افغانستان: جلال آباد میں پاکستانی سفارتی اہلکار قتل

افغانستان پولیس

،تصویر کا ذریعہGetty Images

،تصویر کا کیپشن

ابھی تک اس واقعے کی ذمہ داری کسی نے قبول نہیں کی ہے

افغانستان سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق نامعلوم مسلح افراد نے جلال آباد میں پاکستان کے قونصل خانے کے ایک سفارتی اہلکار کو فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا ہے۔

صوبائی حکام نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ نیئر اقبال نامی اہلکار کی ہلاکت کا واقعہ پیر کی شام پیش آیا۔

ننگرہار کے گورنر کے ترجمان عطااللہ خوگیانی نے بی بی سی کو بتایا کہ سفارتی اہلکار بازار سے سودا سلف لانے کے لیے نکلے تھے جب دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے انھیں فائرنگ کر کے موت کے گھاٹ اتار دیا۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ نیئر اقبال المعروف رانا کو اس وقت نشانہ بنایا گیا جب وہ بازار سے سودا خرید کر واپس جا رہے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ 'وہ جب بازار سے واپس آ رہے تھے تو انہیں دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے نشانہ بنایا۔ وہ شام چار بجے سفارتی اصولوں کی خلاف ورزی کر کے گھر سے نکلے اور کسی کو خبر تک نہ دی تھی۔'

ابھی تک اس بات کی تصدیق تو نہیں کی جا سکی کہ نیئر اقبال پاکستانی قونصل خانے میں کس حیثیت سے کام کرتے تھے لیکن ننگرہار کے حکام کے مطابق وہ ویزا دفتر میں کام کرتے تھے۔

پاکستان کے دفترِ خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر فیصل نے ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں بتایا ہے کہ پاکستان کی سیکریٹری خارجہ نے اسلام آباد میں تعینات افغان ناظم الامور کو طلب کر کے پاکستانی سفارتی اہلکار کی ہلاکت پر سخت احتجاج کیا ہے۔

پاکستان میں افغانستان کے سفیر ڈاکٹر عمر زاخیلوال بھی ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں پاکستانی سفارتی اہلکار کی ہلاکت پر تعزیت کی ہے۔

اپنے پیغام میں انھوں نے افغان حکومت کی جانب سے مکمل تعاون کا یقین بھی دلایا۔

ابھی تک اس واقعے کی ذمہ داری کسی نے قبول نہیں کی ہے۔