بالاکوٹ کے نام پر انڈیا میں وائرل ہونے والی ویڈیو کی حقیقت کیا ہے؟

کرنل فیصل تصویر کے کاپی رائٹ SM Viral Post
Image caption وائیرل ویڈیو میں کرنل فیصل کو ایک بچے سے بات کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے

انڈیا میں سوشل میڈیا پر ایک ایسی ویڈیو گردش کر رہی ہے جس میں کہا جا رہا ہے کہ ایک پاکستانی کرنل نے بالاکوٹ میں انڈین فضائیہ کے حملے سے 200 عسکریت پسندوں کی ہلاکت کو قبول کر لیا ہے۔

انڈین فورسز نے پاکستان میں صوبہ خیبر پختونخوا کے علاقے بالاکوٹ میں 26 فروری کو ایک ہوائی حملہ کیا۔ ان کے مطابق یہ ایئر سٹرائیک پلوامہ میں خودکش حملے میں مارے جانے والے 40 انڈین نیم فوجی اہلکاروں کی ہلاکت کا بدلہ تھا۔

لیکن دونوں ممالک نے ان ہوائی حملوں سے متعلق مختلف بیانات دیے ہیں۔ پاکستان نے دعویٰ کیا ہے کہ اس حملے میں کوئی ہلاکتیں نہیں ہوئیں، جبکہ کئی انڈین وزرا نے کہا ہے کہ کاروائی میں 200 سے زائد عسکریت پسند مارے گئے۔

یہ بھی پڑھیے

بالاکوٹ حملے سے انڈیا نے کیا حاصل کیا؟

’292 شدت پسندوں کی ہلاکت‘ کی حقیقت کیا ہے؟

بالاکوٹ میں انڈین طیارے پاکستانی طیاروں سے کیسے بچے؟

20 سیکنڈ کی وائرل ویڈیو میں ایک شخص، جن کی شناخت کرنل فیصل کے نام سے ہوتی ہے، جنہیں ایک بچے سے بات کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

متعدد انڈین میڈیا نے بدھ کو یہ ویڈیو شیئر کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ایک پاکستانی فوجی افسر نے بالاکوٹ حملے میں 200 عسکریت پسندوں کی ہلاکتوں کو تسلیم کر لیا ہے۔

فیس بک پر کئی مقبول دائیں بازو کے گروپس نے اس ویڈیو کو ’انڈین ائیر فورس کے بالاکوٹ پر حملے کا ثبوت‘ کی عبارت کے ساتھ شئیر کیا۔

یونین وزیر گری راج سنگھ نے ویڈیو کو ٹویٹ کرتے ہوئے کہا ’پاکستان انڈین فوج کی بہادری پر رو رہا ہے۔ یہ ملک کے ان غداروں کے لیے گواہی ہے جو حملے کا ثبوت مانگ رہے ہیں۔‘

اس وائرل ویڈیو کو لاکھوں دفعہ یوٹیوب، فیس بک اور ٹوئٹر پر شئیر کیا گیا ہے۔

لیکن اس دعوے پر سنجیدہ سوال اٹھائے جا رہے ہیں۔

بی بی سی کی تحقیق کے مطابق ویڈیو میں نظر آنے والے پاکستانی فوجی افسر نے فضائی حملے میں ہونے والی 200 مبینہ ہلاکتوں کی تصدیق نہیں کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Nasrullah/Facebook
Image caption بی بی سی کی تحقیق کے مطابق ویڈیو میں نظر آنے والے پاکستانی فوجی افسر نے ائیر سٹرائیک میں ہونے والی 200 مبینہ ہلاکتوں کی تصدیق نہیں کی

ایک شخص کی ہلاکت

سینیئر پاکستانی صحافی رحیم اللہ یوسفزئی نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا ’ویڈیو میں فوجی افسر سے بات کرنے والے بوڑھے آدمی پشتو بول رہے ہیں جبکہ خیبر پختونخوا کے بالاکوٹ کے علاقے میں زیادہ تر ہندکو بولی جاتی ہے۔

انھوں نے یہ بھی کہا کہ ویڈیو میں سنی جانے والی آواز 200 میں سے ایک شخص کی ہلاکت کی بات کر رہی ہے۔

