کانگریس پارٹی کی نریندر مودی پر کڑی تنقید: ’جب ملک شہیدوں کے ٹکڑے چن رہا تھا تو وزیرِ اعظم اپنے نعرے لگوا رہے تھے‘

مودی تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کانگریس کے ترجمان نے الزام لگایا ہے کہ مودی ’ووٹ لینے کے لیے شہیدوں کے کفن کے ساتھ تصویریں اور سیلفیاں لیتے‘ ہیں

انڈیا میں حزب اختلاف کی جماعت کانگریس نے وزیر اعظم نریندر مودی پر تنقید کرتے ہوئے الزام لگایا ہے کہ پلوامہ حملے کے بعد بھی وہ اپنی تشہیری مہم میں مگن تھے۔

کانگریس کے ترجمان رندیپ سورجیوالا نے جمعرات کو ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ پلوامہ حملے کے بعد وزیراعظم نے قومی سوگ کا اعلان اس لیے نہیں کیا کیونکہ انھیں اپنی حکومت کے مختلف منصوبوں کا افتتاح منسوخ کرنا پڑتا۔

دہلی میں نامہ نگار شکیل اختر کے مطابق انھوں نے کہا کہ مودی نے صحیح وقت پر مزمتی بیان بھی نہیں دیا تھا کیونکہ اس وقت وہ جم کاربٹ نشینل پارک میں ایک دستاویزی فلم کی شوٹنگ کر رہے تھے۔

’ملک شہیدوں کے ٹکڑے چن رہا تھا اور ہمارے وزیر اعظم اپنے نعرے لگوا رہے تھے۔‘

یہ بھی پڑھیے

ٹرمپ کا پاکستان، انڈیا کو مل بیٹھ کر مسائل حل کرنے کا مشورہ

انڈیا: پلوامہ حملے کا سیاسی فائدہ کس کو ہو گا؟

پلوامہ پر چین کی خاموشی کا کیا مطلب ہے؟

کانگریس کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ’کیا دنیا میں کوئی ایسی نکمی اور ناکارہ حکومت بھی ہے جس کے وزیر اعظم فوجیوں کی شہادت کے بعد فلم کی شوٹنگ کرتے رہیں؟ چائے،ناشتہ اڑاتے رہیں، اپنے نعرے لگواتے رہیں، ووٹ لینے کے لیے شہیدوں کے کفن کے ساتھ تصویریں اور سیلفیاں لیتے رہیں؟ کیا یہی ہے بی جے پی کی قوم پرستی؟ کیا یہی ہے مودی حکومت کی اصلیت؟'

سورجیوالا نے کہا کہ پلوامہ حملے کے حوالے سے مودی سرکار نہ کوئی سیاسی جواب دے رہی ہے اور نہ ہی اپنی ذمہ داری نبھا رہی ہے۔ ’آج ملک گہرے صدمے سے گزر رہا ہے۔ شہیدوں کی یادوں میں ڈوبا ہوا ہے۔ لیکن مودی جی دو دن کی غیر ملکی یاترا پر سیر سپاٹے کے لیے جنوبی کوریا پہنچ گئے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption وزیرِ اعظم نریندر مودی 21 فروری کو جنوبی کوریا میں گاندھی کے مجسمے کی رونمائی کرتے ہوئے

کانگریس پارٹی نے پلوامہ حملے کے بارے میں مودی سے پانچ سوالات کے جواب مانگے ہیں۔ ان میں یہ سوال بھی شامل ہے کہ مودی سرکار نے پلوامہ حملے سے 48 گھنٹے پہلے منظرِ عام پر آنے والے دہشت گرد تنظیم جیش محمد کے دھمکی آمیز ویڈیو بیان کو کیسے نظر انداز کیا؟

کانگریس نے حکومت سے یہ بھی جاننا چاہا ہے کہ مقامی دہشت گردوں کو سینکڑوں کلوگرام آر ڈی ایکس دھماکہ خیز مواد، ایم فور کاربائن رائفلیں اور راکٹ لانچرز کہاں سے ملے؟

کانگریس کے ترجمان نے بی جے پی کی ‎سخت گیر قوم پرستی کی پالیسی پر طنز کرتے ہوئے کہا ’مودی حکومت کے 56 مہینے کے دوران صرف (انڈیا کے زیرِ انتظام) جموں اور کشمیر میں ہمارے 488 جوان شہید ہوئے۔ مودی جی، ایسا کیوں؟‘

انھوں نے سوال کیا کہ حکومت بین اقوامی سرحد اور ایل او سی پر 5595 بار گولہ باری روکنے اور سرحد کی خلاف ورزیوں کو روکنے میں ناکام کیوں رہی؟

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزیرِ اعظم مودی 15 فروری کو اُتر پردیش میں ترقیاتی پراجیکٹ کی تقریبِ رونمائی میں شرکت کرتے ہوئے

سورجیوالا نے وزیر اعظم سے یہ بھی پوچھا کہ ’مودی جی، آپ اپنی، اپنے قومی سلامتی کے مشیر، وزیر داخلہ اور خفیہ ایجنسیوں کی ناکامی کی ذمہ داری کیوں نہیں لیتے؟'

یاد رہے کہ پلوامہ حملے کے بعد انڈیا میں غم و غصے کی لہر دوڑی تھی اور وزیر اعظم مودی نے قوم سے وعدہ کیا تھا کہ اس حملے کا جواب دیا جائے گا۔

اس وقت حزب اختلاف کی جماعتوں نے حکومت کے ساتھ اتحاد کا مظاہرہ کیا تھا، البتہ حملے کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ حزب اختلاف کی کسی پارٹی نے وزیر اعظم پر تنقید کی ہو۔

وزیرِ اعظم مودی اور بی جے پی کی جانب سے ان الزامات کا اب تک کوئی جواب نہیں دیا گیا۔

اسی بارے میں