’حکومت سازی کے لیے 18 مطالبات‘

Image caption کیجری وال نے حکومت سازی کے فیصلے کے لیے نائب گورنر سے 10 دنوں کی مہلت چاہی ہے

دہلی میں تاریخ بنانے والی عام آدمی پارٹی کے کنوینر اروند کیجریوال نے حکومت سازی کے سلسلے میں سنیچر کو دہلی کے نائب گورنر نجیب جنگ سے ملاقات کی۔

اروند کیجریوال نے ملاقات کے بعد پریس کانفرنس میں کہا کہ اگر کانگریس اور بی جے پی اپنی حکومت کے دوران ہونے والے گھپلوں کی تفتیش کروانے کے لیے تیار ہیں تو وہ صلاح مشورہ کرنے کے بعد حکومت سازی کے لیے تیار ہیں۔

اس سلسلے میں انھوں نے برسر اقتدار حکمراں اتحاد یو پی اے کی صدر سونیا گاندھی اور بی جے پی کے صدر راج ناتھ سنگھ کو خط بھی لکھا ہے۔ اس خط میں کیجریوال نے کئی مسائل کا ذکر کیا ہے اور دونوں جماعتوں کے رہنماؤں سے جواب طلب کیا ہے۔

انھوں نے کہا ’میں نے 17،18 مسائل پر بات کی ہے جن میں ممبران اسمبلی اور کونسلروں کے فنڈ منسوخ کرنے کی بات بھی شامل ہے۔‘

کیجریوال نے کہا ’کانگریس نے غیر مشروط اور بی جے پی نے اصولی بنیاد پر حمایت دینے کی بات کہی ہے لیکن کوئی بھی حمایت غیر مشروط نہیں ہوتی۔ ہم یہ جاننا چاہتے ہیں کہ ان دونوں جماعتوں کی منشا کیا ہے۔ اس لیے ہم نے انھیں خط لکھ کر 18، 17 مسائل پر ان سے اپنی رائے واضح کرنے کے لیے کہا ہے۔‘

انھوں نے کہا ’ہم سیاست میں اقتدار حاصل کرنے یا وزیر اعلی بننے کے لیے نہیں آئے۔ ہم عام آدمی ہیں۔ مہنگائی اور بدعنوانی سے پریشان ہیں۔ ہم ان مسائل کو ختم کرنے کے لیے آئے ہیں۔‘

کیجریوال نے نائب گورنر سے حکومت بنانے کے لیے دس دن کا وقت مانگا ہے۔ انھوں نے کہا ہے کہ وہ عوام سے رائے لے کر حکومت بنائیں گے۔

اس سے پہلے جمعہ کی شام کانگریس نے عام آدمی پارٹی کی غیر مشروط حمایت کا ایک خط نائب گورنر کو روانہ کیا تھا۔

کانگریس نے اپنے خط میں کہا ہے کہ عام آدمی پارٹی حکومت بنائے اور عوام سے کیے گئے اپنے وعدے پورے کرے۔ کانگریس نے حمایت کے لیے کوئی شرط نہیں رکھی ہے۔

واضح رہے کہ دہلی کے حالیہ اسمبلی انتخابات میں کسی بھی جماعت کو واضح اکثریت حاصل نہ ہو سکی اور اسی وجہ سے نائب گورنر نے پہلے سب سے زیادہ نشست حاصل کرنے والی جماعت بی جے پی کو حکومت بنانے کی پیشکش کی تھی تاہم بی جے پی نے حکومت سازی سے انکار کر دیا تھا۔

دہلی اسمبلی میں بی جے پی کے پاس 32 ( بشمول اکالی دل کی ایک نشت)، عام آدمی پارٹی کے پاس 28 اور کانگریس کے پاس 8 نشتیں ہیں جبکہ جنتا دل یونائیٹڈ کو ایک نشت ملی ہے اور ایک رکن اسمبلی آزاد امیدوار کے طور پر کامیاب ہوا ہے۔

اس سے قبل جمعہ کو جاری ایک بیان میں عام آدمی پارٹی نے بار بار تھا کہ وہ نہ کسی پارٹی سے حمایت لیں گے اور نہ ہی کسی پارٹی کو حمایت دیں گے۔

اسی بارے میں