دہلی ریپ کے دو مجرموں کی سزائے موت ’معطل‘

تصویر کے کاپی رائٹ Other
Image caption اس اجتماعی جنسی زیادتی کے مقدمے کے کل چھ ملزمان تھے

بھارت کی عدالتِ عظمیٰ نے دارالحکومت نئی دہلی میں ایک طالبہ سے اجتماعی جنسی زیادتی کے چار مجرموں میں سے دو کی سزائے موت کو معطل کر دیا ہے۔

طالبہ سے جنسی زیادتی کا واقعہ دو برس قبل پیش آیا تھا اور اس کے بعد بھارت بھر میں احتجاجی مظاہرے ہوئے تھے جن کے نتیجے میں ریپ کے خلاف ایک نیا قانون بھی منظور کیا گیا تھا۔

اس اجتماعی جنسی زیادتی کے مقدمے کے کل چھ ملزمان تھے جن میں سے مکیش سنگھ، ونے شرما، اکشے ٹھاکر اور پون گپتا کو گزشتہ سال ستمبر میں جرم ثابت ہونے پر سزائے موت سنائی گئی تھی۔

تاہم سنیچر کو بھارتی سپریم کورٹ نے مکیش سنگھ اور پون گپتا کی سزا کو اس وقت تک معطل کر دیا جب تک عدالتِ عظمیٰ ان کی اپیل پر فیصلہ نہیں کر لیتی۔

اس جنسی زیادتی کا پانچواں مجرم مقدمے کی سماعت سے قبل ہی اپنی جیل کی کوٹھری میں مردہ پایا گیا تھا اور چھٹے مجرم کو جرم کے ارتکاب کے وقت کم عمر ہونے کی وجہ سے تین سال قید کی سزا دی گئی تھی۔

سزائے موت کے خلاف چاروں مجرموں نے پہلے دہلی کی ہائی کورٹ میں اپیل کی تھی تاہم گذشتہ ہفتے ججوں ریوا کھیترپال اور پراتیبھا رانی نے اس واقعے کو ’شاذ ونادر ہی رونما ہونے والے واقعات‘ کہہ کر سزائے موت کو برقرار رکھا تھا۔

23 سالہ میڈیکل کی طالبہ کے ساتھ دسمبر 2012 میں دہلی میں ایک چلتی بس میں اس وقت اجتماعی جنسی زیادتی کی گئی تھی جب وہ اپنے ایک مرد دوست کے ساتھ فلم دیکھنے کے بعد گھر واپس جارہی تھیں۔

طالبہ کو علاج کے لیے بیرونِ ملک منتقل کیا گیا تھا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسی تھیں۔ اس واقعے میں ان کے مرد دوست کو بھی مار پیٹ کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

اسی بارے میں