انڈیا کا زیر انتظام کشمیر: منان وانی کی ہلاکت، سکالر سے باغی

تصویر کے کاپی رائٹ facebook
Image caption منان وانی علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی پروگرام ادھورا چھوڑ کر انڈیا کے زیرانتظام کشمیر چلے گئے

کپوارہ کی لولاب ویلی سے تعلق رکھنے والے 26 سالہ منان وانی کو قریب سے جاننے والے بھی گذشتہ برس جنوری میں حیران ہوگئے جب انہوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی پروگرام ادھورا چھوڑ کر انڈیا کے زیرانتظام کشمیر کی راہ لی اور یہاں مسلح ہوکر سوشل میڈیا پر اعلان کردیا کہ وہ حزب المجاہدین میں شامل ہوگئے ہیں۔

منان وانی کا آبائی ضلع کپوارہ لائن آف کنٹرول کے قریب واقع ہونے کے باعث فوجیوں سے بھرا ہوا ہے۔

وہ سائنس کے طالب علم تھے لیکن تاریخ، مذاہب اور سیاسی مزاحمت سے متعلق بھی وسیع مطالعہ رکھتے تھے۔ وہ اپنے مضامین میں امریکی شہری حقوق کے رہنما میلکم ایکس اور دیگر سیاہ فام مزاحمتی رہنماؤں کے حوالے دیا کرتے تھے۔

انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں ہونے والی شدت پسندی کے بارے میں مزید پڑھیے

کشمیر: شوپیاں ’شدت پسندی‘ کا مرکز کیوں بن رہا ہے؟

کشمیر: ریاست کے پاس کوئی راستہ نہیں

’ہمیں نہ انڈیا چاہیے، نہ ہی پاکستان‘

پی ایچ ڈی میں منان وانی کی تحقیق کا موضوع اپنے آبائی قصبہ لولاب کی ارضیاتی خصوصیات سے متعلق تھا۔

منان وانی مسلح گروپ میں شمولیت سے قبل تقریر و تحریر میں کافی سرگرم تھے۔ وہ سٹوڈنٹ اکٹیوزم میں پیش پیش تھے۔

انھوں نے کئی طویل مضامین لکھے، جن کی اشاعت پر انڈیا کے زیرانتظام کشمیر کی مقامی نیوز ایجنسی کرنٹ نیوز سروس کے خلاف پولیس میں مقدمہ بھی درج ہوا اور سروس کی ویب سائٹ سے منان کا مضمون بھی ہٹایا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption منان وانی کی ہلاکت کے بعد انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں کشیدگی بڑھ گئی ہے اور انڈین سیکورٹی اہلکار جگہ جگہ چیکنگ کر رہے ہیں

انہیں چند سال قبل بھوپال یونیورسٹی میں عالمی کانفرنس کے دوران بہترین مقالہ کے لیے ایوارڈ دیا گیا تھا، اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی ویب سائٹ کے مطابق وہ نہایت خالص خیالات پر مبنی تحقیق کے قائل تھے۔

انھوں نے ہتھیاروں کی کوئی باقاعدہ تربیت نہیں حاصل کی تھی لیکن ان کے دانشورانہ قد کی وجہ سے انہیں حزب میں کمانڈر کی حیثیت سے شامل کیا گیا۔

منان اُس طویل فہرست میں شامل ہوگئے ہیں جس میں ایسے متعدد اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان ہیں جنہوں نے اپنے کیرئیر کو ادھورا چھوڑ کر بندوق تھام لی۔

منان وانی کی تحریروں سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ موجودہ قدغنوں سے ہی نہیں بلکہ کشمیر سے متعلق تاریخ کو فراموش کروانے کی سرکاری کوششوں پر نالاں تھے۔

ان میں سے ایک مضمون میں منان لکھتے ہیں: 'کالج اور یونیورسٹی کے اساتذہ کی نگرانی کرنے کے لیے جاسوس معمور کیے گئے ہیں، طلبا کے لیے اظہار رائے پر پابندی ہے اور ان کے بھی پیچھے جاسوس لگے ہیں، پوری آبادی محصور ہے، قوانین بنائے جاتے ہیں تاکہ سرکاری ملازمین حکومت کی پالیسیوں کی تنقید نہ کرسکیں، اس ساری صورتحال پر وہ لوگ کیا کہیں گے جو سمجھتے ہیں کہ جموں کشمیر بھارت کا حصہ ہے۔'

