سوشل میڈیا پر وائرل تصویر: ’یہ ابھینندن نہیں کوئی اور ہے‘

ابھینندن کی تصویر سمجھ کر شیئر کی جانے والی تصویر تصویر کے کاپی رائٹ SM VIRAL POST
Image caption اس تصویر کو ہزاروں مرتبہ شیئر کیا گیا ہے

سوشل میڈیا پر وِنگ کمانڈر ابھینندن ورتھمان سے مشابہت رکھنے والے ایک شخص کی تصویر وائرل ہوئی ہے جس کے ساتھ یہ دعویٰ کیا گیا ہے دراصل یہ پائلٹ ابھینندن ہیں جنھوں نے نہ صرف بی جے پی کی بھرپور حمایت کی ہے بلکہ وزیرِ اعظم نریندر مودی کو ووٹ بھی دیا ہے۔

وائرل ہونے والی تصویر کے ساتھ تحریر میں کہا گیا ہے کہ 'وِنگ کمانڈر ابھینندن ورتھمان نے کھل کر بی جے پی کی حمایت کی ہے اور وزیر اعظم نریندر مودی کو ووٹ بھی دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ موجودہ وقت میں مودی سے بہتر وزیر اعظم نہیں ہو سکتا۔ دوستوں! جہادیوں اور کانگریس کو بتا دیا جائے کہ وہ کسی بھی فوجی کو زندہ واپس نہیں لا سکتے'۔

یہ بھی پڑھیے

ابھینندن کی ڈرامائی گرفتاری کی کہانی

انڈین پائلٹ ابھینندن کو بھارتی حکام کے حوالے کر دیا گیا

’مونچھیں ہوں تو ابھینندن جیسی ورنہ نہ ہوں۔۔۔‘

فلائٹ لیفٹینٹ نچِکیتا کیسے واپس گئے تھے؟

تصویر کے کاپی رائٹ Pakistan Information Ministry, ISPR
Image caption 27 فروری کو پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں پاکستان کی فضائیہ نے ونگ کمانڈر ابھینندن کا طیارہ مار گرایا تھا

27 فروری کو پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں پاکستان کی فضائیہ نے وِنگ کمانڈر ابھینندن کا طیارہ مار گرایا تھا جبکہ انھیں گرفتار کر لیا گیا تھا تاہم بعد ازاں انھیں یکم مارچ کو واہگہ سرحد پر انڈین حکام کے حوالے کر دیا گیا تھا۔

بظاہر وائرل ہونے والی تصویر سے یہی لگتا ہے کہ ان کی مقبولیت کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اسے اب سیاسی مفاد کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔ دائیں بازو کے فیس بک گروپس جیسا کہ ’نیمو بھکت‘ اور ’مودی سینا‘ سے اس تصویر کو زیادہ شیئر کیا جا رہا ہے۔

اس تصویر کو فیس بک اور ٹوئٹر پر ہزاروں مرتبہ دیکھا اور شئیر کیا جا چکا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ SM Viral post
Image caption بی بی سی کی ٹیم نے ابھینندن اور وائرل ہونے والی تصویر میں موجود شخص کے خدوخال کا مشاہدہ کیا

بی بی سی کے وٹس ایپ صارفین نے بھی اس تصویر کی تصدیق کے لیے رابطہ کیا اور بی بی سی نے پتہ لگایا ہے کہ اس تصویر کے بارے میں کیے گئے دعوے بے بنیاد ہیں اور یہ تصویر وِنگ کمانڈر کی ہے ہی نہیں۔

حقیقت کیا ہے؟

پاکستان اور انڈیا کے درمیان حالیہ کشیدگی کے بعد یہ پائلٹ انڈیا میں ہیرو بن گئے ہیں اور ان کی موچھیں بھی اتنی مقبول ہوئیں کہ لوگ ان جیسی موچھیں رکھنے لگے۔

اس تصویر میں موجود شخص نے ابھینندن جیسی موچھیں رکھی ہوئی ہیں، دھوپ کا چشمہ اور بی جے پی کے نشان والا سکارف پہنا ہوا ہے۔

وائرل ہونے والی اس تصویر کے مشاہدے سے معلوم ہوتا ہے کہ انڈین فضائیہ کے پائلٹ اور تصویر میں موجود اس شخص کے چہرے کے خدوخال میں کافی مماثلت ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter search result

ابھینندن کے ہونٹوں کے نیچے بائیں جانب ایک تل ہے جو کہ تصویر میں نہیں دیکھا جا سکتا۔ تصویر میں موجود شخص کی دائیں آنکھ کے نیچے ایک تل ہے جبکہ ابھینندن کے نہیں ہے۔

تصویر میں اس شخص کے پیچھے ایک دکان ہے جس پر گجراتی زبان میں 'سموسہ سینٹر' درج ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ تصویر گجرات کی ہے اور اس ریاست میں ابھی عام انتخابات میں ووٹنگ نہیں ہوئی ہے۔

ابھینندن نے 27 مارچ کو سرینگر میں اپنے سکوارڈن کے ساتھ کام شروع کر دیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ڈاکٹروں نے انھیں کام پر واپس آنے سے پہلے چار ہفتے آرام کا مشورہ دیا تھا لیکن انھوں نے سرینگر میں اپنے سکواڈرن میں اپنی خدمات دوبارہ شروع کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

وہ ابھی بھی انڈین ائیر فورس میں خدمات سرانجام دے رہے ہیں اور فضائیہ کے قواعد کے 'دی ائیر فورس رولز 1969' کے مطابق کسی بھی افسر کو کسی بھی سیاسی تنظیم یا تحریک سے منسلک ہونے یا حمایت کی اجازت نہیں ہے۔

انڈین ائیر فورس کے ذرائع نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ یہ واضح ہے کہ تصویر میں موجود شخص ونگ کمانڈر ابھینندن نہیں ہے۔

لیکن یہ پہلی مرتبہ نہیں ہے کہ وہ فیک نیوز کا شکار ہوئے ہیں۔ ان کی رہائی کے چند ہی گھنٹوں میں سوشل میڈیا پر ان کے نام سے ایسے کئی اکاؤنٹ یہ دعویٰ کرتے دیکھے گئے تھے کہ وہ ابھینندن کا اکاؤنٹ ہے لیکن انڈین ائیر فورس کے ٹوئٹر اکاؤنٹ نے اس کی تردید کی تھی۔

اسی بارے میں