ایران میں مظاہروں پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اہم اجلاس طلب

ایران تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل نے جمعے کو ایران میں گذشتہ دنوں ہونے والے حکومت مخالف مظاہروں پر تبادلۂ خیال کے لیے امریکی درخواست پر اجلاس بلایا ہے۔

دوسری جانب روس کے مقامی ذرائع ابلاغ نے وزیر خارجہ کے حوالے سے کہا ہے کہ ماسکو ایران کے مسئلے پر بحث کے لیے بلائے جانے والے سلامتی کونسل کے غیر معمولی اجلاس کی امریکی تجویز کو ’نقصان دہ اور تباہ کن‘ سمجھتا ہے۔

تاحال یہ واضح نہیں کہ سلامی کونسل کے دیگر ارکان اس اجلاس کو پروسیجرل ووٹ کے ذریعے بلاک کرنے کی کوشش کریں گے یا نہیں۔

اس بارے میں مزید پڑھیے

ایران کا اقوام متحدہ کو خط: امریکہ پر'گھناؤنی' مداخلت کا الزام

ایران میں 'بغاوت' کو شکست دے دی گئی ہے: پاسداران انقلاب

ایرانی عوام سڑکوں پر کیوں؟

'ایران نے میزائل تجربہ نہیں کیا'، ٹرمپ کا جھوٹی خبر پر ٹویٹ

ادھر امریکہ نے ایران کے بیلسٹک میزائل پروگرام میں مالی مدد فراہم کرنے والی پانچ کمپنیوں پر پابندیاں عائد کر دی ہیں۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ یہ کمپنیاں ایران کے بیلسٹک میزائل پروگرام میں مالی مدد کر رہی ہیں۔

ان پابندیوں کے تحت ایرانی کمپنیوں کی امریکہ میں موجود کسی بھی جائیداد کو منجمند کر دیا جائے گا۔ اس حوالے سے امریکیوں کو ان کمپنیوں کے ساتھ کسی بھی ڈیل کرنے سے منع کر دیا گیا۔

امریکی وزیر خزانہ سٹیون منوشن نے اس تحریک کو ایران میں حالیہ احتجاج سے پھیلنے والے اقتصادی مسائل سے منسلک کیا ہے۔

انھوں نے ایک بیان میں کہا کہ ’ہم ایرانی حکومت کی اقتصادی بد انتظامیوں کو ظاہر کرنے میں ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کریں گے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ’یہ پابندیاں ایران کے بیلسٹک میزائل پروگرام میں ملوث اہم اداروں پر مبنی ہیں جنھیں ایرانی حکومت عوام کی معاشرتی خوشحالی پر فوقیت دیتی ہے۔‘

امریکی وزیرِ خزانہ نے ایرانی حکومت پر الزام لگایا کہ ’وہ اپنے شہریوں کے پیسوں کو خطرناک میزائل سسٹم پر خرچ کر رہا ہے۔‘

امریکی وزارتِ خزانہ کا کہنا ہے کہ جن پانچ کمپنیوں کو بلیک لسٹ کیا گیا ہے وہ ایران کے شاہد بیکری انڈسٹریل گروپ کی ماتحت ہیں جو بیلسٹک میزائلوں کو بنانے کی ذمہ دار ہے۔

جن پانچ ایرانی کمپنیوں پر پابندیاں عائد کی گئی ہیں ان کے نام یہ ہیں:

1 دی شایداسلامی ریسرچ سینٹر

2 شاہد کرزئی انڈسٹریز

3 شاہد موغادھم انڈسٹریز

4 شاہد سنخانی انڈسٹریز

5 شاہد شستری انڈسٹریز

امریکہ کا کہنا ہے کہ ایران کی جانب سے گذشتہ سال ٹیسٹ کیے جانے والے بیلسٹک میزائل اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرار داد کے منافی ہیں جس کے تحت ایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان سنہ 2015 میں معاہدہ ہوا تھا۔

تاہم ایران کا کہنا ہے کہ اس نے جو میزائل تجربہ کیا تھا وہ جوہری وار ہیڈ لے جانے کی صلاحیت نہیں رکھتے اور اس کا جوہری پروگرام مکمل طور پر پرامن ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں