’رضا شاہ پہلوی کو ایران ہی میں دوبارہ احترام کے ساتھ دفن کیا جائے‘

پہلوی تصویر کے کاپی رائٹ TASNIMNEWS

ایرانی حکام کا کہنا ہے کہ شھرری میں شاہی مقبرے کی جگہ کھدائی کے دوران حنوط شدہ لاش ملی ہے جس سے یہ خبریں گردش کرنے لگ گئی ہیں کہ یہ حنوط شدہ لاش پہلوی خاندان کے بانی رضا شاہ پہلوی کی ہے۔

حنوط شدہ لاش کی دریافت کے بعد رضا شاہ پہلوی کے پوتے اور ایران کے آخری ولی عہد رضا پہلوی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ حنوط شدہ لاش جو شھرری سے دریافت ہوئی ہے وہ ان کے پڑدادا کی ہے۔

’تمام شواہد کا جائزہ لینے کے بعد ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں جو حنوط شدہ لاش شھرری سے ملی ہے وہ عین ممکن ہے کہ رضا شاہ کی ہو۔‘

ایرانی میڈیا کے مطابق پیر کو شھرری میں عبدالعزیم کے مزار کے قریب کھدائی میں ایک لاش ملی ہے جو کہ ممکنہ طور پر رضا شاہ پہلوی کی ہو سکتی ہے۔

اس حنوط شدہ لاش کی جو تصاویر سوشل میڈیا اور مقامی میڈیا میں شائع کی گئی ہیں ان میں اس لاش کی مماثلت ان تصاویر سے بہت زیادہ ہیں جب رضا شاہ پہلوی کی لاش ایران لاتے وقت کھینچی گئی تھیں۔

ایران کے آخری ولی عہد رضا پہلوی نے ایرانی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ’خاندان کو اس لاش تک رسائی دی جائے اور خاندان کے تجویز کردہ ڈاکٹروں اور ماہرین کی ٹیم کو اس لاش کا جائزہ کرنے کی اجازت دی جائے تاکہ اس لاش کی حتمی تصدیق ہو سکے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

رضا پہلوی نے اپنے بیان میں مزید کہا ہے کہ رضا شاہ پہلوی کو ایران ہی میں دوبارہ دفن کیا جائے اور احترام کے ساتھ۔ ان کو دوبارہ ایران میں اگر جدید ایران کے بانی یا بادشاہ کے طور پر دفن نہیں کرنا تو کم از کم ایرانی عوام کے ایک عام سپاہی اور خادم کے طور پر دفن کیا جائے۔ رضا شاہ پہلوی کی قبر پر باقاعدہ نشانی ہو تاکہ ایرانی عوام کو معلوم ہو کہ یہاں کون دفن ہے۔‘

رضا شاہ پہلوی کی حنوط شدہ لاش؟

بی بی سی فارسی کے مطابق جس صحافی نے حنوط شدہ لاش کی دریافت کی خبر شائع کی تھی ان کا کہنا ہے کہ یہ لاش ایک پکے احاطے کے اندر سے دریافت ہوئی ہے۔

اس لاش کے ساتھ تلوار کی قسم کی چند اشیا بھی دریافت کی گئی ہیں۔

یاد رہے کہ جب رضا شاہ پہلوی کو ایران میں دفن کیا گیا تھا اس وقت کی تصاویر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ان کو فوجی لباس پہنایا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Social Media

اس خبر کے بعد متضاد خبریں سامنے آ رہی ہیں کہ آیا یہ لاش اب بھی شھرری کے شاہی مقبرے کی جگہ پر ہی ہے یا اس کو وہاں سے نکال کر کہیں اور منتقل کر دیا گیا ہے۔

اس خبر کے سامنے آنے کے بعد نیوز چینل ہیریٹیج ہاؤس نے شھرری سے ملنے والی لاش کی تصاویر نشر کیں۔ نیوز چینل کا کہنا ہے کہ اس لاش کی تصاویر سے تقویت ملتی ہے کہ یہ لاش رضا شاہ پہلوی ہی کی ہے۔

تاہم عبدالعزیم کے مزار کے منتظمین کا کہنا ہے کہ رضا شاہ پہلوی کی لاش ملنے کی خبروں میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

تہران سٹی کونسل کے ممبر حسن خلیل عابدی جو ہریٹیج اور کلچرل افیئرز کی کمیٹی کے سربراہ بھی ہیں نے اثنا نیوز ایجنسی کو بتایا کہ ’چاہے یہ لاش کسی کی بھی ہو لیکن اس حنوط شدہ لاش کو محفوظ رکھنا ضروری ہے۔‘

تہران سٹی کونسل کے ایک ممبر نے بتایا کہ یہ لاش عبدالعزیم کے مزار کے مغربی حصے میں کھدائی کے دوران ملی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ .

رضا شاہ پہلوی کا مقبرہ

رضا شاہ پہلوی کا مقبرہ عبدالعزیم کے مزار کے ساتھ بنایا گیا تھا۔ اس مقبرے کو ایران میں انقلاب کے آغاز میں صادق خلخیلی نے تباہ کروایا تھا۔

صادق خلخیلی کو آیت اللہ خمینی نے انقلابی عدالت کا سربراہ مقرر کیا تھا۔ صادق خلخیلی نے اپنی یادداشت میں لکھا تھا کہ ان کو حیرت ہے کہ رضا شاہ کے مقبرے کی تباہی کے وقت ان کو اس میں لاش نہیں ملی تھی۔

رضا شاہ پہلوی دوسری جنگ عظیم میں الائیڈ فورسز کی جانب سے ایران پر قبضے کے بعد ایران چھوڑ گئے تھے اور کئی سالوں بعد ان کا انتقال جنوبی افریقہ میں جلا وطنی میں ہوا۔

ان کی لاش کو کچھ عرصہ مصر میں رکھا گیا لیکن تقریباً 70 سال قبل ان کی لاش کو کعبہ کا طواف کروا کر تہران لایا گیا۔ ان کی لاش کو شھرری میں دفن کیا گیا۔

رضا شاہ پہلوی کو 17 مئی 1944 میں شھرری میں مقبرے میں دفن کیا گیا۔ اس مقبرے کو آرکیٹیکچر کے پرفیسر اور یونیورسٹی آف تہران میں فائن آرٹس کے سربراہ محسن فروغی نے ڈیزائن کیا۔

یاد رہے کہ جنوری 1979 یعنی انقلاب سے ایک ماہ قبل ایران میں افواہیں پھیل گئی تھیں کہ رضا شاہ پہلوی اپنے والد کی لاش کے ہمراہ ملک سے فرار ہو گئے ہیں۔ تاہم رضا شاہ پہلوی کی اہلیہ فرح پہلوی نے اس خبر کی تردید کی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ FARS

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں