تصاویر: انڈیا میں دنیا کے سب سے طویل القامت مجسمے کی تعمیر

یہ مجسمہ انڈیا کی تحریک آزادی کے رہنما سردار پٹیل کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے تعمیر کیا جا رہا ہے تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہ مجسمہ انڈیا کی تحریک آزادی کے رہنما سردار پٹیل کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے تعمیر کیا جا رہا ہے

انڈیا میں دنیا کا سب سے طویل القامت مجسمہ تعمیر کے آخری مراحل میں ہے۔

ریاست گجرات میں انڈیا کی جدوجہد آزادی کے ہیرو سردار ولبھ بھائی پٹیل کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے ان کا تقریباً 182 میٹر (600 فٹ) اونچا مجسمہ تعمیر کیا جا رہا ہے۔

اس وقت دنیا کا سب سے بڑا مجسمہ چین میں سپرنگ ٹمپل بدھا کا ہے جس کی اونچائی 138 میٹر ہے۔

اس منصوبے پر تقریباً 29.9 ارب انڈین روپے لاگت آئی ہے اور اس کو وزیراعظم نریندر مودی کی ذاتی دلچسپی پر مشتمل منصوبے کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ اسے 'اتحاد کا مجسمہ' کہا جا رہا ہے اور اس کی انڈین وزیراعظم 31 اکتوبر کو نقاب کشائی کریں گے۔

ہندو قوم پرست رہنما سردار پٹیل کا انتہائی احترام کرتے ہیں تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کئی ہندو قوم پرست رہنما سردار پٹیل کا بہت زیادہ احترام کرتے ہیں

انڈیا کی سنہ 1947 میں آزادی کے بعد ولبھ بھائی پٹیل ملک کے پہلے ڈپٹی وزیراعظم بنے تھے۔

آزادی کے بعد شورش زدہ ریاستوں کو متحد اور انڈیا میں ضم کرنے کی وجہ سے انھیں 'آئرن مین آف انڈیا' کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔

سردار پٹیل کے سیاسی کردار کو ہندو قوم پرست رہنماؤں نے انتخابی مہم کا حصہ بھی بنایا تھا تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سردار پٹیل کے سیاسی کردار کو ہندو قوم پرست رہنماؤں نے انتخابی مہم کا حصہ بھی بنایا تھا

بہت سے ہندو قوم پرستوں کا خیال ہے کہ تاریخ میں ان کے مقام کو نہرو خاندان کے مقابلے میں زیادہ اہمیت نہیں دی گئی۔ خیال رہے کہ نہرو خاندان انڈین سیاست کا اہم حصہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں!

لکھنؤ صرف انڈیا ہی میں نہیں ہے!

تقسیمِ برصغیر کے 70 سال: آپ کیا جانتے ہیں؟

انڈین ریاست میں مغل تاریخ خارج

’تاج محل مغل لٹیروں کی نشانی ہے‘

سنہ 2013 میں اپنی انتخابی مہم کے دوران نریندر مودی کا کہنا تھا کہ 'ہر انڈین کو افسوس ہے کہ سردار پٹیل پہلے وزیراعظم نہیں بنے۔'

اس مجسمے کی تعمیر سنہ 2013 میں شروع ہوئی تھی اور مکمل ہونے کے بعد کانسی سے مزین یہ مجسمہ نیویارک کے سٹیچیو آف لبرٹی سے لمبائی میں دگنا ہوگا۔

یہ امید کی جا رہی ہے کہ یہ جگہ اہم سیاحتی مقام بن جائے گی۔

یہ مجسمہ ریاست گجرات کے دور دراز مقام پر تعمیر کیا جا رہا ہے تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہ مجسمہ ریاست گجرات کے دور دراز مقام پر تعمیر کیا جا رہا ہے

اس مجسمے کو بلندی سے دیکھنے کے لیے اس کے قریب ایک گیلری بھی تعمیر کی جارہی ہے جس کی اونچائی 153 میٹر ہوگی۔

مجسمے کو دیکھنے کے لیے ایک الگ سے مینار بھی تعمیر کیا جا رہا ہے تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مجسمے کو دیکھنے کے لیے ایک الگ سے مینار بھی تعمیر کیا جا رہا ہے

یہ مجسمہ ریاستی دارالحکومت احمد آباد سے 200 کلومیٹر فاصلے پر واقع ہے۔

اس مجسمے کی تعمیر میں ہزاروں مزدور حصہ لے رہے ہیں تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اس مجسمے کی تعمیر میں ہزاروں مزدور حصہ لے رہے ہیں

اس مجسمے کی تعمیر کے لیے 2500 سے زائد افراد کام کر رہے ہیں جن میں کئی سو چینی مزدور بھی شامل ہیں۔

ہندو قوم پرست رہنما سردار پٹیل کا انتہائی احترام کرتے ہیں تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کئی ہندو قوم پرست رہنما سردار پٹیل کا بہت زیادہ احترام کرتے ہیں

۔

اسی بارے میں