’بیوی کو تین طلاق دینے پر جیل جانا پڑے گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption یہ قانون عورتوں کے وقار کے لیے ضروری ہے۔ وزیر قانون

انڈیا میں تین طلاق سے متعلق بِل لوک سبھا کے بعد اب راجیہ سبھا میں بھی منظور کر لیا گیا۔اس بل کے حق میں 99 جبکہ مخالفت میں 84 ووٹ پڑے۔

تین طلاق جرم: انڈین کابینہ کی جانب سے منظوری

انڈیا: سپریم کورٹ نے ’تین طلاق‘ کو غیر آئینی قرار دے دیا

’تین بار طلاق کہہ کر طلاق دینے والوں کو سال قید کی سزا‘

لوک سبھا سے منظوری کے بعد مودی حکومت کے لیے اس بل کو ایوانِ بالا یعنی راجیہ سبھا سے منظور کروانا کافی مشکل کام تھا۔لیکن کچھ سیاسی پارٹیوں کے واک آوٹ کے بعد راجیہ سبھا میں اس کی منظوری آسان ہو گئی تھی۔اب اس بل کو منظوری کے لیے صدر جمہوریہ کے پاس بھیجا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption وزیر اعظم نریندر مودی نے اس موقع پر ٹوئٹ کیا

ملک کے وزیراعظم نریندر مودی نے اس موقع پر ٹوئٹ کرتے ہوئے لکھا 'فرسودہ اور دقیانوسی روایت کو آج آخر کار جڑ سے اکھاڑ کر تاریخ کے کوڑے دان میں پھینک دیا گیا۔ انڈین پارلیمان نے تین طلاق کو ختم کر کے مسلم خواتین کے ساتھ ہونے والی تاریخی غلطی کو سدھار دیا ہے'

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 'اس بل کا اصل مقصد مسلم خواتین کو انکے حقوق دلوانہ نہیں بلکہ کچھ اور ہے: غلام نبی آزاد

بل پر بحث کے دوران وزیر قانون روی شنکر پرساد نے اس قانون کو خواتین کے وقار کے لیے اہم قراد دیا۔بل پر بحث کے دوران این سی پی کے رہنما مجید میمن کا کہنا تھا اس بل میں شوہر تو تین سال کی سزا کی دفع ختم کی جائے۔

2017 میں انڈیا کی سپریم کورٹ نے ایک اکثریتی فیصلے میں مسلمانوں میں ایک ساتھ تین طلاق کے عمل کو غیر آئینی قرار دیدیا تھا ۔اور حکومت کو اس سلسلے میں نیا قانون بنانے کا حکم دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption مسلمان مردوں کے خلاف اس قانون کا غلط استعمال ہونے کے بھی اندیشے ظاہر کیے جا رہے ہیں

اس اہم معاملے کی سماعت چیف جسٹس جگدیش سنگھ کھیہر کی سربراہی میں پانچ ججوں پر مشتمل بینچ نے جن میں سے تین ججوں نے تین طلاقوں کو غیر آئینی قرار دیا جبکہ دو ججوں نے اس کے حق میں فیصلہ دیتے ہوئے حکومت سے کہا تھا کہ وہ اس بارے میں قانون بنائے۔

تو جب یہ آرڈیننس پہلے سے موجود تھا تو اب اس بل کی منظوری کے بعد کیا کچھ بدلے گا اس بارے میں ۔۔۔۔۔۔ زینب سکندر کا کہنا ہے کہ اب حکومت نے اسے ایک فوجداری جرم قرار دیدیا ہے کہ اگر کوئی شوہر اپنی بیوی کو ایک ہی نشست میں تین بار طلاق کہہ کر شادی ختم کرنے کی کوشش کرے گا اسےانڈین پینل کوڈ کے تحت گرفتار کر کے تین سال قید تک کی سزا ہو سکتی ہے اور یہی چیز اسے متنازع بناتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ RAJYA SABHA
Image caption ومی قانو نے ایوانِ بالا میں اس بل کا دفاع کیا

زینب سکندر کا یہ بھی کہنا تھا کہ مسلمان مردوں کے خلاف اس قانون کا غلط استعمال ہونے کے بھی اندیشے ظاہر کیے جا رہے ہیں۔

راجیہ سبھا میں اس بل پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے کانگریس کے سینئیر رہنما غلام نبی آزاد نے بھی خدشہ ظاہر کیا تھا کہ 'اس بل کا اصل مقصد مسلم خواتین کو انکے حقوق دلوانہ نہیں بلکہ کچھ اور ہے'۔ انکا کہنا تھا کہ یہ قانون سیاسیمقاصد کا حاصل کرنے کے لیے نافذ کیا جا رہا ہے تاکہ اقلیتی فرقے کے لوگ آپس میں ہی الجھے رہیں ، میاں بیوی ایک دوسرے کے خلاف عدالت میں کھڑے ہوں، وکیلوں کی فیس دینے کے لیے زیم جائیداد فروخت ہو اور پھر جیل سے باہر آکر وہ ذہنی اور مالی مشکلات سے دوچار رہیں'۔

متعلقہ عنوانات