ایران میں ’سلطان آف بِچومن‘ کو رشوت و بدعنوانی کے جرم میں سزائے موت

تصویر کے کاپی رائٹ Iran State TV
Image caption حمید درمنی کے خلاف عدالتی کارروائی کو سرکاری ٹی وی پر دکھایا گیا

ایران میں ’سلطان آف بِچومن‘ کے نام سے مشہور کاروباری شخصیت حمید باقری درمنی کو رشوت اور بدعنوانی کے جرم میں موت کی سزا دے دی گئی ہے۔

انھیں قرضے حاصل کرنے کے لیے جعلی کاغذات جمع کرانے کے جرم کا مرتکب پایا گیا تھا۔ ان سرکاری قرضوں کے حصول کے لیے جعلی کاغذات بنانے کے بعد حمید درمنی نے جعلی کمپنیاں بنائیں جن کے ذریعے انھوں نے تین لاکھ ٹن سے زیادہ بِچومن حاصل کیا۔

یہ بھی پڑھیے

ایران کے ’سکوں کے سلطان‘ کا انجام کیا ہوا؟

ایران میں پیغامات کے لیے کرنسی نوٹوں کا استعمال

ایران نے ’دہری شہریت کے دسیوں جاسوس‘ گرفتار کر لیے

بِچومن اس کیمیائی مادے کو کہتے ہیں جس سے تارکول کی ایک قسم ایسفالٹ بنائی جاتی ہے۔ بِچومن سے ایسفالٹ بنانے کا کاروبار ایران میں سب سے زیادہ منافع بخش صنعتوں میں سے ایک ہے۔

49 سالہ درمنی وہ تیسرے کاروباری شخص ہیں جنھیں اِس برس شروع کی جانے والی انسداد بدعنوانی کی مہم کے دوران پھانسی دی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ TASNIM NEWS AGENCY/REUTERS
Image caption ایران میں 'سِکوں کا سلطان' کے نام سے کرنسی کا کاروبار کرنے والے تاجر واحد مظلومین کو غیر قانونی طریقے سے دو ٹن سونے کے سکے جمع کرنے پر پھانسی دے دی گئی تھی

گزشتہ ماہ کرنسی کا کاروبار کرنے والے ’سلطان آف کوائنز‘ یا سکّوں کے بادشاہ کو پھانسی دی گئی تھی۔ انھیں یہ سزا ناجائز ذرائع سے تقریباً دو ٹن سونے کے سِکّے جمع کرنے کے جرم میں دی گئی تھی۔

ایرانی عدلیہ کی نیوز ایجنسی ’میزان‘ کے مطابق حمید درمنی نے ’دھوکہ دہی، جعلی دستاویزات اور رشوت‘ کے ذریعے جو بِچومن حاصل کیا تھا، اس کی مالیت ایک سو ملین ڈالر سے زیادہ تھی۔ انھیں اگست 2014 میں گرفتار کیا گیا تھا۔

حمید درمنی کی پھانسی کو ایران کے سرکاری ٹی وی پر ڈرامائی انداز میں دکھایا گیا جس میں ایکشن فلموں جیسا ساؤنڈ ٹریک استعمال کیا گیا۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ سرکاری ٹیلی ویژن پر اس قسم کے مناظر دکھا کر حکام عوام کو دکھانا چاہتے ہیں کہ وہ ملک کی نازک معیشت سے ناجائز فائدہ اٹھانے والوں کو سزا دینے میں کس قدر سنجیدہ ہے۔

بدعنوانی کے مقدمات میں جلد از جلد فیصلوں کے لیے اسی برس اگست میں نئی ’انقلابی‘ عدالتیں بھی قائم کی گئی تھیں اور اب تک درجنوں تاجروں اور دیگر کاروبای افراد کو جیلوں میں ڈالا جا چکا ہے۔

ایرن میں بدعنوانی کے خلاف حالیہ مہم میں تیزی ایک ایسے وقت میں آئی ہے جب زیادہ تر لوگ مہنگائی اور بدعنوانی کی خبروں کی وجہ سے برہم ہیں۔

ایران میں مہنگائی میں اضافے کی ایک وجہ امریکہ کی جانب سے اِس کے خلاف زیادہ سخت پابندیاں عائد کرنے کا فیصلہ بھی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں