انڈیا: کیرالہ کی ’مثالی بہو‘ پر خاندان کے چھ افراد کو زہر دینے کا الزام

Jolly Shaju wearing a pink head scarf outside court تصویر کے کاپی رائٹ K Sasi
Image caption پولیس نے جولی شاجو پر الزام عائد کیا ہے کہ انھوں نے سب رقم کے حصول کے لیے کیا

انڈیا کی جنوبی ریاست کیرالہ کی عدالت نے اس ملزمہ کو جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا ہے جسے ’مثالی بہو‘ قرار دیا جاتا تھا اور اس پر اپنے گھر کے چھ افراد کو زہر دے کر ہلاک کرنے کا الزام ہے۔

پولیس نے الزام عائد کیا ہے کہ 47 سالہ جولی شاجو نے سنہ 2002 اور سنہ 2014 کے دوران اپنے پہلے خاوند، ان کے والدین، موجود شوہر کی سابقہ بیوی اور دیگر دو افراد کو زہر دے کر مارنے کا اعتراف کیا ہے۔

جولی شاجو کو دو دیگر مشتبہ افراد کے ساتھ جن پر الزام ہے کہ وہ ان کے ساتھی تھے 16 اکتوبر تک جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیے

انڈیا: ’ڈوسا کنگ‘ کی عمر قید کی سزا برقرار

انڈیا: ہجوم کے ہاتھوں قتل روکنے کی ذمہ داری کس کی؟

’جس نے بھی ننھی پایل کو اس حال میں دیکھا وہ رو پڑا‘

خبر رساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا (پی ٹی آئی) کے مطابق، ان دو افراد میں سے ایک پراجی کمار کا، جو کہ سنار ہیں اور جن پر الزام ہے کہ انھوں نے جولی شاجو کو سائینائڈ فراہم کیا تھا، کہنا ہے کہ وہ بےقصور ہیں۔

انھوں نے مزید کہا کہ انھوں نے سوچا کہ جولی شاجو چوہے مارنے کے لیے سائینائڈ خرید رہی ہیں۔

شکوک و شبہات

یہ معاملہ اس وقت سامنے آیا تھا جب 2011 میں ہلاک ہونے والے جولی کے پہلے شوہر رائے تھامس کے بھائی روزو تھامس نے دو ماہ قبل عہدیداروں سے اس بارے میں خدشات کا اظہار کیا تھا۔

جولی شاجو کا پہلا مبینہ شکار ان کی ساس اننانما تھامس تھیں جن کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ سنہ 2002 میں ان کے ہاتھ کا تیار کردہ کھانا کھانے کے بعد ہلاک ہو گئی تھیں۔

اس واقعے کے چھ سال بعد جولی شاجو کے 66 سالہ سسر ٹام تھامس بھی اس طرح کے حالات میں انتقال کر گئے تھے۔

سنہ 2011 میں رائے تھامس کی موت ہوئی۔ اس موقع پر پوسٹ مارٹم رپورٹ میں سائینائڈ کے آثار ملے تاہم اس معاملے کی پیروی نہیں کئی گئی۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کا کہنا ہے کہ سنہ 2014 میں جولی شاجو کی ساس اننانما تھامس کے بھائی میتھیو نے اپنے بھانجے کا دوسرا پوسٹ مارٹم کروانے پر اصرار کیا تاہم اسی سال ان کا بھی انتقال ہو گیا۔

سنہ 2016 میں اپنے کزن سکاریہ شاجو کی بیوی کی موت کے وقت سے ہی یہ خاندان زیادہ پریشان ہو گیا تھا۔ اس کی نوجوان بیٹی الفائن دو سال قبل فوت ہو گئی تھی۔

اس کے بعد جولی نے سکاریہ شاجو سے شادی کر لی تھی۔

پولیس نے جولی شاجو پر الزام عائد کیا ہے کہ انھوں نے سب رقم کے حصول کے لیے کیا۔

شاجو کی نند رنجی کا کہنا کہ ان کی والدہ کے مرنے کے بعد شاجو نے خاندان کے مالی معاملات کا کنٹرول سنبھال لیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ان کے والد انھیں مثالی بہو سمجھتے تھے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’میں جولی کو اپنی بڑی بہن سمجھتی تھی۔ وہ مجھے پسند تھی اور ہر کسی سے اچھے طریقے سے ملتی تھی۔‘

پولیس کی تحقیقات جاری ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں