برہان وانی کی برسی پر کشمیر میں سخت سکیورٹی، انٹرنیٹ معطل

برہان وانی تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption برہان وانی کو کشمیر کی نئی مسلح تحریک کا 'پوسٹر بوائے' کہا جاتا ہے

انڈیا کے زیرِ انتظام کشمیر میں علیحدگی پسند تنظیم حزب المجاہدین سے تعلق رکھنے والے نوجوان کمانڈر برہان وانی کی تیسری برسی کے موقعے پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔

بی بی سی کے نامہ نگار کے مطابق پیر کو برہان وانی کی برسی کے موقع پر علیحدگی پسند تنظیموں نے ہڑتال اور مظاہروں کی کال دی ہوئی ہے اور ماضی میں اس موقع پر سکیورٹی فورسز اور مظاہرین کے درمیان تصادم میں ہلاکتیں بھی ہوتی رہی ہیں۔

حکام نے کولگام سمیت جنوبی کشمیر کے چار اضلاع میں موبائل انٹرنیٹ سروس بھی معطل کر دی ہے جبکہ جموں کو سری نگر سے ملانے والی شاہراہ پر سکیورٹی اہلکاروں کی بڑی تعداد تعینات کی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

کشمیر:برہان وانی کی برسی پر مظاہرے، تین مظاہرین ہلاک

برہان وانی کی برسی پر کشمیر میں کرفیو اور انٹرنیٹ معطل

کشمیر: برہان کی برسی پر سخت سکیورٹی، اضافی نفری تعینات

برہان وانی کی برسی، ایل او سی پر فائرنگ میں سات ہلاک

برہان وانی کو کشمیر کی نئی مسلح تحریک کا 'پوسٹر بوائے' کہا جاتا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ برہان نے سوشل میڈیا کا استعمال کرکے مقامی نوجوانوں کو مسلح تشدد کی طرف مائل کیا۔

برہان کا تعلق پلوامہ ضلع کے ترال قصبے سے تھا۔ برہان ایک آسودہ حال خاندان سے تھے اور ان کے والد سکول ہیڈماسٹر ہیں۔

وہ آٹھ جولائی سنہ 2016 کو برہان وانی ککرناگ کے بم ڈورہ گاؤں میں ایک مسلح تصادم کے دوران اپنے دو ساتھیوں سمیت مارے گئے تھے۔ ان کی ہلاکت کے بعد کشمیر میں دو ماہ تک کرفیو نافذ رہا جبکہ مظاہروں اور مسلح مزاحمت کی ایک نئی لہر شروع ہوئی تھی۔

فوج نے آپریشن آل آؤٹ کے تحت ساڑھے تین سو سے زیادہ مسلح عسکریت پسند ہلاک کیے ہیں تاہم تصادم آرائیوں کے دوران لوگ محصور عسکریت پسندوں کو بچانے کے لیے مظاہرے کرتے ہیں اور ایسی صورتحال میں اکثر فوج مظاہرین پر فائرنگ کرتی ہے جس میں شہری ہلاکتیں ہوتی ہیں۔

کشمیر: ’مظاہرین نے محصور عسکریت پسندوں کو بچا لیا‘

’مطلوب ترین‘ کشمیری کمانڈر کی ہلاکت پر مظاہرے

سبزار بھٹ کی ہلاکت، کشمیر میں حالات پھر کشیدہ

کئی سال قبل برہان کا چھوٹا بھائی خالد بھی فوج کی فائرنگ میں ہی مارا گیا تھا۔ فوج کا کہنا ہے وہ جنگل میں برہان اور اس کے ساتھیوں کے لیے کھانا لے جاتے ہوئے اُس وقت مارا گیا جب عسکریت پسندوں نے فائرنگ کی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں