راہل گاندھی کا 'پپو' ٹیگ ختم، اب وہ اعتماد سے وزیرِ اعظم مودی کو چیلنج کر سکتے ہیں

راہل گاندھی تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption راہل گاندھی نے گذشتہ چند مہینوں میں دکھا دیا ہے کہ وہ وزیر اعظم نریندر مودی کو نہ صرف چیلنج کرسکتے ہیں بلکہ اس میں انھیں مزا بھی آنے لگا ہے

گجرات کے اسمبلی انتخابات میں کانگریس پارٹی تو ہاری لیکن راہل گاندھی نہیں! اب وہ ایک نئے زیادہ پر اعتماد کردار میں نظر آئیں گے اور انھیں 'پپو' کہنے والے ان کی تضحیک کے نئے راستے تو تلاش کرتے رہیں گے لیکن اب یہ ٹیگ آسانی سے چپکے گا نہیں۔

یہ راہل گاندھی کے لیے بھی اچھی خبر ہے اور ملک میں جمہوریت کے لیے بھی۔

گجرات کا الیکشن راہل گاندھی کا 'بریکنگ آؤٹ' لمحہ ثابت ہوسکتا ہے۔ اگر آپ کو سپورٹس کا شوق ہے تو آپ نے دیکھا ہوگا کہ کسی بھی کھیل میں صفِ اول کے کھلاڑیوں کی صلاحیتوں میں زیادہ فرق نہیں ہوتا، بس ایک دن اچانک وہ ایک اچھی اننگز کھیلتے ہیں، اچھا گول کر دیتے ہیں یا ایک کانٹے کا مقابلہ جیت لیتے ہیں اور انھیں لگنے لگتا ہے کہ وہ کسی کو بھی ٹکر دے سکتے ہیں۔

یہ اعتماد کا کھیل ہے اور راہل گاندھی نے گذشتہ چند مہینوں میں دکھا دیا ہے کہ وہ وزیر اعظم نریندر مودی کو نہ صرف چیلنج کرسکتے ہیں بلکہ اس میں انھیں مزا بھی آنے لگا ہے۔

راہل گاندھی کا مذاق اڑانے کے لیے سوشل میڈیا پر جو لطیفے گردش کرتے رہے ہیں، ان میں ہمیشہ صرف ایک ہی پیغام ہوتا ہے اور وہ یہ کہ وہ احمق ہیں اور سونیا گاندھی کی انگلی پکڑ کر ہی چل سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر سونیا گاندھی ان کے جوتوں کے سامنے 'ٹی جی آئی ایف' کیوں لکھتی ہیں؟ انھیں یہ یاد دلانے کے لیے کہ 'ٹوز گو ان فرسٹ' یعنی جب جوتے پہننے ہوں تو پہلے پنجا اندر ڈالیں!

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کانگریس پارٹی نے راہل گاندھی کی قیادت میں گجرات میں بڑی پیش رفت کی ہے

یا جب وہ ہاتھ دھونے کے لیے واش روم گئے تو بیسن دھو کر کیوں باہر آئے؟ کیونکہ اندر لکھا تھا : واش بیسن!

یہ لطیفے خود بہ خود نہیں بنتے، ایک خاص مقصد سے بنائے جاتے ہیں جس کا ذکر خود راہل گاندھی اور سونیا گاندھی نے بھی کیا ہے۔

لیکن جس انداز میں انھوں نے گجرات کے نتائج آنے سے پہلے پارٹی کے صدر کا عہدہ سنبھالا اور جس طرح ریاست میں انتخابی مہم کی قیادت کی، اس سے یہ واضح پیغام ملتا ہے کہ اب ان کی جز وقتی سیاست کا دور ختم ہوگیا ہے۔ آخرکار وہ اپنی زیادہ پر کشش بہن پرینکا گاندھی اور والدہ سونیا گاندھی کے سائے سے باہر آنے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

٭ گجرات میں راہُل گاندھی فیل ہوئے نہ مودی

٭ کیا راہُل گاندھی مودی کے لیے سیاسی خطرہ ہیں؟

انتخابی نتائج آنے کے بعد اب شاید ہی کوئی ہو جو یہ نہ مانتا ہو کہ راہل گاندھی ہی نریندر مودی کے اصل چیلنجر بن کر ابھرے ہیں۔ دونوں کی مقبولیت میں اب بھی بہت فرق ہے، 'برانڈ مودی' کا پرچم اب ملک کی 19 ریاستوں میں لہرا رہا ہے، لیکن فی الحال قومی سطح پر اس ریس میں صرف دو ہی لوگ دوڑ رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption گجرات انتخابات کے نتائج سے قبل راہل گاندھی نے کانگریس کے صدر کا عہدہ سنبھالا ہے

راہل گاندھی اب ایک ایسے لیڈر کے طور پر ابھر سکتے ہیں جن کے ارد گرد وہ علاقائی جماعتیں متحد ہونے کے لیے تیار ہوسکتی ہیں جو بنیادی طور پر بی جے پی کے نظریاتی ایجنڈے سے اختلاف کرتی ہیں۔ مثال کے طور پر اتر پردیش میں سماج وادی پارٹی کے لیڈر اکھیلیش یادو، بہار میں سابق وزیر اعلی لالو پرساد یادو اور مغربی بنگال میں ممتا بینرجی۔۔۔

یہ بھی پڑھیں

٭ کیا ہندوتوا کے راستے کانگریس واپس آ سکتی ہے؟

٭ راہول مذہبی کتابیں کیوں پڑھ رہے ہیں؟

ملک میں آئندہ برس چار بڑی ریاستوں میں الیکشن ہونے ہیں اور چاروں میں ہی بی جے پی اور کانگریس کے درمیان براہ راست مقابلہ ہوگا۔ گجرات تو وزیر اعظم نریندر مودی کا مضبوط قلعہ ہے، لیکن کرناٹک، مدھیہ پردیش، راجستھان اور چھتیس گڑھ ایک طرح سے 'نیوٹرل' گراؤنڈ ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ INCINDIA
Image caption انتخابی نتائج آنے کے بعد اب شاید ہی کوئی ہو جو یہ نہ مانتا ہو کہ راہل گاندھی ہی نریندر مودی کے اصل چیلنجر بن کر ابھرے ہیں

ان انتخابات سے طے ہوگا کہ قومی سیاست کیا رخ اختیار کرے گی۔ اگر کانگریس کرناٹک میں اپنی حکومت بچا لیتی ہے یا باقی تین ریاستوں میں کچھ اس طرح کا مقابلہ کرتی ہے جیسا گجرات میں دیکھا گیا تو پھر کچھ بھی ہوسکتا ہے۔

گجرات کے الیکشن کو ریاستی اسمبلی کے تناظر میں دیکھنا غلط ہوگا، یہاں سے 2019 کے پارلیمانی انتخابات کے لیے نئے راستے کھلے ہیں، اور جیسا کسی نے لکھا ہے: 'یہ الیکشن جیتنے والا دوسرے نمبر پر رہا۔'

اسی بارے میں