بھارت:ٹیسکو کے توسیعی منصوبے کی منظوری

Image caption ٹیسكو نے اس سرمایہ کاری کے لیے بھارتی ٹاٹا گروپ کے ساتھ شراکت کی ہے

برطانوی ریٹیل کمپنی ٹیسكو کی جانب سے بھارت میں توسیع کے منصوبے کی بھارتی حکومت نے منظوری دے دی ہے۔

ٹیسکو کی برطانیہ میں بڑی تعداد میں سپر سٹور ہیں۔ اب اس نے بھارت کے خوردہ بازار میں 11 کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری کا ارادہ ظاہر کیا ہےے۔

ٹیسكو بھارتی ٹاٹا گروپ کے ساتھ مل کر بھارت میں سپر سٹور کھولے گی۔

بھارتی حکومت کی جانب سے اس شعبے میں غیر ملکی سرمایہ کاری کی منظوری دینے کے بعد ٹیسكو بھارت میں سرمایہ کاری کرنے کی اجازت مانگنے والی پہلی عالمی خوراک کی فراہمی والی کمپنی ہوگی۔

ٹیسكو کی سرمایہ کاری کو سرکاری منظوری ملنے کو بھارت کی سست روی کا شکار معیشت میں اعتماد کی واپسی کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

اس سے پہلے بھارت میں پیچیدہ سرکاری افسر شاہی اور سیاسی مخالفت کی وجہ سے غیر ملکی سرمایہ کاروں کو متوجہ کرنے میں مشکل پیش آتی تھی۔

ٹیسكو کے ترجمان نے کہا ہے کہ اب کمپنی ٹاٹا کے ساتھ اپنے مشترکہ منصوبے کو شروع کرنے کے لیے کام شروع کرے گی۔

Image caption ٹیسكو پہلے ہی ٹاٹا کے سٹار بازار شاپ کے لیے مصنوعات فراہم کرتی رہی ہے

اس معاہدے کے مطابق ٹیسكو ٹاٹا گروپ کے سپر مارکیٹ ’ٹرینٹ ہاپرماركیٹ‘ میں 50 فیصد حصہ حاصل کرے گی۔

ٹیسكو پہلے ہی ٹاٹا کے سٹار بازار شاپ کے لیے مصنوعات فراہم کرتی رہی ہے اور 2008 سے ٹاٹا کی حصہ دار ہے۔

اس منظوری کو بھارت کے خوردہ بازار کے قوانین کی اصلاحات کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

اسی سال اکتوبر میں دنیا کی سب سے بڑی ریٹیل کمپنی وال مارٹ نے ایک بھارتی کمپنی کے ساتھ اشتراک ختم کر دیا تھا۔

دوسری جانب سويڈش کمپنی ایچ اینڈ ایم کو بھی بھارت میں دکانیں کھولنے کی اجازت دی جا رہی ہے۔

’ایچ اینڈ ایم‘ نے دسمبر میں بھارت میں سات ارب 20 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کرنے کی بات کی تھی اور یہ بھارت بھر میں 50 سٹور کھولنا چاہتی ہے۔

Image caption برطانوی کمپنی مارکس اینڈ سپینسر بھی بھارت میں سرمایہ کاری میں اضافہ کرنا چاہتی ہے

اسی طرح برطانوی کمپنی مارکس اینڈ سپینسر بھی بھارت کے خوردہ بازار میں سرمایہ کاری کرنے میں دلچسپی رکھتی ہے۔

یہ کمپنی پہلے ہی بھارت میں موجود ہے اور اس کا اب بھارت میں دکانوں کی تعداد دگنا کر کے 80 تک لے جانے کا منصوبہ ہے۔

ہندوستان کی حکومت نے براہِ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کو کنٹرول کرنے والی پالیسیوں میں اگست 2013 میں چھوٹ دی تھی۔ اس حوالے سے پہلے غیر ملکی کمپنیوں کے لیے یہ ضروری تھا کہ وہ 30 فیصد مصنوعات ہندوستانی اداروں سے خريدیں گي۔

اب بھارتی حکومت نے اس حد کو پانچ سال میں مکمل کرنے کی چھوٹ دے دی ہے۔

نئے قوانین کے تحت غیر ملکی ریٹیل کمپنیاں ان شہروں میں بھی اپنے سٹور کھول سکیں گی جن کی آبادی دس لاکھ سے کم ہو۔ پہلے اس بات کی اجازت نہیں تھی۔