ایورسٹ پر بسا ’خیموں کا شہر‘

نیپال تصویر کے کاپی رائٹ PHURBA TENJING SHERPA

آج کل ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ میں ایک 'خیموں کا شہر' آباد ہے۔ اس موسم بہار میں 375 کوہ پیماؤں اور ان کے گائیڈوں سمیت تقریباً دو ہزار افراد ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ میں اکٹھے ہوئے ہیں۔

یہ بیس کیمپ ایورسٹ چوٹی کے جنوب میں سطح سمندر سے 5380 میٹر کے بلندی پر واقع ہے۔

نیپال تصویر کے کاپی رائٹ Kenton Cool
Image caption موسم بہار میں سیکڑوں کوہ پیما ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ کا رخ کرتے ہیں
Presentational white space
نیپال تصویر کے کاپی رائٹ TSHIRING JANGMU SHERPA
نیپال تصویر کے کاپی رائٹ TSHIRING JANGMU SHERPA
Presentational white space

چوٹی سر کرنے کے حتمی مرحلے سے پہلے کوہ پیما بیس کیمپ سے اوپر نیچے آتے جاتے رہتے ہیں تاکہ وہ اتنی بلندی پر آکسیجن کی کمی کے عادی ہوجائیں۔

نیپال تصویر کے کاپی رائٹ Kenton Cool
Presentational white space

اس سال نیپال کی حکومت نے سروے ڈیپارٹمنٹ کے حکام پر مبنی ایک ٹیم بھی بیس کیمپ بھیجی ہے تاکہ وہ ماؤنٹ ایورسٹ کی اونچائی کی تازہ پیمائش کر سکے۔

نیپال تصویر کے کاپی رائٹ Kenton Cool
Image caption ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ میں آباد خیموں کا شہر
Presentational white space

اس موسم بہار میں تقریباً 800 کوہ پیماؤں کو نیپال میں 30 مختلف ہمالیہ کی چوٹیاں سر کرنے کی اجازت ملی ہے۔ حکام کے مطابق ہر سال ایورسٹ سر کرنے کی اجازت طلب کرنے والے کوہ پیماؤں میں اضافہ ہو رہا ہے۔

نیپال
Presentational white space

گذشتہ ہفتے جب خلیجِ بنگال میں سمندری طوفان فانی آیا تھا تو اس کے باعث نیپال کے پہاڑوں پر بھی شدید برف باری ہوئی تھی۔ ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ کے بالائی حصے میں تیز ہواؤں کے باعث بہت سے خیمے بھی اڑ گئے تھے۔

نیپال تصویر کے کاپی رائٹ Tshiring Jangmu Sherpa
Presentational white space

کوہ پیماؤں سے محفوظ مقامات پر جانے کا کہا گیا تھا تا کہ وہ سمندری طوفان کے اثرات سے بچ سکیں۔ تاہم جلد ہی موسم صاف ہو گیا اور کوہ پیما ایک مرتبہ پھر اپنی چڑھائی کے لیے تیاری کرنے میں مصروف ہو گیے۔

نیپال تصویر کے کاپی رائٹ Kenton Cool

تمام تصاویر کے جملہ حقوق محفوظ ہیں۔

اسی بارے میں