منان وانی کی ہلاکت کے بعد انڈیا کے زیرانتظام کشمیر میں وہ سب نہیں ہوا جو دو سال قبل برہان وانی کی ہلاکت کے بعد ہوا تھا۔ برہان کی ہلاکت نے وہاں احتجاج، مسلح مزاحمت اور مظاہروں کی نئی تحریک چھیڑ دی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption منان وانی کا آبائی ضلع کپوارہ لائن آف کنٹرول کے قریب واقع ہونے کے باعث فوجیوں سے بھرا ہوا ہے

لیکن منان کی ہلاکت پر نہ صرف ہندنواز حلقے پریشان ہیں بلکہ سیکورٹی اداروں کے بعض افسروں کو بھی خدشہ ہے کہ تعلیم یافتہ نوجوانوں میں بغاوت کی لہر پیدا ہوسکتی ہے۔

سابق وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی نے منان کی ہلاکت کو قومی نقصان قرار دیا۔ آئی اے ایس افسر شاہ فیصل نے ٹویٹ کیا: 'منان وانی ایک نوجوان قائد تھا۔ ہمیں اس کی ضرورت تھی، کاش اس نے تشدد کا راستہ اختیار نہ کیا ہوتا۔ کیا ہوگا اگر وہ سب لوگ جو کشمیر پر مرنا چاہتے ہیں جینے کا فیصلہ کریں۔ کوئی تو بات کرے، اس جنگ کو ختم ہونا ہوگا۔'

کپوارہ کے رکن اسمبلی انجنئیر رشید نے اپنے ردعمل میں کہا :'منان کی قلم بندوق سے خاموش کردی گئی، اور اس طرح نئی دلی نے منان کے قیمتی افکار کے آگے سرینڈر کردیا۔'

خفیہ پولیس کے ایک افسر نے بتایا: 'منان وانی کی ہلاکت بے شک ایک بڑی کامیابی ہے۔ لیکن اس ہلاکت کے بعد منان کی شخصیت اور ان کا نصابی ریکارڈ تعلیمی اداروں میں بغاوت کے بیچ بوئے گا، جو ہمارے لئے تشویش کی بات ہے۔'

واضح رہے دو سال قبل برہان وانی کی ہلاکت کے بعد سے اب تک متعدد تعلیم یافتہ نوجوانوں اور سکالرز سمیت 600 نوجوان مسلح ہوکر بھارتی فورسز کے خلاف برسرپیکار ہوگئے ہیں جن میں سے اب تک کم از کم 300 عسکریت پسند مارے گئے ہیں۔

یہ سلسلہ اس قدر تشویشناک ہے کہ سابق وزیراعلی عمرعبداللہ نے بھی کہا کہ 'اب کشمیریوں کو پاکستان کی ضرورت نہیں' کیونکہ اب وہ پولیس اور فورسز اہلکاروں کی بندوق چھین کر جنگل میں پناہ لیتے ہیں اور فورسز پر حملے کرتے ہیں۔

کالم نگار اعجاز ایوب کہتے ہیں: 'یہ عسکریت پسندی عددی اور صلاحیتوں کے اعتبار سے بھارتی فورسز کے لیے بڑا چیلنج نہیں ہے لیکن فکری اعتبار سے یہ بھارت کی شکست ثابت ہورہی ہے کیونکہ اب ہندنواز حلقے بھی نئی دلی سے ناراض ہورہے ہیں، کجا کہ کوئی بھارتی موقف کا پرچار کرتا۔'

منان وانی کے پڑوسی اور دوست نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر بتایا: 'منان وانی اُس گھٹن کو محسوس کررہے تھے جو ہم سب کا مقدر بن گئی ہے۔ انہوں نے لکھنا چاہا لیکن وہاں بھی قدغن ۔ ان کا مسلح ہونا یہ دکھا رہا ہے کہ قلم روکوگے تو وہی قلم بندوق بن جائے گی۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں