کابل میں نجی چینل شمشاد ٹی وی کے دفتر پر حملہ

یولیس کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں یا حملہ آوروں دونوں کی تعداد کے بارے میں ابھی کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption پولیس کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں یا حملہ آوروں دونوں کی تعداد کے بارے میں ابھی کچھ نہیں کہا جا سکتا۔

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں ایک مقامی ٹی وی چینل پر حملہ ہوا ہے جس میں ہلاکتوں کا خدشہ ہے۔

اب تک کی اطلاعات کے مطابق نجی چینل شمشاد ٹی وی کے دفتر میں داخل ہوتے وقت دستی بموں کی مدد سے حملہ کیا۔

کابل میں فوجی بس پر خودکش حملہ، 15 کیڈٹس ہلاک

کابل میں بینک کے باہر دھماکے میں چار افراد ہلاک

کابل: مسجد میں بم حملہ، 20 افراد ہلاک

کابل میں ذرائع کا کہنا ہے کہ علاقے سے ابھی تک فائرنگ کی آوازیں سنائی دے رہی ہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں یا حملہ آوروں دونوں کی تعداد کے بارے میں ابھی کچھ نہیں کہا جا سکتا۔

کابل پولیس چیف کے ترجمان نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ پولیس نے ایک حملہ آور کو ہلاک کر دیا ہے اور حکام عمارت کا کنٹرول واپس حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ چینل کے دفتر میں 100 کے قریب ملازمین موجود ہیں۔ اب تک یہ واضح نہیں کہ اس حملے کا کون ذمہ دار ہے۔

حملے کہ شروع ہوتے ہی شمشاد ٹی وی کی نشریات روک دی گئی تھیں۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ مسلح حملہ آوروں نے ٹی وی چینل کے عملے کے کچھ اراکین کو ہلاک کر دیا ہے تاہم ان اطلاعات کی تصدیق نہیں کی جا سکی ہے۔

افغانستان صحافیوں اور دیگر میڈیا ورزکرز کے لیے سکیورٹی کے حواے سے انہتائی خطرناک ملک سمجھتا جاتا ہے۔

اسی بارے میں