ویڈیو میں افسر کہتے ہیں ’ہم اسی لیے یہاں آئے ہیں کیونکہ ہم سب کا ایمان ہے کہ جو حکومتِ وقت کے ساتھ کھڑا ہو کر لڑائی کرتا ہے وہ جہاد ہے۔‘

پھر ایک اور آواز سنائی دیتی ہے ’یہ رتبہ اللہ کے کچھ خاص بندوں کو نصیب ہوتا ہے، ہر کسی کو نہیں ہوتا۔ کل 200 لوگ اوپر گئے تھے (پہاڑوں پر) لیکن صرف اس کے نصیب میں لکھی ہوئی تھی شہادت۔ ہم روزانہ چڑھتے ہیں، جاتے ہیں، آتے ہیں۔ یہ صرف اللہ کے خاص بندوں کو نصیب ہوتی ہے جس پر اس کی خاص نظر و کرم ہوتی ہے۔‘

یہ بات واضح نہیں ہوئی کہ آواز افسر کی ہے یا کسی اور شہری کی کیونکہ آواز کیمرے کے پیچھے سے آ رہی ہے۔ تاہم پاکستانی صحافیوں کا یہ خیال ہے کہ آواز کرنل فیصل کی ہی ہے، لیکن ویڈیو میں تکنیکی خرابی کے باعث اس کی آواز اور تصویر میں تال میل نہ ہونے کی وجہ سے یہ ظاہر نہیں ہو رہا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Farmanullah Khan/Facebook
Image caption پاکستان فوج کے ایک ترجمان نے کہا کہ یہ ویڈیو دیر زیریں کی ہے جو کہ بالاکوٹ سے تقریباً 300 کلومیٹر دور ہے

ویڈیو بالاکوٹ کی نہیں

اس ویڈیو کی سب سے پرانی پوسٹ فیس بک پر 1 مارچ 2019 کو کی گئی تھی۔

فیس بک پر دستیاب اردو کی پوسٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ یہ پاکستانی سپاہی احسان اللہ کی لاش ہے جو کہ مغربی خیبر پختونخوا کے ایک گاؤں سے ہے۔

پاکستان فوج کے ایک ترجمان نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ یہ ویڈیو دیر زیریں کی ہے جو کہ بالاکوٹ سے تقریباً 300 کلومیٹر دور ہے۔

اس واقعے سے متعلقہ ایک اور ویڈیو میں ہم نے سوشل میڈیا کے ذریعے تین لوگوں کی شناخت کی جن کے نام جاوید اقبال شاہین، فرمان اللہ خان اور خیشتہ رحمان درانی ہیں۔

تینوں افراد کی فیس بک پوسٹس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ برگیڈیئر حلیم اور کرنل فیصل متاثرہ خاندان سے ملنے ان کے گاؤں گئے تھے۔ تینوں افراد نے فیس بک پر یہ بھی لکھا ہے کہ ان کا تعلق دیر سے ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ SM Viral Post
Image caption ویڈیو میں فوجی افسر سے بات کرنے والے بوڑھے آدمی پشتو میں بول رہے ہیں جبکہ بالاکوٹ کے علاقے میں زیادہ تر ہندکو بولی جاتی ہے

پاکستان میں متضاد رائے

کئی پاکستانی میڈیا ویب سائیٹس نے اس ویڈیو کو جعلی کہہ کر انڈیا پر الزام لگایا ہے کہ وہ بالاکوٹ کے حملے میں ہلاکتیں ثابت کرنے کے لیے ایک اور جھوٹی ویڈیو کا استعمال کر رہے ہیں۔

لیکن ان ویب سائٹس پر دی گئی اطلاعات بھی غلط ہیں۔

ڈیلی پاکستان کے مطابق ’یہ ویڈیو پاکستانی سپاہی عبدالرّب کی ہے جو کہ ایک اور سپاہی نائیک خرم سمیت ایل او سی پر انڈین فورسز کی شیلنگ سے ہلاک ہوئے تھے۔‘

لیکن ریڈیو پاکستان کی ٹویٹ کے مطابق یہ دونوں سپاہی پنجاب کے ڈیرہ غازی خان سے تعلق رکھتے تھے۔

اسی بارے میں