انڈیا کے ایک مندر میں زہریلا کھانا کھانے سے 11 افراد ہلاک، درجنوں بیمار

Rice garnished with tomato slices at a food stall in India تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption عینی شاہدین کے مطابق لوگ کھانا کھاتے ہی الٹیاں کرنے لگے۔

انڈین ریاست کرناٹک میں پولیس کا کہنا ہے کہ مندر میں عبادت کے بعد دیا گیا کھانے کھانے سے کئی لوگوں کی حالت غیر ہوگئی جبکہ 11 افراد ہلاک ہو گئے۔

زہریلا کھا کھانے والے کم از کم 70 افراد کو ہسپتال کے جایا گیا ہے۔

پولیس کے ایک ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ 11 مریضوں کی حالت تشویش ناک ہے۔

اس واقعے کے بعد دو افراد کو حراست میں لیا گیا ہے۔ ایک طبی اہلکار نے میڈیا کو بتایا کہ شاید کھانا زہریلا تھا۔

اس تقریب میں شامل ایک شخص نے صحافیوں کو بتایا کہ ’ہمیں چاولوں اور ٹماٹروں سے بنا کھانا پیش کیا گیا تھا جس میں سے بُو آ رہی تھی۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Anurag Basavaraj
تصویر کے کاپی رائٹ Anurag Basavaraj
Image caption وزیر اعلی نے مریضوں کی خبر گری کی

’جب تمام لوگوں نے یہ کھانا پھینک دیا وہ ٹھیک ہیں جبکہ جنھوں نے کھایا انہیں پیٹ درد اور قے ہونے لگی۔‘

یہ وقعہ جمعے کو مندر میں ایک خصوصی تقریب کے دوران پیش آیا۔

یہ چاول اس مذہبی اجتماع کے بعد روایتی طور پر پیش کیے جاتے ہیں۔ ایک اور عینی شاہد نے بتایا کہ ’آج چڑھاوں کا دن تھا اور کئی لوگ قیریبی دیہاتوں سے آئے تھے۔`

کئی لوگوں نے اس واقعے پر صدمے کا اظہار کیا جن میں سابق انڈین وزیرِ اعظم ایچ ڈی دی گودا شامل ہیں۔

انھوں نے ٹویٹ کیا ’جن خاندانوں کے لوگوں کی جانںی گئی وہ اپنا ضبط قائم رکھیں تاکہ وہ اس تکلیف کو سہہ پائیں۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں