس کے ساتھ بین الاقوامی جوہری معاہدے کی توثیق کرنے سے انکار کر دیا تھا۔

صدر روحانی کا کہنا تھا کہ ایران اپنے دفاع کے لیے کسی بھی قسم کے ہتھیار بنانے سے نہیں ہچکچائے گا۔

ایرانی صدر کے بقول ’ہم اپنے دفاع، علاقائی سالمیت اور قومی تحفظ کے لیے جب بھی ضروری ہوا کسی بھی قسم کے ہتھیاروں کو ڈیزائن، تیار، ذخیرہ اور استعمال کرنے میں نہیں ہچکچائیں گے۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ ایران بیلسٹک میزائلوں کی پیداوار جاری رکھنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ ’آپ کو یہ معلوم ہونا چاہیے کہ ہم نے میزائل بنائے، بنا رہے ہیں اور بنائیں گے۔‘

حسن روحانی نے کہا کہ ایران کسی بھی بین الاقوامی قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی نہیں کرتا اور یہ اقوام متحدہ کی قرارداد 2231 کے خلاف نہیں ہے۔

’ہم پوری قوت سے اپنے قومی مفادات کے تحفظ کی حفاظت کے راستے پر چلتے ہوئے اپنی سکیورٹی کو پوری طاقت سے استعمال کریں گے۔ آپ امریکیوں کو معلوم ہونا چاہیے کہ جے سی پی او اے کے معاہدے کو توڑنا جوکہ امریکا اور ایران کے درمیان جو ہری معاہدہ ہے وہ خدا کے کرم سے آپ کے خود کے لیے نقصان دہ ہوگا۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں