انڈیا میں گاڑیاں بنانے کا شعبہ بحران کا شکار

کار تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کئی کارخانوں نے کچـھ دنوں کے لیے گاڑیاں بنانا بند کر دیا ہے

رام ماردی پریشان ہیں کہ کہیں ان کی نوکری نہ چلی جائے۔ وہ مشرقی ہندوستان کے صنعتی شہر جمشیدپور میں موٹر کاریں اور بڑی گاڑیوں کے پرزے بنانے والی ایک کمپنی میں کام کرتے ہیں۔

انھیں اگست میں صرف 14 دن ہی کام کرنے کا موقع مل سکا۔

رام ماردی کہتے ہیں ’اب تک تو ہماری زندگی پرسکون تھی۔ لیکن اب کھانے کے لیے پیسے اکٹھے کرنے اور بچوں کی سکول فیس ادا کرنا بھی مشکل ہو رہا ہے۔‘

جس فیکٹری میں وہ کام کرتے ہیں اس نے پرزوں کی طلب میں کمی کے سبب نصف ماہ تک عارضی طور پر کام بند کر دیا ہے۔

انڈیا میں گاڑیاں بنانے کی صنعت میں مندی کی وجہ سے کمرشل گاڑیاں بنانے والی انڈیا کی دوسری سب سے بڑی کمپنی اشوک لیلینڈ نے اپنے مختلف کارخانوں میں پانچ سے 18 دنوں تک گاڑیوں کی پیداوار بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔

بی بی سی کے نتن سریواستو نے اس شعبے میں مندی کا جائزہ لیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

انڈیا میں برقی گاڑیوں کے لیے چیلنجز اور امکانات

’انڈیا کی معیشت صفر کی رفتار سے ترقی کر رہی ہے‘

انڈیا کی معیشت کو مودی کس طرح چلائیں گے؟

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption انڈیا کی کار ساز صنعت میں دو دہائيوں میں سب سے بڑی گراوٹ نظر آئی ہے

اس شعبے میں کام کرنے والی ماروتی، ٹاٹا موٹرز اور مہندرا اینڈ مہندرا جیسی کمپنیوں نے گذشتہ چند ماہ کے دوران اپنی پیداوار میں کمی کا اعلان کیا ہے۔

انڈیا کی معیشت کو سست رفتاری کا سامنا ہے۔ اپریل سے جون والی سہ ماہی کے دوران معیشت کی ترقی کی رفتار پانچ فیصد رہی جو کہ گذشتہ پانچ سالوں میں سب سے کم ہے۔ اس کے علاوہ نجی سرمایہ کاری میں کمی اور بینکنگ کے شعبے کے بحران نے قرضوں کے حصول میں مشکلات پیدا کی ہیں اور ان تمام وجوہات کی بنا پر گاڑیوں کی طلب میں کمی ہوئی ہے۔

انڈین حکومت آنے والے برسوں میں روایتی گاڑیوں کے بجائے بجلی سے چلنے والی گاڑیوں کی حمایت کر رہی ہے اور شاید اسی وجہ سے بعض ماہرین کے خیال میں گاڑیوں کی فروخت میں کمی واقع ہوئی ہے۔

گذشتہ دس ماہ سے گاڑیاں بنانے کے شعبے میں مسلسل گراوٹ نظر آئی ہے اور کاروں کی فروخت 41 فیصد تک کم ہو گئی ہے جو کہ دو دہائیوں میں سب سے تیز اور سب سے زیادہ گراوٹ ہے۔

یہ صنعت انڈیا کی سب سے بڑی صنعتوں میں سے ایک ہے جس میں بالواسطہ یا بلاواسطہ ساڑھے تین کروڑ افراد کام کرتے ہیں اور یہ ملک کی مجموعی قومی پیداوار (جی ڈی پی) میں سات فیصد سے زیادہ کا حصہ ڈالتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

بعض اندازوں کے مطابق اب تک ایک لاکھ سے زیادہ افراد، جن میں کنٹریکٹ والے افراد بھی شامل ہیں، اپنی ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔ اب یہ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اگر اسی طرح طلب میں کمی رہی تو پیداوار کو کم کرنے کے لیے مزید ملازمتیں جائيں گی۔

چھوٹے اور درمیانے درجے کے کارخانے جو بڑے کارخانوں کو مختلف قسم کے پرزے اور سامان فراہم کرتے ہیں وہ سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔ ایسے ذیلی کارخانوں کی تعداد ہزاروں میں ہے۔ اس صورت حال میں روزانہ کی اجرت پر کام کرنے والے ماردی جیسے لوگ سب سے زیادہ متاثر ہونے والوں میں شامل ہیں۔

مالکان کو بھی تشویش لاحق ہے۔ جمشیدپور میں گاڑیوں کے پرزے بنانے والی ایک کمپنی کے مالک سمیر سنگھ نے کہا: ’مجھے اپنی فیکٹری کو چلتا رکھنے کے لیے اس سے قبل کبھی اتنی پریشانی نہیں ہوئی تھی۔ میرے ملازم کئی ہفتوں سے بے کار بیٹھے ہیں اور مجھے ان کا دُکھ ہے۔ اگر یہی صورتحال رہی تو انھیں شاید دوسرے کاموں کی تلاش میں نکلنا پڑے گا۔ لیکن ہم تو کسی ملازمت کے لیے بھی نہیں جا سکتے۔ میری زندگی یہیں شروع اور یہیں ختم ہوتی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP/Getty Images
Image caption گاڑیوں کے پرزے بنانے والی چھوٹی اور درمیانے درجے کی کمپنیاں سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہیں

مسٹر سنگھ کہتے ہیں کہ کاروباری شخصیات، کمپنی مالکان اور صارفین کے لیے مزید مشکلات بینکوں سے قرض لینے میں پیدا ہوئی ہے کیونکہ بینکوں نے قرضوں کے عدم وصولی اور اپنی بیلنس شیٹ میں کمی کے سبب قرض دینے کی شرائط سخت کر دی ہیں۔

گاڑیوں کے پرزے بنانے والی صنعت کی ایک تنظیم آٹوموٹیو کمپونینٹ مینوفیکچررز ایسوسی ایشن کے رکن سنجے سبھروال نے کہا کہ پیداوار میں ’گراوٹ اس قدر وسیع اور ڈرامائی ہے کہ اس نے موٹر سائیکل سے لے کر کاروں اور کمرشل گاڑیوں تک ہر ایک پراڈکٹ کو متاثر کیا ہے۔‘

انڈیا کی کار ساز صنعت ایگزیکٹیو ٹیکس میں کمی اور گاڑیاں بنانے، فروخت کرنے اور خریدنے والوں کے لیے آسان قرضوں کی فراہمی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

حکومت نے حال ہی میں اس صنعت کو سہارا دینے کے لیے کئی اقدامات کا اعلان کیا ہے جس میں نئی گاڑیوں کی رجسٹریشن فیس میں اضافے میں تاخیر اور بینکوں سے کار اور موٹر بائیک کے لیے دیے جانے والے قرض میں سود کی شرح کم کرنا شامل ہے۔

لیکن کیا اتنا کافی ہوگا؟ یہ کہنا مشکل ہے کیونکہ ماہرین انڈیا کے آٹوموبائل شعبے میں اس گراوٹ کو تاریخ کی سب سے بڑی گراوٹ کہہ رہے ہیں۔

اسی بارے میں