عمران خان کے دورہ سری لنکا سے سری لنکن مسلمانوں کی امیدیں، انڈیا میں ’خدشات‘

  • رنگا سری لال
  • بی بی سی سنہالا سروس
وزیراعظم عمران خان کا دورہ سری لنکا

،تصویر کا ذریعہPM Office

پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کے سری لنکا کے دورے سے جہاں سری لنکن مسلمانوں کی کچھ امید بندھی ہے وہیں پڑوسی ملک انڈیا میں اس حوالے سے خدشات ہیں کیوں کہ وہاں اس دورے کو سری لنکا میں چینی اثر و رسوخ بڑھانے کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان منگل کو دو روزہ دورے پر سری لنکا پہنچ گئے ہیں۔ ان کے وہاں پہنچنے سے پہلے جس بات پر تبصرے ہو رہے تھے وہ یہ کہ آخر ان کا سری لنکن پارلیمان سے خطاب کیوں منسوخ کیا گیا۔

مسلمانوں کی میتوں کو دفنانے کا معاملہ اور عمران خان کی ٹویٹ

سری لنکا کے وزیر اعظم مہندا راجا پکشے نے گذشتہ ہفتے پارلیمنٹ کو بتایا تھا کہ حکومت کووڈ 19 سے مرنے والے مسلمان شہریوں کو دفنانے کی اجازت دے گی۔ سری لنکا میں کووڈ 19 سے ہلاک ہونے والے ہر شخص کی میت کو لازمی طور پر جلایا جاتا ہے جس سے مسلمان کے مذہبی جذبات مجروح ہوئے ہیں۔

سری لنکا کے وزیر اعظم کے اس بیان کو پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے ٹوئٹر پر سراہا تھا۔

یہ سب ایک ایسے موقع پر ہوا جب سری لنکا اقوام متحدہ کے ہیومن رائٹس کونسل کے چھالیسویں اجلاس میں پاکستان کے ذریعے او آئی سی کے ممبران کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کر رہا ہے جہاں سری لنکا کو مبینہ طور پر مسلمانوں کے مذہبی حقوق کی خلاف ورزی کے الزام کا سامنا ہے۔

وزیر اعظم راجا پکشے کی جانب سے پارلیمنٹ میں کووڈ 19 سے مرنے والے مسلمانوں کو دفنانے سے متعلق بیان کے چند گھنٹوں بعد ہی سری لنکا کی حکومت نے کہا کہ کووڈ 19 سے مرنے والے افراد کی میت کو جلانے کی پالیسی جاری رہے گی اور اس پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں ہوگی۔

یہ بھی پڑھیے

حکومت کے اس بیان نے سری لنکا کے مسلمانوں کو مجبور کیا کہ وہ پاکستان کے وزیر اعظم سے مداخلت کی اپیل کریں۔

،تصویر کا ذریعہGetty Images

،تصویر کا کیپشن

پاکستانی وزیر اعظم کا سری لنکا کا دورہ ایسے وقت ہو رہا ہے جب انڈیا اور سری لنکا کے تعلقات میں تلخیاں پیدا ہو چکی ہیں

وزیراعظم عمران خان کا سری لنکن پارلیمان سے خطاب کیوں منسوخ ہوا

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کے سری لنکا کے دورے سے قبل سری لنکا کے مقامی میڈیا پر ایسی خبریں سامنے آئی ہیں کہ پاکستان کے وزیراعظم کا سری لنکا کی پارلیمان سے خطاب کا منصوبہ منسوخ کر دیا گیا ہے۔

نہ تو سری لنکا اور نہ ہی پاکستان کی حکومت نے وزیر اعظم عمران خان کے پارلیمنٹ سے خطاب کے پروگرام میں تبدیلی کی کوئی وجہ بیان کی ہے۔

ادھر پاکستان کی وزارت خارجہ نے وزیر اعظم کے دورے سے متعلق جو پلان جاری کیا اس میں ایسے کسی خطاب کا کوئی ذکر نہیں ہے اور نہ ہی پاکستان نے اب تک سری لنکا میں اس حوالے سے چلنے والی خبروں پر کسی قسم کا کوئی تبصرہ کیا ہے۔

بی بی سی کو بھی اس حوالے سے رابطہ کرنے پر وزارت خارجہ سے فی الحال کوئی جواب موصول نہیں ہوا ہے۔

سری لنکن مسلمانوں کی امیدیں

،تصویر کا ذریعہAFP

،تصویر کا کیپشن

وزیر اعظم راجا پکشے نے پارلیمنٹ میں دیے گئے ایک بیان میں کہا ہے کہ کووڈ سے مرنے والے مسلمان شہریوں کو دفنانے کی اجازت دی جائے گی

کولمبو میں ایک سفارت کار نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بی بی سی کو بتایا کہ پاکستانی وزیر اعظم کے سری لنکا کی پارلیمنٹ سے خطاب کے پروگرام کو منسوخ کرنے کی وجہ شاید مسلمانوں کو دفنانے کے حوالے سے پیدا ہونے والی غلط فہمیوں کو دور کرنا تھا، جن کا پاکستان کے وزیراعظم نے خیر مقدم کیا تھا۔

سری لنکا کے مسلمان شہریوں کے لیے مسلمان ملک کے سربراہ کا دورہ ہمیشہ خوشی کا باعث ہوتا ہے کیونکہ وہ خود کو مسلم امہ کا حصہ تصور کرتے ہیں۔

آسٹریلیا کی مرڈوک یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر امیر علی نے سری لنکا کے فنانشل ٹائمز اخبار میں چھپنے والے اپنے ایک مضمون میں لکھا ہے کہ ’مسلمانوں کا خود کو مسلم امہ کا حصہ تصور کرنے کا خیال اتنا منفرد ہے جو بہت سے لوگوں کے لیے سمجھنا مشکل ہے۔‘

ڈاکٹر امیر علی نے سری لنکا کے مسلمان شہریوں کو مشورہ دیا کہ وہ ’پاکستانی رہنما یا دوسرے مسلمان سربراہوں سے زیادہ امیدیں وابستہ نہ کریں‘ کیونکہ وہ ’اپنے ملکی مفاد کو سامنے رکھتے ہیں۔‘

ڈاکٹر امیر علی نے کہا کہ ’مسلم امُہ کے تصور میں کوئی گہرائی نہیں ہے اور یہ ایک کھوکھلا سا تصور ہے اور اگر سری لنکا کے مسلمان بھی مسلمان ممالک کے سربراہوں سے زیادہ امیدیں وابستہ کریں گے تو ان کا حال بھی فلسطینوں، اویغور اور روہنگیا مسلمانوں جیسا ہوگا جنھیں مسلمان ممالک نے اپنے مفادات کی خاطر چھوڑ دیا ہے۔‘

انڈیا اور سری لنکا کے تعلقات میں تلخی

پاکستان کے وزیر اعظم عمران کا سری لنکا کا دورہ ایسے وقت ہو رہا ہے جب سری لنکا اور انڈیا کے تعلقات میں تلخیاں پیدا ہو چکی ہے۔ اس تلخی کی وجہ سری لنکا کے صدر گوتابایا راجا پکشے کی طرف سے انڈیا کے ایڈہانی گروپ کے سری لنکا کی بندرگاہ میں ٹرمینل تعمیر کرنے کا منصوبہ منسوخ کرنا ہے۔

اس ٹرمینل کی تعمیر کے لیے انڈیا کے وزیراعظم نریندرا مودی نے خاص طور پر ایڈہانی گروپ کو چُنا تھا۔ سری لنکا کی پورٹ پر ایسٹ کنٹینر ٹرمینل اس ٹرمینل کے بلکل ساتھ تعمیر کیا جانا تھا جو چین نے تعمیر کیا ہے۔

،تصویر کا ذریعہBJP

،تصویر کا کیپشن

نریندر مودی نے اپنے دورے کے دوران سری لنکا کی پارلیمنٹ سے خطاب کیا تھا

سری لنکا اور انڈیا کے تعلقات میں اس وقت مزید تلخیاں پیدا ہو گئیں جب سری لنکا نے انڈیا کی سرحد کے قریب اپنے شمالی جزیروں میں چین کو توانائی کو دوبارہ قابل استعمال بنانے کا منصوبہ شروع کرنے کی اجازت دی جو انڈیا کے لیے ایک بڑا سکیورٹی خطرہ بن چکا ہے۔

ابتدا میں سری لنکا کے حکام نے کہا تھا کہ انڈین وزیر اعظم نریندر مودی کی طرح پاکستانی وزیر اعظم عمران خان بھی اپنے دورے کے دوران سری لنکا کی پارلیمنٹ سے خطاب کریں گے لیکن بعد میں حکام نے کہا کہ وزیراعظم کے دورے کے پروگرام میں تبدیلی کر دی گئی ہے اور اب وہ پارلیمنٹ سے خطاب نہیں کریں گے۔

نہ تو سری لنکا اور نہ ہی پاکستان کی حکومت نے وزیر اعظم عمران خان کے پارلیمنٹ سے خطاب کے پروگرام میں تبدیلی کی کوئی وجہ بیان کی ہے۔

لیکن سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس کی وجہ انڈیا ہے جو پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کے دورہ سری لنکا پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

،تصویر کا ذریعہTWITTER@/cartoonlka

،تصویر کا کیپشن

سری لنکا کے میڈیا میں اس صورتحال کے حوالے سے کارٹون بھی چھپے ہیں

سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اگر پاکستان کے وزیر اعظم نے سری لنکن پارلیمنٹ سے خطاب کے دوران کشمیر کے مسئلے پر بات کی تو اس سے سری لنکا اور انڈیا کے تعلقات مزید خراب ہونے کا اندیشہ تھا۔

سیاسی تجزیہ کار کسال پریرا نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کو خطے میں ’چین کے ایجنٹ‘ کے طور پر دیکھا جاتا ہے جہاں چین بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کر رہا ہے اور پاکستان کے وزیر اعظم کے سری لنکا کے دورے کو چین کے اثر و رسوخ کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔

کسال پریرا کے مطابق سری لنکا پاکستان کے ذریعے چین کو سری لنکا میں مزید سرمایہ کاری کرنے پر رضامند کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

سری لنکا کی وزرت خارجہ کے ایک بیان کے مطابق وزیر اعظم عمران خان اپنے دورے کے دوران اعلیٰ سطح کی ملاقاتوں کے علاوہ ’بزنس اینڈ انویسٹمنٹ فورم‘ سے بھی ملاقات کریں گے۔

پاکستان اور سری لنکا کے وزرائے اعظم کی موجودگی میں دو طرفہ تعاون کی کئی یاداشتوں پر بھی دستخط کیے جائیں گے۔

وزیر اعظم عمران خان کے 2021 کے پہلے بیرون ملک دورے میں تجارتی وفد بھی شامل ہو گا جس میں ٹیکسٹائل، گارمنٹس، فارماسیوٹیکل، ایگرو فوڈ، کھیلوں کی اشیا، جیولری اور آٹو پارٹس کی صنعت کے نمائندے شامل ہوں گے۔