منی لانڈرنگ اور کرپشن کے الزامات: انڈیا کے سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم گرفتار

پی چدمبرم تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption دہلی کی ہائی کورٹ سے درخواست ضمانت مسترد ہونے پر پی چدمبرم نے گرفتاری سے چند گھنٹے قبل ہی سپریم کورٹ سے رجوع بھی کیا تھا

انڈیا کے مرکزی تحقیقاتی ادارے سی بی آئی نے سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم کو منی لانڈرنگ اور کرپشن کے الزامات میں گرفتار کر لیا ہے تاہم چدمبرم کی جانب سے ان الزامات کی تردید کی گئی ہے۔

چدمبرم سے رشوت کے بدلے غیر ملکی سرمایہ کاری کی اجازت دینے کے الزامات کی تحقیقات جاری ہیں۔

سنہ 1984 سے انڈین پارلیمان کے رکن رہنے والے 73 سالہ پی چدمبرم کا تعلق اپوزیشن جماعت کانگریس سے جبکہ ماضی میں وہ بطور وزیر داخلہ بھی فرائض سر انجام دے چکے ہیں۔

سابق وزیر خزانہ کو بدھ کی شام گرفتار کیا گیا اور انھیں جمعرات کو سی بی آئی کی عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

گرفتاری کے وقت چدمبرم کے حمایتیوں اور میڈیا نے انھیں لے جانے والی گاڑی کو گھیر لیا۔ گرفتاری سے ایک روز قبل حکام پوچھ گچھ کے لیے دہلی میں ان کے گھر بھی آئے تھے جنھیں بتایا گیا تھا کہ وہ گھر پر نہیں ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

انڈیا: معروف مبلغ ذاکر نائیک پر منی لانڈرنگ کا الزام

کرپشن پر سابق برازیلی صدر کو ساڑھے نو سال قید

منی لانڈرنگ کا جن بوتل میں کیسے بند کیا جائے؟

دہلی کی ہائی کورٹ سے درخواست ضمانت مسترد ہونے پر انھوں نے اپنی گرفتاری سے چند گھنٹے قبل ہی سپریم کورٹ سے رجوع بھی کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کارتی چدمبرم نے اپنے والد کی گرفتاری کو سیاسی انتقام قرار دیا ہے

ان کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی چدمبرم اور ان کے بیٹے کے خلاف ’سیاسی انتقامی کارروائی‘ کر رہی ہے۔ واضح رہے کہ اس کیس میں چدمبرم کے بیٹے کارتی چدمبرم بھی شامل تفتیش ہیں۔

چدمبرم پر الزام ہے کہ سنہ 2007 میں جب وہ وزیر خزانہ تھے تو انھوں نے آئی این ایکس گروپ کو ملنے والی اربوں ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری کو کلیئر کیا تھا۔

مبینہ طور پر پی چدمبرم کے بیٹے کارتی نے آئی این ایکس سے اس سلسلے میں رقم بھی وصول کی تھی۔ کارتی چدمبرم انڈیا کی جنوبی ریاست تمل ناڈو سے کانگریس پارٹی کے ٹکٹ پر اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے ہیں۔

سی بی آئی اور مالی جرائم کی تحقیقات کرنے والا ادادرہ انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ دونوں باپ بیٹے سے اس معاملے پر تحقیقات کر رہا ہے۔ سی بی آئی نے سنہ 2018 میں کارتی چدمبرم کو بھی گرفتار کیا تھا تاہم بعد میں انھیں ضمانت پر رہا کر دیا گیا تھا۔

کارتی نے اپنے والد کی گرفتاری کو سیاسی انتقام قرار دیا ہے۔ چنئی میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ان کے والد کو چند افراد کو خوش کرنے کے لیے پکڑا گیا ہے۔

انھوں نے کہا ’یہ ایک سیاسی بنیادوں پر بنایا گیا مقدمہ ہے۔ یہ معاملہ 2008 کا ہے جس کی ایف آئی آر 2017 میں درج کی گئی۔ سی بی آئی نے چار مرتبہ میرے گھر پر چھاپے مارے ہیں۔ میں خود 20 مرتبہ تفتیش کا سامنا کر چکا ہوں۔‘

اسی بارے میں