#DelhiRiots: مسجد کس نے جلائی، مینار پر کس نے پرچم لگائے؟

مسجد

انڈیا کے دارالحکومت نئی دلی کے شمال مشرقی علاقے میں سفید اور سبز رنگ والی مسجد کے سامنے درجنوں افراد جمع ہیں۔ اس مسجد کا اگلا حصہ جلا دیا گیا ہے۔

بدھ کی صبح جب بی بی سی نے اشوک نگر کی گلی نمبر پانچ کے قریب بڑی مسجد کے باہر نوجوانوں سے بات کرنے کی کوشش کی تو ان کے ردعمل میں غم و غصہ واضح طور پر نظر آیا۔

ہم ان کے پیچھے چلتے ہوئے مسجد میں داخل ہوئے۔ اندر فرش پر نیم جلے ہوئے مصلے اور قالین نظر آئے اور ادھر ادھر ٹوپیاں بکھری ہوئی تھیں۔

یہ بھی پڑھیے

‘دلی میں اب بھی جے شری رام کے نعرے لگ رہے ہیں‘

دلی ہنگامے: ہلاکتوں کی تعداد 20, کم از کم 200 زخمی

مسجد کے منبر والی جگہ جل کر سیاہ ہو چکی ہے۔

یہ وہی مسجد ہے جس کے بارے میں منگل کو اطلاع ملی تھی کہ ہجوم میں شامل کچھ لوگوں نے اس کے مینار پر ترنگا اور بھگوا (زعفرانی) پرچم لہرایا تھا۔

اس کی ویڈیوز سوشل میڈیا پر بھی وائرل ہوئیں جس کے بعد دہلی پولیس کا بیان آیا کہ ’اشوک نگر میں ایسا کوئی واقعہ نہیں آیا ہے۔‘

لیکن جب ہم وہاں پہنچے تو مسجد کے مینار پر ہم نے ترنگا (انڈیا کا پرچم) اور بھگوا پرچم لگا ہوا دیکھا۔

مسجد کے باہر جمع لوگوں نے بتایا کہ منگل کو اس علاقے میں داخل ہونے والے ہجوم نے یہ سب کچھ کیا تھا۔

Image caption بی بی سی کی اس تصویر میں واضح طور پر دو پرچم نظر آ رہے ہیں

'لوگ باہر سے آئے تھے'

مسجد کے اندر عابد نامی شخص نے دعویٰ کیا ہے کہ پولیس رات کے وقت مسجد کے امام کو اٹھا کر لے گئی تھی۔

لیکن اس بارے میں یقین کے ساتھ کچھ نہیں کہا جا سکتا کیونکہ مسجد کے امام سے بات نہیں ہو سکی۔

جب ہم یہاں پہنچے تو قریب ہی ایک پولیس کی گاڑی کھڑی تھی جو کچھ دیر بعد وہاں سے چلی گئی۔

مسجد کو ہونے والے نقصان سے غمگین ریاض صدیقی نے کہا کہ 'آخر ایسا کرنے سے لوگوں کو کیا حاصل ہوتا ہے؟'

ہم نے اس علاقے کی ہندو برادری سے بھی بات کی۔ ان لوگوں نے بتایا کہ یہ مسجد یہاں بہت برسوں سے ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس مسجد کو نقصان پہنچانے والے لوگ باہر سے آئے تھے۔

بعض مقامی ہندو افراد نے کہا کہ اگر وہ ان لوگوں کو روکنے کی کوشش کرتے تو شاید وہ بھی مارے جاتے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں