’انڈیا سرحدی تنازعات کو پیچیدہ کرنے سے گریز کرے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

چین نے انڈیا کے وزیر اعظم نریندر مودی کے اروناچل پردیش کے دورے پر سخت احتجاج کیا ہے۔ چین کی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ انڈیا ایسے اقدامات سے گریز کرے جن سے دونوں ملکوں کے سرحدی تنازعات مزید پیچیدہ ہوں۔

وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ وہ اس دورے کے خلاف انڈیا سے سفارتی سطح پر احتجاج کرے گا۔

انڈیا نے شمال مشرقی خطے میں واقع ارونا چل پردیش کو اسّی کے عشرے میں انڈیا میں ایک ریاست کے طور پر ضم کر لیا تھا۔ چین کا کہنا ہے کہ یہ خطہ چین کا ہے جس پر انڈیا نے ناجائز طریقے سے قبضہ کر لیا ہے۔

اسی بارے میں

’کہیں چین جانے کا ارادہ تو نہیں‘

سرحدی تنازع: انڈیا کو بات چیت کی امید، چین کا انکار

انڈیا اور چین کی سرحد پر کون کیا تعمیر کر رہا ہے؟

نامہ نگار شکیل اختر کے مطابق وزیر اعظم نریندر مودی جمعرات کو ارونا چل پردیش کے دورے پر تھے۔ ان کے دروے سے قبل انڈیا کی وزارت خارجہ نے کہا تھا کہ ارونا چل پردیش انڈیا کا اٹوٹ حصہ ہے اور انڈین رہنماؤں کا ریاست کا دورہ کرنا کوئی نئی بات نہیں ہے۔

چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان گینگ شوانگ نے بیجنگ میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ 'چین کی حکومت نے نام نہاد ارونا چل پردیش کو کبھی تسلیم نہیں کیا ہے۔ ہم انڈین رہنماؤں کے اس متنازع خطے کے دورے کی سختی سے مخالفت کرتے ہیں'۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان گینک نے کہا کہ چین اور انڈیا نے اپنے تنازعات کوحل کرنے کے طریقہ کار سے اتفاق کیا ہے اور دونوں ممالک بات چیت اور مذاکرات کے ذریعے اپنے سرحدی تنازعے حل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انھوں نے کہا 'چین انڈیا پر زور دے گا کہ وہ اپنے وعدے پر عمل کرے اور دونوں ملکوں کے درمیان طے پائے متققہ طریقۂ کار پر عمل کا پابند رہے۔ ہمیں امید ہے کہ انڈیا ایسا کوئی قدم نہیں اٹھائے گا جس سے سرحدی تنازعات مزید پیچیدہ ہوں'۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

وزیر اعظم نریندر مودی نے اس سے پہلے فروری 2015 میں اروناچل پردیش کا دورہ کیا تھا۔ اس وقت بھی چین نے سخت ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس طرح کے دورے سے سرحدی تنازعے کوحل کرنے میں مدد نہیں ملے گی۔

انڈیا نے حال میں چین پر اپنا دباؤ بڑھانے کی کوشش کی ہے۔ گذشتہ برس ملک کی وزیر دفاع نرملا سیتا رمن اور تبت کے جلا وطن روحانی رہنما دلائی لامہ نے بھی ریاست کا دورہ کیا تھا۔ چین نے ان دوروں کو اشتعال انگیزقرار دیا تھا۔

دونون ملکوں کے درمیان 3488 کلومیڑ لمبی سرجد پر کئی جگہ تنازعات ہیں۔ دونوں ممالک ان تنازعات کو حل کرنے کے لیے بیس مرتبہ مذاکرات کر چکے ہیں لیکن ابھی تک کوئی قابل ذکر پیش رفت نہیں ہو سکی ہے۔ چند مہینے قبل انڈیا بھوٹان اور تبت کی سرحد پر ڈوکلام کے علاقے میں انڈیا اور چین کے فوجی ایک سڑک کی تعمیر کے سوال پر ایک دوسرے کے مقابل کھڑے تھے اور خطے میں زبردست کشیدگی پیدا ہوگئی تھی۔ بین الاقوامی ماہرین کا کہنا ہے کہ آنے والے دنوں میں انڈیا اور چین کے درمیان سرحدی کشیدگی مزید شدت اختیار کرے گی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں