بھارت: ٹیٹو کی بدولت 24 سال بعد خاندان سے ملاپ

Image caption گانیش کے پاس اپنے خاندان کی بڑی نشانی ان کے دائیں ہاتھ پر ان کی ماں کا ٹیٹو کیا ہوا نام تھا

بھارت کے شہر ممبئی میں بچپن میں ایک ریلوے سٹیشن پرگم ہونے والا شخص جسم پر منفرد ٹیٹو ہونے کی وجہ سے چوبیس سال بعد اپنے خاندان سے دوبارہ ملا ہے۔

پولیس اہلکار گانیش راگوناتھ دہنگادی کی عمر چھ سال تھی جب وہ ٹرین پر اپنے والدین سے بچھڑ گئے۔

یتیم خانے میں پرورش پانے کے بعد گانیش نے پولیس میں نوکری اختیار کی اور اپنے خاندان کی تلاش شروع کی۔

ان کے پاس اپنے خاندان کی بڑی نشانی ان کے دائیں ہاتھ پر ان کی ماں کا ٹیٹو کیا ہوا نام تھا۔

تلاش کے دوران آخرکار گانیش ایک ادھیڑ عمر خاتون کے گھر پر پہنچا جس نے اس ٹیٹو کا ذکر کیا اور جب انھوں نے خاتون کو ٹیٹو دکھایا تو وہ رو پڑی۔

گانیش نے خاتون کی طرف اشارہ کرتے ہوئے ممبئی میں بی بی سی کے نامہ نگار کینجال پانڈے کو بتایا کہ ’انھوں نے جب اپنے بیٹے کے ہاتھ پر بنے ٹیٹو کے بارے میں وضاحت کی تو میں نے انھیں اپنا ہاتھ دکھایا۔‘

’وہ حیران رہ گئیں اور انھیں یقین نہیں آ رہا تھا۔ وہ خوشی سے چلانے لگیں، تمام گاؤں والے اور پڑوسی بھی چلانے لگے۔‘

گانیش کے دو چھوٹے بھائی اور دو چھوٹی بہنیں ہیں۔ ان کے والد وفات پا چکے ہیں جبکہ ان کی والدہ گھریلو ملازمہ ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’اب جبکہ میں کما رہا ہوں تو میری ماں کام کرنا چھوڑ سکتی ہیں اور میں پورے خاندان کی دیکھ بال کر سکتا ہوں۔‘

ان کی والدہ نے کہا ’میں بہت خوش ہوں۔ میرا بیٹا بچھڑ گیا تھا اور وہ پولیس سپاہی بن کر میرے پاس لوٹا ہے۔‘

اسی بارے میں